Categories
حرکات کے بارے میں

Learning Fruitful Practices through Experimentation

Learning Fruitful Practices through Experimentation

By Trevor Larsen –

One important way we have learned our ministry principles is through field experimentation, observing what God is doing through our interventions, while reflecting on Scripture. When we found a little bit of fruit (individuals who came to Christ, groups of believers, or other indicators of spiritual growth), we tried to examine: Why was that? What helped us progress? How can we increase those practices that were more fruitful? How can we decrease those practices that were not proving fruitful?

The earliest churches learned what God wanted them to do, by observing what he was doing, reflecting on how he had used humans to bear fruit, then reflecting on Scripture to obtain insight on God’s intent. We can see in Acts two examples of first observing what God was doing through people, then reflecting on Scripture to confirm new insight. Peter was surprised but compelled to follow, when God used supernatural means to lead him to the home of Cornelius a centurion of the Italian cohort. He was surprised because this advance of the gospel among Gentiles did not fit with Jewish traditions. “You yourselves know how unlawful it is for a Jew to associate with or to visit anyone of another nation, but God has shown me that I should not call any person common or unclean. So when I was sent for, I came without objection. I ask then why you sent for me” (Acts 10:28-29). Clearly sensing God’s leading, both through God’s direct intervention and through the response of unbelievers to God, Peter shared the gospel. Acts records the Jews’ amazement that God was working among. While Peter was still saying these things, the Holy Spirit fell on all who heard the word. And the believers from among the circumcised who had come with Peter were amazed, because the gift of the Holy Spirit was poured out even on the Gentiles (Acts 10:44-45)

They became convinced of God’s unexpected leading, by observing what God was doing. What they saw God doing in unbelievers, helped them understand what they should do: preach the gospel to Gentiles, baptize them, and accept them into their community of believers. When called by the leaders in Jerusalem to give account for this surprising development, Peter added that what he observed gave him new insight on John the Baptist’s words about Jesus’ baptism: “As I began to speak, the Holy Spirit fell on them just as on us at the beginning. And I remembered the word of the Lord, how he said, ‘John baptized with water, but you will be baptized with the Holy Spirit.’ If then God gave the same gift to them as he gave to us when we believed in the Lord Jesus Christ, who was I that I could stand in God’s way?” When they heard these things they fell silent. And they glorified God, saying, “Then to the Gentiles also God has granted repentance that leads to life(Acts 11:15-18). For Peter, and for the Jerusalem leaders, the combination of observing God’s work in unbelievers plus reflecting on Scripture to gain new insight, convinced them of what they should do. 

Acts 15 reflects this same pattern of first observing (or hearing what had been observed by others) what God was doing among believers, followed by reflection on Scripture confirming God’s direction. This convinced all the early church leaders who had gathered, of what they should do. 

In short, we create experimental conditions, and do quarterly assessment, to rigorously promote fruitful practices and extinguish practices that were not fruitful. Of course, we don’t extinguish biblical practices, whether or not they contribute directly to fruitfulness, like helping the poor. We do that too, even though that may or may not create more believer groups, because of God’s commands to help the poor. That’s a different discussion; I’m just talking about those practices that we can modify without violating or ignoring biblical principles. 

Our DNA of experimentation has been fascinating to people who want to learn from us. When they come, they can hardly believe it, because local movement catalysts are telling us, each quarter: a) new experiments they are doing, b) how far they progressed in the three months they were doing an experiment, and c) what they will modify as they go forward in the next three months of the experiment. Our innovation goes forward in small increments each quarter. You can imagine the creative people we’ve attracted, and how their creativity has developed. It’s something I’ve really enjoyed: innovating and finding innovative local workers. 

It’s not that all the fruitful people I oversee are innovative. But I especially work with the 40% to 50% of them who are innovative, because they’re the ones discovering new pathways. The nature of UPG ministry is that there have been no gains for decades. If we keep doing the things other Christians were doing, we can be pretty sure we will still get no gains in the next decades. That’s why innovation is important in reaching UPGs, in areas where there have been no significant fruit gains in the past.

Here’s one example of experimental learning through a comparative case study. I would recruit good local evangelists, then watch them work and compare their stories. Comparing different practices of different people and comparing their fruit, is part of my learning and theirs. 

Our first team leader started three groups. He seemed to provide the model for the rest of the evangelists to follow. But he never got past three groups. Meanwhile the other guys were like a turtle in a race against a rabbit. They were far behind but kept working and eventually started one group. The leader already had three groups, then those who had started more slowly developed two groups each, then three groups each. Suddenly the planters who had started more slowly reported four and five groups, because some of their groups had started others. But the leader was still leading three groups personally, then it reduced to two groups. What was happening?

This comparison of different planters’ fruit created a question. “They’re all graduates of the same Bible College and had the same coaching, and all were working in the same area where 99.6% of the people are from the majority religion. What is happening differently?” Those who were getting to more groups were not forthcoming to share things in meetings for fear of embarrassing the leader who was getting more frustrated. They were not voicing a straightforward analysis. When I investigated it further, I found out that the leader was afraid that if he talked to groups rather than individuals, he would increase the risk for himself and his family. So he was only talking to individuals. That approach was getting a certain measure of fruitfulness, but it was not being reproduced by local people. Meanwhile the other planters who had started more slowly, were all talking with natural groupings of people and seldom with individuals. 

In our country, you almost never find someone alone. It’s so crowded, everybody’s always together. Even if you go to the store, or you go running, no matter where you go, you see people in groupings. They’re with their brother and their uncle and their friend: maybe four or five or six people. I don’t mean formal groups, but groupings. So those evangelists who started more slowly began to talk to groupings of local people. They adjusted their dialog style to fit into groupings. Initially, the sharing of the gospel in groupings came along more slowly than sharing with individuals. But when the people in the groups began to talk about the gospel with each other, and began to come to faith while supporting one another, those first local groupings of believers were not sterile. They reproduced by imitating the pattern. Individuals who were won to the Lord alone were sterile. They couldn’t have babies; they couldn’t copy the same process, because in our country, no one talks to an individual alone. If someone did talk to another person one on one, it seemed to signal that something was illegitimate about the topic being discussed. If something had to be hidden, it was probably shameful. “Why do you need to talk to an individual alone?” You’ve got to hide something. But when you talk in groupings of people who already know each other, it’s a signal that this is something that’s good to talk about with others. 

The people who came to the Lord in natural groupings, have an experience like the people in an Alcoholics Anonymous group: they give and receive support while they share what they are learning. These are people in Unreached People Groups who are doing something different than all the other people. They need each other for support to seek the Lord together through the Bible. They legitimize each other: “It’s okay to open the Bible and discuss it.” They provide protection for each other from being attacked by neighbors and friends. They can come to the Lord together and this is something they can replicate, because the social organization and dynamic supports ongoing interaction. It’s like a ping-pong game enjoyed by a group of friends: the ball is being hit back and forth while they laugh with each other. They dialogue back and forth about the Scripture and how to apply it, and the interaction is part of the fun. They’re fun-loving people; they like to do it together. So now they’re harnessing the social dynamics already present in the culture, and the groups start to multiply.

I shared the previous story as an example of how we learned one of our main principles. We have 15 or 20 fruitful practices. The fruitful practice we learned from this case was “Groups, not Individuals.” They made slogans out of each of the fruitful practices, and this is one of them: “Groups, not Individuals.” This fruitful practice is one of our guiding principles. We discovered it through experimentation, by comparing what was working to what was not working as well. 

When we had been going for 10 years and had 110 groups, I participated in a conference where I was asked to share our case study. I was on the plane thinking “They’re not going to believe it when I tell them there are 110 groups of people from the majority religion, who have come to Christ and are discussing the Bible and applying it. They’re going to think I’m lying!” But all the other case studies presented were from Africa and India, and they all had far more fruit than that!

It was such a good jolt for me, to realize that what had been developing in our country was only a little drop in the bucket, compared to what others had. It was a great encouragement to my faith to reflect: “There aren’t limits on an expandable system. This can keep going.” And during that conference, I received CPM training for the first time, done by David Watson: the DMM model.

Many conference participants didn’t like the CPM training because it jolted the way they’d been doing things in many years of ministry. They raised objections that didn’t need to be raised. I kept thinking: “I should stand up and tell them: ‘Why don’t you leave the room and let me to listen to this speaker?’ This is what we’ve been learning in our country. These principles are the same things God has been teaching us. How did he figure this out, in a different country?” That was my experience in that conference. What we had learned through experimentation in the field for many years, others had also discovered, in other contexts among other kinds of unreached peoples. But most of us don’t want to stop doing what we have been doing and try a new model.

Categories
حرکات کے بارے میں

چرچز کی تخم کاری کی تحریک قیادت اور راہنمائی کی تحریک ہوتی ہے ۔ حصہ دوم

چرچز کی تخم کاری کی تحریک قیادت اور راہنمائی کی تحریک ہوتی ہے ۔ حصہ دوم

سٹین پارکس  –

اِس مضموُن کےپہلےحصے میں   ہم منسٹری کے اُن نمونوں پر نظر ڈالی تھی جو تحریکوں میں  قیادت کی افزائش   کا  ماحول تخلیق کرتے ہیں۔

ذیل میں  سات مزید نمونے پیش کئے جاتے ہیں۔ 

 

فرمانبرداری : اطاعت پر مبنی، نہ کہ علم پر مبنی ( یوحنا 15     : 14)

CPM) ) میں بائبل کی تربیت اس لئے زیادہ مؤثر ہوتی ہے کہ وہ صرف علم کے حصول پر مرکوز نہیں ہوتی ۔ہر شخص سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ سیکھے ہوئے علم کی تعمیل  کرے ۔ بہت سے چرچز صرف علم کے حصول پر توجہ دیتے ہیں   اور ایسے راہنما تیار کرتے ہیں جن کے پاس کثیر تعداد میں علم ہو۔ اُن کی کامیابی کا معیار زیادہ سے زیادہ ممبر اکٹھے کرنا اور انہیں زیادہ سے زیادہ معلومات دینا ہے ۔ CPM) ) میں توجہ کا مرکز یہ نہیں ہوتا کہ آپ کتنا جانتے ہیں، بلکہ یہ ہوتا ہے کہ آپ کتنی تعمیل کرتے ہیں ۔بائبل سٹڈی کے دوران گروپ کے لوگ خود سے پوچھتے ہیں ،” میں / ہم کس طرح اس کی فرمانبرداری کریں گے ؟” اگلی دفعہ جب وہ ملتے ہیں تو وہ جواب دیتے ہیں ۔” میں نے کس طرح اس کی فرمانبرداری کی؟” ہر کسی سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ  فرمانبرداری کرے اور راہنمااُنہیں تصور کیا جاتا ہے جو فرمانبرداری میں  دوسروں کو مدد دیں۔ بائبل میں خُدا کے احکامات کی تعمیل شاگردوں  اور راہنماؤں کےروحانی طور پر  بالغ ہونے کا تیز ترین راستہ ہے ۔

حکمت عملی: حکمت عملی اور نمونے کے لئے انجیل اور اعمال  سر چشمہ ہیں ۔

بائبل میں نہ صرف احکامات درج ہیں بلکہ اُس میں احکامت کی تعمیل کے لئے نمونے بھی دیئے گئے ہیں۔  1990 کی دہائی میں خُدا نے نارسا لوگوں میں کام کرنے والے بہت سے خادموں کی راہنمائی کی کہ وہ نئے علاقوں میں مشن شروع کرنے کے لئے لوقاکے  10   ویں باب سے نمونہ حاصل کریں 1 ۔ ہر CPM) ) جسے ہم جانتے ہیں، وہ اسی نمونے کی کوئی صورت استعمال کرتے ہوئے دو دو کر کے خادموں کو میدان میں  بھیجتے ہیں۔ وہ جا کر سلامتی کا فرزند تلاش کرتے ہیں جو اُن کے لئے اپنے گھر کے دروازے کھولتا ہے اور اپنے خاندان یا جماعت میں انہیں خوش آمدید کہتا ہے۔ وہ سچائی اور خُدا کی قوت سے خاندان کو آگاہ کرتے ہوئے اُن کے ساتھ ٹھہرتے ہیں اور اُنکی کوشش ہوتی ہے کہ پوری جماعت کو یسوع کے ساتھ عہد میں باندھ لیں ۔ چونکہ یہ ایک فطری طور پر قائم گروپ ہوتا ہے ( ادھر اُدھر سے اکٹھے کئے ہوئے اجنبیوں کا گروپ نہیں ہوتا  )، اس لئے اس میں راہنما پہلے سے ہی موجود ہوتا ہے اور اُسے متعین کرنے کی بجائے  محض اُسے تربیت دینے کی ضرورت ہوتی ہے ۔

اختیار دینا : لوگ راہنمائی کر کے راہنما بنتے ہیں 

یہ بات انتہائی واضح ہے لیکن اکثر نظر انداز کر دی جاتی ہے ۔اس کی ایک مثال CPM) ) کی دریافتی بائبل سٹڈی میں نظر آتی ہے ، جہاں دلچسپی رکھنے والے گھرانے بائبل کا مطالعہ شروع کرتے ہیں۔ پیدائش سے یسوع تک  خُدا کی کہانی کا مطالعہ کرنے والوں سے  سوالات کا ایک سلسلہ پوچھ کر شاگرد بنائے جاتے ہیں2 ۔ CPM) ) کے ان سلسلوں میں سے کچھ میں باہر سے آنے والا کبھی سوال نہیں پوچھتا۔ اس کی بجائے وہ گھرانے کے کسی فرد سے ہی وہ سوال پوچھنے کو کہتا ہے ۔ جواب بائبل سے آتے ہیں لیکن سوال پوچھنے والا علم کے حصول اور فرمانبرداری کے عمل کی سہولت کاری سیکھ جا تا ہے ۔ اس کی ایک مثال ہم تربیت کاروں کی تربیت ( T4 T) میں دیکھتے ہیں ہر نیا شاگرد نئے حاصل شدہ علم سے دوسروں کو آگاہ کرنا سیکھتا ہے ۔اس طرح وہ دوسروں کو تربیت دینے کے ساتھ ساتھ خود راہنمائی کی تربیت بھی حاصل کرتا ہے ۔راہنماؤں کی افزائش اور باتسلسل ترقی کے لئے بھی یہی اصول استعمال ہوتاہے۔ اس سے ایمانداروں کو عمومی اور روایتی  چرچ کے تناظر سے ہٹ کر تیز رفتار انداز میں عمل  کرنے اور تربیت حاصل کرنے کا موقع ملتاہے ۔

بائبل کی بنیاد پر راہنمائی : کلام کے معیار کے مطابق 

راہنماؤں کے ابھرنے اور اُن کے تقرر کرنے کے لئے بائبل سے حاصل شدہ معیار استعمال کیے جاتے ہیں ۔ یہ معیار چرچ کے نئے راہنماؤں کے لئے ططس کے پہلے باب کی 5 ویں   سے  9  ویں آیت میں ہیں اور پہلے سے قائم چرچز کے راہنماؤں کے لئے تیمتھیس کے نام پہلے خط  کے  تیسرے باب کی آیت نمبر 1 سے 7 میں ہیں۔ ایماندار ان حوالوں کا گہرا مطالعہ کر کے راہنماؤں کے کردار اور ذمہ داریوں سے آگاہ ہوتے ہیں ۔ ایسا کرنے کے دوران انہیں ایسے بہت سے عناصر اور مہارتوں کا پتہ چلتا ہے جو چرچ کو استحکام دینے کے ہر مرحلے پر ضروری ہوتی ہیں ۔ اس طرح وہ اُن اصولوں پر عمل کرنے سےبھی بچ جاتے ہیں جن کی بنیاد بائبل کے معیار پر نہیں ہے ۔

غیر جانبداری : پھل لانے پر توجہ ( متی 18: 1-13)

راہنماؤں کا انتخاب اُن کی صلاحیت ، شخصیت یا انداز کی بنیاد پر نہیں بلکہ اُن کے پھل لانے کی صلاحیت کی بنیاد پر  کیا جاتا ہے ۔جب کوئی CPM) )  کے تربیت کاروں  سے پوچھتا ہے کہ وہ پہلی تربیت کے دوران کیسے جان سکتا ہے کہ کون پھل لائے گا، تو ہم اکثر ہنستے ہیں ۔ ہمیں   کچھ پتہ نہیں ہوتا کہ کون پھل لائے گا۔ ہم سب کو تربیت دیتے ہیں او راکثر ایسا ہوتا ہے کہ وہ لوگ جن سے ہم توقع نہیں کر رہے ہوتے ،سب سے زیادہ پھل لاتے ہیں ۔اور جن سے ہم زیادہ توقع کر رہے ہوتے ہیں وہ کچھ بھی نہیں کرپاتے۔ راہنما تب راہنما بنتے ہیں جب وہ لوگوں تک رسائی حاصل کرتے ہیں ،جو بعد میں اُن کے پیچھے چلنے لگتے ہیں۔ ایسے راہنماؤں کے ابھرنے کے بعد اُن کو  زیادہ وقت دیا جاتا ہے جو زیادہ پھل لاتے ہیں تاکہ وہ مزید پھل لائیں ۔ہفتے کے اختتام پر خصوصی تربیتی سیشنز  ، سالانہ تربیتی کانفرنسوں ، انتہائی نوعیت کےعموماً گشتی تربیتی پروگراموں جیسے وسائل کے ذریعے پھل لانے والے راہنماؤں کو مزید ترقی اور تربیت دی جاتی ہے اور پھر اس کے بعد وہ دوسروں کو ان مہارتوں سے آراستہ کرتے ہیں ۔

دوسروں کی شمولیت: کثیر تعداد میں راہنما ( اعمال 1 : 13)

CPM) )  کی زیادہ تر تحریکوں میں چرچز کے پاس کافی تعداد میں راہنما ہوتے ہیں تاکہ تحریک کا استحکام اور مزید راہنماؤں کی تیاری کو یقینی بنایا جا سکے۔ اس کا ایک بنیادی فائدہ یہ ہوتا ہے کہ راہنما اپنی اپنی نوکریاں جاری رکھ سکتے ہیں۔ اس کے ذریعے عام لوگ تحریک کے پھیلاؤمیں کردار اداکر سکتے ہیں اور راہنماؤں کا تنخواہوں کی ادائیگی کے لئے بیرونی مالی امداد پر انحصار ختم ہو جاتا ہے ۔ زیادہ تعداد میں راہنماؤں کے ہونے سے راہنمائی کی ذمہ داریاں بہتر طور پر ادا ہوتی ہیں ۔اُن کی مجموعی دانش بھی زیادہ ہوتی ہے اور ایک دوسرے کو بہتر انداز میں باہمی تعاون فراہم کر سکتے ہیں ۔ کثیر تعداد میں چرچز کی باہمی تربیت اور تعاون بھی انفرادی راہنماؤں اور چرچز کو نشوونما دینے میں اہم کردار ادا کرتاہے ۔

 

چرچز: نئے چرچز پر توجہ 

راہنماؤں کے تقرر اور ترقی سے باقاعدہ بنیادوں پر نئے چرچز کا قیام ممکن ہو جاتا ہے ۔اور یہ فطری طور پر ہوتا ہے۔ جب ایک نئے چرچ کا آغاز ہوتا ہے  اور وہ اپنے نئے خُداوند کے لئے جوش وجذبے سے بھرپور ہوتے ہیں، تو اُن سے کہا جاتا ہے کہ وہ اُسی نمونے کو دوہرائیں جو اُن کی نجات کا باعث بنا۔ سو وہ اپنے رابطوں کے نیٹ ورک میں بھٹکے ہوئے لوگوں کی تلاش کرنے لگتے ہیں ۔ اور منادی اور شاگرد سازی کے اُسی عمل کو دوہراتے ہیں  جس سے گزر کر انہیں افزائش کی تربیت دی گئی تھی۔ اس عمل میں وہ یہ بات بھی سمجھ جاتے ہیں کہ کچھ راہنماؤں کو چرچ کے اندرکام کرنے کی صلاحیت دی گئی ہے  ( پاسٹر، استاد وغیرہ ) اور کچھ کو چرچ سے باہر اپنی توجہ مرکوز کرنے کی صلاحیت دی گئی ہے ( مناد،  نبی، رسول، وغیرہ )۔ اندر کے راہنما چرچ کی قیادت کرنا سیکھتے ہیں، تاکہ وہ چرچ وہ سب کچھ کرنے لگ جائے جس کی اُس سے توقع کی جا سکتی ہے  ( اعمال  2: 37-47) ۔ باہر کے راہنما نئے لوگوں تک رسائی حاصل کرنے کے لئے اُس پورے چرچ کا نمونہ پیش کرتے ہیں اور لوگوں کو ضروری وسائل اور مہارتوں سے آراستہ کرتے ہیں ۔ 

حاصلِ کلام 

خُدا نے جن نئی تحریکوں کو جنم دیا ہے، اُن سے ہم کیا سیکھ سکتے ہیں؟ کیا ہم تیار ہیں کہ مروجہ فرقوں اور تہذیبوں کے تعصبات چھوڑ کر  راہنماؤں کی تیاری اور ترقی کے لئے بائبل کو معلومات اورہدایات کا بنیادی سر چشمہ بنا لیں ؟ اگر ہم بائبل سے باہر کے معیار کو چھوڑ کر صرف بائبل کی ہدایات پر عمل کریں تو ہم بہت سے راہنماؤں کو ابھرتا ہوا دیکھیں گے۔ ہم بہت سے بھٹکے ہوئے لوگوں تک رسائی ہوتی دیکھیں گے۔  کیا ہم بھٹکے ہوؤں کی نجات اور ہمارے خُدا کے نام کو جلال دینے کے لئے  یہ قربانی دینے کو تیار ہیں ؟

یہ مضمون  24:14 – A Testimony to All Peoples   کے صفحات 104 -100سے لیا گیا ہے    اور مشنز فرنٹٔیرز  www.missionfrontiers.org  کے  جولائی-اگست 2012  کے شمارے میں شائع ہونے والے مضمون کی مصنف کی جانب سے نظرِ ثانی شدہ  شکل ہے ۔ 

Categories
حرکات کے بارے میں

چرچز کی تخم کاری کی تحریک قیادت اور راہنمائی کی تحریک ہوتی ہے ۔ حصہ اول

چرچز کی تخم کاری کی تحریک قیادت اور راہنمائی کی تحریک ہوتی ہے ۔ حصہ اول

سٹین پارکس –

جب ہم اپنے اردگرد آج کی دنیا کو دیکھتے ہیں تو ہمیں نظر آتا ہے کہ چرچز  کی تخم کاری  CPM) ) کی سب سے متحرک تحریکیں ایسے علاقوں میں  شروع ہوتی ہیں جہاں غربت ، بحران ، بد امنی، ایذارسانی ہوتی ہے اور مسیحیوں  کی تعداد بہت کم ہوتی ہے۔   اس کے بر عکس ایسے علاقوں میں  جہاں امن، دولت ، تحفظ اور کثیر تعداد میں مسیحی موجود ہیں ، چرچز عموما کمزور ہیں اور زوال کا شکار ہیں ۔

کیوں؟ 

بحران کی صورت حال میں  ہم خُدا کی طرف دیکھنے پر مجبور ہو جاتے ہیں۔   جب ہمارے پاس وسائل کم ہوں تو ہم اپنے پروگراموں اور منصوبوں کی بجائے خُدا کی قوت پر انحصار کرنے پر مجبور ہو تے ہیں ۔ مسیحیوں کی قلیل تعداد کا مطلب یہ ہے کہ اُس علاقے میں روایتی  چرچ کچھ خاص مضبوط نہیں ہے ۔ یوں اس بات کا امکان بڑھ جاتا ہے کہ بائبل ہماری حکمت عملی اور عملی  اصولوں کے لئے اہم ترین سر چشمہ بن جائے ۔

موجودہ چرچز خُدا کی ان نئی تحریکوں سے کیا سیکھ سکتے ہیں ؟1 ہم بہت سے سبق سیکھ سکتے ہیں  اور ہمیں سیکھنے بھی چا ہییٔں ،اُن میں  سے ایک اہم سبق راہنمائی اور قیادت سے متعلق ہے۔ بنجر علاقوں میں ہمیں فصل کے لئے مزدوروں کی تلاش ہوتی ہےجہاں  نئے ایماندار ابھرتے ہیں  اور اپنے نارسا گروہوں میں لوگوں تک رسائی کی راہنمائی کرتے ہیں ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

1 مشنز فرنٹٔیرز  www.missionfrontiers.org  کے  جولائی-اگست 2012  کے شمارے میں شائع ہونے والے مضمون کی مصنف کی جانب سے نظرِ ثانی۔

2  CPM     تاریخ کی کئی مسیحی تحاریک کا جدید  مظہر ہیں۔  ایسا نہیں کہ اِن کی دریافت میں 2000 سال لگے۔  اِن اصولوں کو کئی بار دریافت کر کے بُھلا یا گیا  اور پِھر دوبارہ دریافت کیا گیا۔  اعمال کی کتاب، چرچ کے اِبتدائی 200  سالوں میں رومی سلطنت کی کئی قومیں، مشرقی چرچ جِس نے  مسیحی معاشروں کو بحیرہِ روم سے چین اور ہندوستان تک پھیلایا، 250 سالوں میں  شمالی یورپ کے زیادہ تر علاقوں میں آئرش قوم کی منادی، موراوین مشن کی تحریک، برما کے پہاڑی قبائل میں پھیلنے والی تحریکیں، میتھڈازم، چین میں گذشتہ 60  سالوں میں چرچ کا پھیلاؤ اور کئی دیگر تحریکیں  تاریخ میں مسیحی تحریکوں کی مثالیں ہیں۔ 

 

دیکھا جائے تو CPM) ) کئی طرح سے دراصل چرچ کے راہنماؤں کی افزائش اور ترقی کی تحریک ہوتی ہے۔ ایسا کیا ہے جو محض چرچز کے قیام اور چرچز کی باتسلسل تحریکوں کو ایک دوسرے سے ممتاز کرتاہے ؟ اس کا جواب ہے راہنماؤں کی افزائش اور نشوونما ۔چاہے جتنے بھی چرچ قائم ہو جائیں، جب تک اُسی تہذیب کے اندر کے لوگ راہنما نہ بنیں ،وہ چرچز غیر ملکی چرچ ہی رہیں گے ۔یا تو اُن کی افزائش بہت سُست رفتار ہو گی یا جب ابتدائی راہنما اپنی آخری حدود تک پہنچ جائیں تو اُن کی افزائش رُک جائے گی۔

وکٹر جان CPM) ) کی ایک بہت بڑی تحریک  کے راہنما ہیں جو شمالی ہندوستان کے بوجھ پوری بولنے والے 10 کروڑ سے  زائد لوگوں میں متحرک ہے ۔اس علاقے کو ماضی میں جدید مشنز کا قبرستان کہا جاتا ہے ۔وکٹر جان کہتے ہیں کہ اگرچہ چرچ انڈیا میں توما                   رسول کے وقت سے لے کر اب تک تقریبا 2000 سال سے قائم رہا ہے، 91 فیصد ہندوستانیوں کو انجیل کی خوشخبری تک رسائی حاصل  نہیں تھی۔ اُن کے خیال کے مطابق اس کی بڑی وجہ نشوونما پانے والے راہنما ؤں کی کمی تھی۔

 وکٹر جان کہتے ہیں کہ چوتھی صدی کی ابتدا میں ابتدائی مشرقی چرچ نے مشرق سے راہنما بُلوائے اور عبادت کے لئے سُریانی زبان استعمال کی، جس کی وجہ سے صرف سُریانی بولنے والے لوگ ہی دعا میں راہنمائی کر سکتے تھے۔ کاتھولک کلیسیا نے سولہویں صدی میں  مقامی زبان استعمال کرنا شروع کی۔  لیکن انہوں نے بھی مقامی راہنماؤں  کے استعمال کا نہیں سوچا ۔اٹھارہویں صدی میں پروٹیسٹنٹ فرقے نے مقامی راہنماؤں کا تقرر کیا ،لیکن اُن کی تربیت کا انداز مغربی ہی رہا ۔ اس وجہ سے مقامی راہنما افزائش نہ پا سکے ” مقامی راہنماؤں کی تبدیلی مفادات کے ایک بہت بڑے تضاد کا شکار رہی ۔ کسی بھی مقامی قومی یا علاقائی کارکن کو راہنما نہ کہا گیا ۔ کیونکہ یہ اصطلاح صرف سفید فارم لوگوں کے لئے مخصوص تھی۔ مشنری تنظیموں نے موجودہ قیادت کی تبدیلی پر تو توجہ دی ،لیکن افزائش نشوونما اور ترقی پر توجہ نہیں دی 2“۔

آج کے دور میں بھی ہم عموما  قیادت کی تبدیلی،  نظام اور تنظیم کے چلتے رہنے پر توجہ دیتے ہیں، بجائے اس کے کہ نئے شاگرد اور چرچز کے جنم پر توجہ دیں ۔ حقیقت یہ ہے کہ نئے چرچ کھوئے ہوئے لوگوں تک پہنچنے کے لئے  زیادہ موثر  ثابت ہوتے ہیں  اس کے باوجود  زیادہ تر چرچ محض اپنے حجم میں بڑھتے رہے، بجائے اس کے کہ وہ نئے چرچز کی ابتدا کرتے۔  سیمنریاں بھی طُلبا کو نئے چرچز کی ابتدا کی تربیت دینے کی بجائے انہیں موجودہ چرچز کا انتظام سنبھالنے کے لئے ہی تیار کرتی رہیں۔ ہم اپنے وقت اور وسائل کا زیادہ تر حصہ اپنی سہولت کے لئے استعمال کرتے رہے اور اُن لوگوں کو نظر انداز کیے رکھا جو دوزخ میں ہمیشہ کی آگ  کی جانب بڑھتے چلے جا رہے تھے ۔ 

(مسیحی دنیا کی آبادی کا 33 فیصد ہیں لیکن دنیا کی سالانہ آمدنی کا 53 فیصد وصول کرتے ہیں، اور اُس کا 98 فیصد حصہ خود اپنے اوپر خرچ کرتے ہیں3 ۔)

CPM) ) کی جدید تحریکوں پر نظر ڈالنے سے ہم راہنما ؤں کی افزائش اور نشو ونما کے چند واضح اصول دیکھتے ہیں ۔ راہنماؤں کی افزائش اور نشوونما منسٹری کے آغاز سے ہی شروع ہوجاتی ہے ۔CPM) ) میں استعمال ہونے والے منادی ، شاگرد سازی اور چرچز کے قیا م کے نمونے حقیقتاً راہنماؤں کو نشوونما دے رہے ہیں۔ ان نمونوں نے موجودہ قیادت اور رہنماؤں کی ترقی کے لئے بھی ماحول تخلیق کر دیا ہے  ۔         

نصب العین : الٰہی حُجم 

CPM) ) کے کارکنان اس یقین کے ساتھ کام شروع کرتے ہیں  کہ ایک پورے نارسا گروہوں ،شہر ، علاقے اور قوم تک رسائی حاصل کی جا سکتی ہے اور کی بھی جائے گی یہ پوچھنے کی بجائے،” میں کیا کر سکتا ہوں ؟ ” وہ پوچھتے ہیں ،” ایک تحریک کے آغاز کے لئے کیا کرنے کی ضرورت ہے؟” اس طرح اُن کی اور نئے ایمانداروں کی توجہ صرف خُدا پر مرکوز رہتی ہے اس کے نتیجے میں وہ صر ف خُدا پر انحصار

کرتے ہیں  تاکہ ناممکن کو ممکن بنتا ہوا دیکھیں  ۔ابتدائی طور پر باہر سے آنے والے یہ لوگ ممکنہ شراکت داروں کوایک  نصب العین عطا کرنے میں ایک اہم کردار ادا کرتے ہیں جو بعد میں فصل کے مزدوروں کی جماعت میں  شریک ہوجاتے ہیں۔ باہر سے آنے والے ہر راہنما کے لئے ضروری ہے کہ وہ اُسی علاقے اور تہذیب میں سے ایسا راہنما تلاش کرے جو اُس قوم تک پہنچنے کے لئے ابتدائی کوششوں کی راہنما ئی کرے  ۔ جب تہذیب اور علاقے کے اندر سے ہی راہنما ابھرتے اور ترقی کرتے جاتے ہیں تو وہ الٰہی  حجم کے اس نصب العین کو پورا کرنے کے قابل ہو جاتے ہیں ۔ 

 

دعا :   پھل لانے کی بنیاد( یوحنا14-13:   14)

ایک بڑی  CPM) )  کی تحریک کا سروے کرنے سے پتہ چلا کہ چرچزکے مؤثر  تخم کار بہت متنو ع گروپ تھے۔  لیکن اُن میں  ایک بات مشترک تھی ۔وہ روزانہ کم ازکم 2 گھنٹے دعا میں  گزارتے تھے  اور ہفتہ واری اور ماہانہ بنیادوں پر اپنی ٹیم کے ساتھ مل کر دعاکرتے اور روزے رکھتے تھے ۔ وہ تنخواہ دار کارکنان نہیں تھے۔ اُن کی اپنی اپنی نوکریاں تھیں ۔ لیکن وہ جانتے تھے کہ اُن کی کوششوں کے پھل کا انحصار اُن کی دعائیہ زندگی پر ہے ۔ چرچز کے ابتدائی تخم کاروں کا دعا پریہ انحصار نئے ایمانداروں  تک بھی منتقل ہوتا ہے ۔

تربیت :ہر کسی کو تربیت دی جاتی ہے 

ہندوستان میں CPM) ) کے راہنماؤں کی تربیت میں شریک ایک خاتون نے کہا ،” میں نہیں جانتی کہ انہوں نے مجھے چرچز کے قیام کے بارے میں بولنے کو کیوں کہا۔ نہ میں لکھ سکتی ہوں نہ پڑھ سکتی ہوں۔ میں تو بس صرف بیماروں کو شفا دیتی ہوں ،مردوں کو زندہ کرتی ہوں ، اور بائبل کی تعلیم دیتی ہوں۔ میں نے تو   ابھی تک صرف 100 چرچز قائم کیے ہیں ” ۔کیا ہم سب کی یہ خواہش نہیں ہو گی کہ ہم اُس خاتون کے جیسے عاجز ہوں ؟ 

CPM) ) کی تحریکوں میں  ہر کوئی یہ توقع کرتا ہے کہ اُسے تربیت دی جائے اور وہ دوسروں کو جتنا جلدی ممکن ہو تربیت دینے لگے ۔ ایک ملک میں جب ہمیں راہنماؤں کی تربیت کے لئے کہا گیا تو سیکیورٹی کے خدشات کی وجہ سے ہم صرف 30 راہنماؤں  سے ملاقات کر سکے۔ لیکن ہر ہفتے یہ گروپ مزید 150 لوگوں کو ہمارے ہی فراہم کردہ  بائبلی تربیتی وسائل کے ذریعے تربیت دینے لگے ۔

تربیت : تربیتی مینول بائبل ہے ۔

غیر ضروری بوجھ سے بچنے کابہترین طریقہ یہ ہے کہ صرف بائبل کو تربیتی موادکے طور پر استعمال کیا جائے ۔ CPM) ) کے رہنما تربیت کے دوران خود پر انحصار کرنے کی بجائے بائبل اور روح القدس پر انحصار کرکے رہنماؤں کو تربیت دیتے ہیں۔ جب نئے ایماندار سوال کرتے ہیں تو چرچز کے تخم کار جواب میں کہتے ہیں ،” بائبل اس بارے میں کیا کہتی ہے ؟” پھر وہ اُن کی راہنمائی کرتے ہیں کہ وہ کلام کے کئی حوالوں کا مطالعہ کریں، بجائے اس کے کہ اُن کی پسندیدہ چند آیات  پر ہی نظر ڈالیں۔ یوحنا        6: 45        میں ایک بنیادی سچائی کا ذکر ہے :”وہ سب خُدا سے تعلیم یافتہ ہوں گے جس کسی نے باپ سے سُنا اور سیکھا ہے وہ میرے پاس آتا ہے “۔ ہو سکتا ہے کہ کچھ مواقع پر چرچز کا تخم کار کچھ نہ کچھ معلومات فراہم کرنے پر مجبور بھی ہو جائے ،لیکن زیادہ تر اُس کی کوشش یہ ہی ہوتی ہے کہ نئے ایماندار خود تمام سوالوں کے جوابات تلاش کریں ۔   شاگرد سازی ، چرچزکے قیام اور راہنماؤ ں کی نشوونما ،ہر ایک کی بنیاد بائبل پر ہوتی ہے اس کے نتیجے میں شاگردوں ، چرچز اور راہنماؤں کی موثر افزائش ممکن ہو جاتی ہے ۔ 

اِس مضموُن کے دوسرے حصے میں   ہم منسٹری کے اُن نمونوں پر نظر ڈالیں گے جو تحریکوں میں  قیادت کی افزائش   کا  ماحول تخلیق کرتے ہیں۔

یہ مضمون  24:14 – A Testimony to All Peoples   کے صفحات 100 -96سے لیا گیا ہے    اور مشنز فرنٹٔیرز  www.missionfrontiers.org  کے  جولائی-اگست 2012  کے شمارے میں شائع ہونے والے مضمون کی مصنف کی جانب سے نظرِ ثانی شدہ  شکل ہے ۔ 

Categories
حرکات کے بارے میں

تحریکوں کے لئے دعا کرنے کے کلیدی نکات

تحریکوں کے لئے دعا کرنے کے کلیدی نکات

– شوڈنکے جانسن –

چرچز کی تخم کاری کی کسی بھی تحریک سے پہلے ایک دعائیہ تحریک کا ہونا لازمی ہوتا ہے جس کے بغیر چرچ کی تخم کاری کی تحریک بیدار ہی نہیں ہو سکتی۔ ضروری ہے کہ اس مقصد کے لئے خُدا کے لوگ دعا اور روزے میں وقت گزاریں ۔ضروری ہے کہ ہم اپنے شاگردوں کو پورے دل سے دعا کرنا سکھائیں۔ اگر ہم چاہتے ہیں کہ ہمیں نارسا لوگوں میں کسی  قسم کی کامیابی ملے تو ہمیں ایک دعائیہ منسٹری اور دعا کرنے والے شاگردوں کی ضرورت ہے۔ دعا کسی بھی تحریک کے لئے ایک انجن کی حیثیت رکھتی ہے اور دعا کا مؤثر ہونا اس چیز پر انحصار کرتا ہے کہ ہم اُس دعا میں کیا مانگ رہے ہیں ۔

ذیل میں دعا کرنے کے 12 اہم ترین نکات دئیے جا رہے ہیں، جنہیں ہم مغربی افریقہ میں اپنی تحریکوں کے لئے استعمال کرتے ہیں ۔

دعا کریں :

  1. کہ خُدا فصل کاٹنے کے لئے مزدور بھیجے ۔کہ شاگرد سازوں اور دعا کرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہو ۔

اور وہ اُن سے کہنے لگا کہ فصل تو بُہت ہے لیکن مزدُور تھوڑے ہیں اِس لِئے فصل کے مالِک کی مِنّت کرو کہ اپنی فصل کاٹنے کے لِئے مزدُور بھیجے۔“(لوقا 10: 2 )

  • کہ خُدا لوگوں کے دلوں کو چُھو لے اور انہیں اپنی طرف کھینچ لے۔ 

اور ساؤُل بھی جِبعہ کو اپنے گھر گیا اور لوگوں کا ایک جتھا بھی جِن کے دِل کو خُدا نے اُبھارا تھا اُس کے ساتھ ہو لِیا۔” ( 1 -سیموئیل 10: 26)

یِسُوعؔ نے جواب میں اُن سے کہا آپس میں نہ بُڑبُڑاؤ۔ کوئی میرے پاس نہیں آ سکتا جب تک باپ جِس نے مُجھے بھیجا ہے اُسے کھینچ نہ لے اور مَیں اُسے آخِری دِن پِھر زِندہ کرُوں گا۔ نبِیوں کے صحِیفوں میں یہ لِکھا ہے کہ وہ سب خُدا سے تعلِیم یافتہ ہوں گے۔ جِس کِسی نے باپ سے سُنا اور سِیکھا ہے وہ میرے پاس آتا ہے۔“(یوحنا 6: 43-45)

اور سبت کے دِن شہر کے دروازہ کے باہر ندی کے کنارے گئے جہاں سمجھے کہ دُعا کرنے کی جگہ ہو گی اور بَیٹھ کر اُن عَورتوں سے جو اِکٹّھی ہُوئی تِھیں کلام کرنے لگے۔ اور تھواتِیرؔہ شہر کی ایک خُدا پرست عَورت لُدِیہ نام قِرمز بیچنے والی بھی سُنتی تھی۔ اُس کا دِل خُداوند نے کھولا تاکہ پَولُس کی باتوں پر توجُّہ کرے۔“(اعمال 16: 13- 14)

  • کہ خُدا خوشخبری کی منادی کے لئے دروازے کھولے ۔

اور ساتھ ساتھ ہمارے لِئے بھی دُعا کِیا کرو کہ خُدا ہم پر کلام کا دروازہ کھولے تاکہ مَیں مسِیح کے اُس بھید کو بیان کر سکُوں جِس کے سبب سے قَید بھی ہُوں۔ اور اُسے اَیسا ظاہِر کرُوں جَیسا مُجھے کرنا لازِم ہے۔“(کلسیوں 4: 3-4)

  • کہ سلامتی کے فرزند ملیں ۔

اور جِس گھر میں داخِل ہو پہلے کہو کہ اِس گھر کی سلامتی ہو۔ اگر وہاں کوئی سلامتی کا فرزند ہو گا تو تُمہارا سلام اُس پر ٹھہرے گا نہیں تو تُم پر لَوٹ آئے گا۔ اُسی گھر میں رہو اور جو کُچھ اُن سے مِلے کھاؤ پِیو کیونکہ مزدُور اپنی مزدُوری کا حق دار ہے۔ گھر گھر نہ پِھرو۔“(لوقا 10 : 5-7)

  • دعا کریں کہ دشمن کے سارے قلعے اور جھوٹ ٹوٹ پھوٹ جائیں۔ 

کیونکہ ہم اگرچہ جِسم میں زِندگی گُذارتے ہیں مگر جِسم کے طَور پر لڑتے نہیں۔ اِس لِئے کہ ہماری لڑائی کے ہتھیار جِسمانی نہیں بلکہ خُدا کے نزدِیک قلعوں کو ڈھا دینے کے قابِل ہیں۔ چُنانچہ ہم تصوُّرات اور ہر ایک اُونچی چِیز کو جو خُدا کی پہچان کے برخِلاف سر اُٹھائے ہُوئے ہے ڈھا دیتے ہیں اور ہر ایک خیال کو قَید کر کے مسِیح کا فرمانبردار بنا دیتے ہیں۔“(2 -کرنتھیوں 10: 3-5)

  • کہ خُدا خوشخبری کا پیغام پھیلانے کے لئے ہمت اور جرأت عطا کرے۔

اب اَے خُداوند! اُن کی دھمکِیوں کو دیکھ اور اپنے بندوں کو یہ تَوفِیق دے کہ وہ تیرا کلام کمال دِلیری کے ساتھ سُنائیں۔ جب وہ دُعا کر چُکے تو جِس مکان میں جمع تھے وہ ہِل گیا اور وہ سب رُوحُ القُدس سے بھر گئے اور خُدا کا کلام دِلیری سے سُناتے رہے۔“(اعمال 4: 29،  31) 

  •  کہ شاگرد بنانے والوں کو نیا مسح ملے اور روح القدس کی قوت حاصل ہو ۔

خُداوند کا رُوح مُجھ پر ہے۔ اِس لِئے کہ اُس نے مُجھے غرِیبوں کو خُوشخبری دینے کے لِئے مَسح کِیا۔ اُس نے مُجھے بھیجا ہے کہ قَیدِیوں کو رِہائی اور اندھوں کو بِینائی پانے کی خبر سُناوُں۔ کُچلے ہُوؤں کو آزاد کرُوں۔“(لوقا 4: 18)

اور دیکھو جِس کا میرے باپ نے وعدہ کِیا ہے مَیں اُس کو تُم پر نازِل کرُوں گا لیکن جب تک عالَمِ بالا سے تُم کو قُوّت کا لِباس نہ مِلے اِس شہر میں ٹھہرے رہو۔“(لوقا 24: 49)

لیکن جب رُوحُ القُدس تُم پر نازِل ہو گا تو تُم قُوّت پاؤ گے اور یروشلِیم اور تمام یہُودیہ اور سامرؔیہ میں بلکہ زمِین کی اِنتِہا تک میرے گواہ ہو گے۔“(اعمال 1: 8)

مگر شاگِرد خُوشی اور رُوحُ القُدس سے معمُور ہوتے رہے۔“(اعمال 13 : 52)

  • کہ نشانوں، حیران کُن کاموں اور معجزوں میں اضافہ ہو۔ 

اور تُو اپنا ہاتھ شِفا دینے کو بڑھا اور تیرے پاک خادِم یِسُوعؔ کے نام سے مُعجِزے اور عجِیب کام ظہُور میں آئیں۔“(اعمال 4: 30)

اَے اِسرائیِلیو! یہ باتیں سُنو کہ یِسُوعؔ ناصری ایک شخص تھا جِس کا خُدا کی طرف سے ہونا تُم پر اُن مُعجِزوں اور عجِیب کاموں اور نِشانوں سے ثابِت ہُؤا جو خُدا نے اُس کی معرفت تُم میں دِکھائے۔ چُنانچہ تُم آپ ہی جانتے ہو۔“(اعمال 2: 22)

مَیں تُم سے سچ کہتا ہُوں کہ جو مُجھ پر اِیمان رکھتا ہے یہ کام جو مَیں کرتا ہُوں وہ بھی کرے گا بلکہ اِن سے بھی بڑے کام کرے گا کیونکہ مَیں باپ کے پاس جاتا ہُوں۔“(یوحنا 14: 12) 

اور میری تقرِیر اور میری مُنادی میں حِکمت کی لُبھانے والی باتیں نہ تِھیں بلکہ وہ رُوح اور قُدرت سے ثابِت ہوتی تھی۔ تاکہ تُمہارا اِیمان اِنسان کی حِکمت پر نہیں بلکہ خُدا کی قُدرت پر مَوقُوف ہو۔“(1-کرنتھیوں 2: 4-5)

  • عملی میدان میں کام کرنے والے خادموں کی حفاظت کے لئے ۔

دیکھو مَیں تُم کو بھیجتا ہُوں گویا بھیڑوں کو بھیڑِیوں کے بیچ میں۔ پس سانپوں کی مانِند ہوشیار اور کبُوتروں کی مانِند بے آزار بنو۔“(متی 10: 16)

اُس نے اُن سے کہا مَیں شَیطان کو بِجلی کی طرح آسمان سے گِرا ہُؤا دیکھ رہا تھا۔ دیکھو مَیں نے تُم کو اِختیار دِیا کہ سانپوں اور بِچّھُوؤں کو کُچلو اور دُشمن کی ساری قُدرت پر غالِب آؤ اور تُم کو ہرگِز کِسی چِیز سے ضرر نہ پہنچے گا۔“(لوقا 10: 18- 19)

  • کام کی تکمیل کے لئے درکار ضروری وسائل کی فراہمی کے لئے ۔

میرا خُدا اپنی دَولت کے مُوافِق جلال سے مسِیح یِسُوع میں تُمہاری ہر ایک اِحتیاج رَفع کرے گا۔“(فلپیوں 4: 19)

اور خُدا تُم پر ہر طرح کا فضل کثرت سے کر سکتا ہے تاکہ تُم کو ہمیشہ ہر چِیز کافی طَور پر مِلا کرے اور ہر نیک کام کے لِئے تُمہارے پاس بُہت کُچھ مَوجُود رہا کرے۔“(2- کرنتھیوں 9: 8)

  • ایسی افزائش کے لئے جس کے نتیجے میں تحریکیں لوگوں کے دلوں کو گرما دیں۔ 

پس تُم جا کر سب قَوموں کو شاگِرد بناؤ اور اُن کو باپ اور بیٹے اور رُوحُ القُدس کے نام سے بپتِسمہ دو۔ اور اُن کو یہ تعلِیم دو کہ اُن سب باتوں پر عمل کریں جِن کا مَیں نے تُم کو حُکم دِیا اور دیکھو مَیں دُنیا کے آخِر تک ہمیشہ تُمہارے ساتھ ہُوں۔ “(متی 28: 19-20)

اور خُدا کا کلام پَھیلتا رہا اور یروشلِیم میں شاگِردوں کا شُمار بُہت ہی بڑھتا گیا اور کاہِنوں کی بڑی گروہ اِس دِین کے تحت میں ہو گئی۔ “(اعمال 6: 7)

اور خُدا نے اُن کو برکت دی اور کہا کہ پَھلو اور بڑھو اور زمِین کو معمُور و محکُوم کرو اور سمُندر کی مچھلیوں اور ہوا کے پرِندوں اور کُل جانوروں پر جو زمِین پر چلتے ہیں اِختیار رکھّو۔” (پیدائش 1: 28)

  • دنیا بھر میں دیگر تحریکوں اور شاگرد سازوں کے لئے ۔

تُم سب کے بارے میں ہم خُدا کا شُکر ہمیشہ بجا لاتے ہیں اور اپنی دُعاؤں میں تُمہیں یاد کرتے ہیں۔ اور اپنے خُدا اور باپ کے حضُور تُمہارے اِیمان کے کام اور مُحبّت کی مِحنت اور اُس اُمّید کے صبر کو بِلاناغہ یاد کرتے ہیں جو ہمارے خُداوند یِسُوع مسِیح کی بابت ہے۔ “(1- تھسلنیکیوں  1: 2 -3)

Categories
حرکات کے بارے میں

نسلوں کے محرکات اور انہیں درپیش چیلنج – حصہ دوم

نسلوں کے محرکات اور انہیں درپیش چیلنج – حصہ دوم

سٹیو سمتھ اور سٹین پارکس –

حصہ اول میں ہم نے نسلی بُنیادوں پر چرچ کی افزائش کے محرکات اور درپیش چیلنجز پر بات کی تھی۔  حصہ دوم میں انہی موضوعات کو اگلے مزحل کے تناظر میں دیکھا جائے گا۔

تیسرا مرحلہ : ایک پھیلتا ہوا نیٹ ورک – تیسر ی نسل کے ابتدائی چرچ 

  • G1اور 2 کے چرچز مستحکم ہو کر افزائش کر رہے ہیں ۔
  • G3 کے بہت سے چرچ شروع ہو رہے ہیں  جب کہ G3 کے کچھ گروپ چرچز میں تبدیل ہو رہے ہیں ۔
  • کلیدی راہنماؤں کو شناخت کر کے اُن کی   تربیت اور شاگرد سازی کی جا رہی ہے  کئی نسلوں پر مبنی صحت مند گروپوں اور راہنماؤں کی تیاری پر پوری توجہ دی جا رہی ہوتی ہے۔
  •  ذیادہ تر تحریکیں چرچز کے لئے شجرہ بنانے کا طریقہ استعمال کر رہی ہیں ۔
  • G3 کے چرچز پر بہت زور دیا جا رہا ہے ۔
  • نیٹ ورک کو بڑھاتے ہوئے  واضح تصورات اور قابل افزائش گروپوں کے طریقہ کار استعمال کیے جا رہے ہیں ۔
  • علاقائی راہنما ہر سطح پر کامیابیوں کی گواہیاں پیش کر  رہے ہیں ۔
  • ایک بڑی بُلاہٹ رکھنے والے مقامی راہنما ابھر چکے ہیں اور اب وہ بنیادی محرکین میں شامل ہیں ۔

چیلنجز

  • راہنما اب بھی جوابات کے لئے کلام دیکھنے کی بجائے G0   کے مسیحیوں کے پاس جا تے ہیں ۔
  • پہلی اور دوسری نسل کے چرچز کی کامیابی کا جوش تیسری اور بعد کی نسل کے چرچز کو نظر انداز کرنے کا سبب بنتا ہے۔ 
  • اوپر دیئے گئے کلیدی پہلوؤں میں سے کچھ موجود نہیں ہیں ۔
  • کمزور نصب العین نصب العین مناسب طور پر اگلی نسلوں تک نہیں پہنچا ( ابتدائی نسلوں کا مقصد بہت واضح تھا جب کہ بعد کی نسلوں کا مقصد بہت کمزور پڑ چُکا ہے )
  • تمام شاگر دجو تحریک میں  شامل ہیں انہیں مقصد سے پوری طرح آگاہی نہیں اور نہ ہی وہ اُسے قبول کر رہے ہیں ۔
  • ایذارسانی کا خوف لوگوں کے دلوں میں  بیٹھ گیا ہے ۔
  • قیادت بہتر انداز میں ترقی نہیں کر رہی اور ایسے حالات میں تیمتھیس جیسے لوگ تیار کرنے کی ضرورت ہے ۔
  • راہنماؤں اور گروپوں میں تحریکوں کے تصور کی کمزوری بھی افزائش کو روک سکتی ہے مثال کے طور پر  گروپ تعداد میں نہ بڑھ رہے ہوں اور مقامی راہنما بھی افزائش نہ پا رہے ہوں اور پچھلی نسل کے راہنماؤں کی دی ہوئی تعلیمات کو نظر انداز کر چُکے ہوں ۔
  • باہر سے آنے والے خادم وقت سے پہلے واپس چلے جائیں ۔

چوتھا مرحلہ:  ایک ابھرتی ہوئی CPM – چوتھی نسل کے ابتدائی چرچ 

  • G3 کے مستحکم چرچ جن کے ساتھ G5، G4 اور G6کے گروپ اور چرچ بھی موجود ہیں ۔
  • مقامی راہنماؤں کا ایک بڑھتا ہوا گروہ تحریک کی نگرانی کر رہا ہے ۔
  • مقامی اور بیرونی راہنما  ارادی طور پرتمام نسلوں میں  تحریکوں کے اصول راسخ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔
  • باہر سے آنے والے کلیدی راہنماؤں کی تربیت میں بنیادی کردار ادا کر رہے ہیں ۔
  • قیادت کے نیٹ ورکز کی ارادی تربیت ۔
  • راہنما تعاون اور حصول علم کے لئے ایک دوسرے سے ملاقاتیں کرتے ہیں ۔
  • اس مرحلے پر نئے علاقوں میں کام کا آغاز کیا جا سکتا ہے ۔
  • اندرونی اور بیرونی چیلنجز راہنماؤں اور چرچز کے لئے استحکام ، صبر و برداشت ، ایمان اور افزائش کا باعث بنتے ہیں ۔
  • اگر تحریکیں G3 کے چرچز تک پہنچ جائیں تو عموما وہ G4 تک بھی پہنچ جاتی ہیں ۔
  • شراکتی راہنمائی کے چیلنجز کو عبور کر کے دیگر راہنماؤں کی حقیقی انداز میں تیاری ہوتی ہے ۔

چیلنجز 

  •  اپنی زبان اور قوم کے لوگوں سے ہٹ کر باہر نکلنے کے  تصور کی عدم موجودگی ۔
  • تحریک کے بنیادی راہنماؤں پر ضرورت سے ذیادہ انحصار ۔
  • درمیانی سطح کی تربیت میں تسلسل یا ارتقاض کا فقدان ۔
  • نئے علاقوں اور لوگوں تک پہنچنے کے لئے مقامی لوگوں کو ذمہ داری نہ دینا اور بیرونی امداد پر ہی انحصار کرتے رہنا ۔ 
  • کلیدی راہنماؤں کی تبدیلی۔
  • بنیادی اکائی یعنی خاندانوں کے ختم ہونے کے بعد بھی اُس تہذیب سے نکال کر دوسری تہذیب یا علاقے میں  نہ جانا ۔
  • بیرونی مالی امداد پر مکمل انحصار ۔
  • تحریک سے غیر وابستہ غیر ملکی   مقامی راہنماؤں کو تنخوائیں پیش کرتے ہیں ۔
  • بیرونی مسیحی راہنما بائبل کی حقیقی تعلیم دینے کے لئے تیار  نہیں ہوتے ۔

پانچواں مرحلہ : چرچ کی تخم کاری کی تحریک 

  • چوتھی اور بعد کی نسلوں کے کئی چرچ  افزائش پا رہے ہوتے ہیں ( CPM  کی یہ ہی قابلِ قبول تعریف ہے )
  • یہ مرحلہ پہلے چرچ کی ابتدا کے عموما تین سے پانچ سال کے بعد آتا ہے ۔
  • عموما 100 سے زیادہ چرچ قائم ہو چکے ہوتے ہیں ۔
  • ابھی زیادہ تر افزائش آنا باقی ہے لیکن باتسلسل افزائش کے لئے بنیادی عناصر اور عوامل یا تو مستحکم ہو چکے ہیں یا شروع کر دیئے گئے ہیں ۔
  • چار یا اُس سے ذیادہ مثالی سلسلے ۔
  • مثالی طور پر ایک مستحکم راہنماؤں کی ٹیم جو مقامی راہنماؤں پر مشتعمل ہو ، تحریک کی قیادت کر رہی ہوتی ہے جب کہ باہر سے آنے والے مقامی قیادت کی ٹیم کے ساتھ محض مل کر کا م ہی کر رہے ہوتے ہیں ۔
  • اگرچہ پہلے چار مرحلوں میں پورا سلسلہ تباہی کا شکار ہو سکتا ہے ، یہ تباہی پانچویں مرحلے کے بعد شازو نادر ہی سامنے آتی ہے ۔
  • چو نکہ سب سے ذیادہ افزائش چھٹے اور ساتویں مرحلے میں ہوتی ہے اس لئے یہ انتہائی اہم ہے کہ تمام سطحوں پر راہنماؤں کی تربیت کر کے یہ نصب العین آگے منتقل کیا جائے ۔

چیلنجز 

  • اگر قیادت کی افزائش کمزور ہو تو یہاں CPM کا اوپر کی جانب سفر روک جاتا ہے ۔
  • تما م نسلوں کے گروپوں کی کارکردگی جانچنے کے لئے  ایک واضح طریقہ کار کی عدم موجودگی ۔
  • جوں جوں تعداد اور معیار بڑھے گا عین ممکن ہے کہ باہر سے آنے والے مسیحی گروپ اختیار حاصل کرنے کے لئے مالی امداد پیش کریں ۔
  • نئے سلسلے شروع ہونے یا اُن کے بڑھنے میں رکاوٹیں ۔
  • باہر سے آنے والے فیصلہ سازی میں ضرورت سے ذیادہ شامل ہو رہے ہوتے ہیں ۔

چھٹا مرحلہ :ایک باتسلسل اور  پھیلتی ہوئی CPM

  •  ایک مقصد کے حامل مقامی راہنماؤں کا نیٹ ورک تحریک کی قیادت کرتا ہے اور باہر سے آنے والوں کی ضرورت تقریبا ختم ہو جاتی ہے ۔ اس کے علاوہ تمام سطحوں پر قیادت افزئش پا رہی ہوتی ہے ۔
  • مقامی راہنماؤں میں  روحانیت زور پکڑتی ہے ۔
  • تحریک تعداد اور روحانی اعتبار دونوں طرح سے بڑھتی ہے ۔
  • مقامی لوگوں کے گروہ میں واضح داخلہ اور وسعت  نظر آتی ہے ۔
  • راہنماؤں اور چرچز کی کافی تعداد موجود ہوتی ہے جو تحریک کی مسلسل افزائش کے لئے بہترین طریقہ کار تلاش کر سکتے ہیں G5، G6اور G7 سے آگے کے چرچ مسلسل بڑھتے چلے جاتے ہیں اور تحریکوں کے اصول تمام نسلوں میں  منتقل ہوتے رہتے ہیں ۔
  • اس مقام پر تحریک تمام اندرونی اور بیرونی  چیلنجز کے مقابلے میں مستحکم ہو چُکی ہوتی ہے ۔

چیلنجز 

  •  پانچویں مرحلے تک ہو سکتا ہے کہ تحریکیں نظروں سے اوجھل رہیں لیکن چھٹے مرحلے میں سب انہیں دیکھنے لگتے ہیں اور اس کے نتیجے میں چیلنجز سامنے آ سکتے ہیں ۔
  • تحریکوں کے سامنے آنے سے روایتی چرچز اور فرقوں  کی جانب سے مخالفت پیدا ہو سکتی ہے ۔
  • یوں ظاہر ہونے پر ایذارسانی بڑھ سکتی ہے اور کلیدی راہنما نشانہ بن سکتے ہیں ۔
  • راہنماؤں کے نیٹ ورک کو پھیلتے چلے جانے کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ وہ خدمت کے پھیلتے ہوئے میدان میں کافی انداز سےکام کر سکیں ۔
  • اندرونی اور بیرونی مالی امداد کا دانش مندانہ استعمال کرنے کی ضرورت ۔
  • چھٹے مرحلے کی افزائش کافی اہم ہوتی ہے لیکن یہ کسی ایک قبیلے یا لوگوں کے ایک گروہ تک محدود رہتی ہے ساتویں مرحلے میں جانے کے لئے ایک خاص مقصد اور تربیت کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ تحریک  نئے علاقوں اور لوگوں کے گروہوں تک پہنچ سکے ۔

ساتواں مرحلہ : ایک پھلتی پھولتی CPM

  • CPM عملی اور ارادی طور پر دیگر علاقوں اور قوموں میں بھی نئی  CPM کی تحریکوں کو متحرک کر رہی ہوتی ہے ۔
  • یہ CPM ایک ایسی تحریک بن جاتی ہے جو نئی تحریکوں کو افزائش دیتی ہے اس مرحلے پر باہر سے آنے والے کا کام ختم ہو جاتا ہے اور وہ واپس پہلے مرحلے کے کام پر چلے جاتے ہیں ۔
  • تحریک کے راہنما اپنے پورے علاقے یا مذہبی گروپ میں ارشادِ اعظم کی تکمیل کے لئے ایک بڑا نصب العین اپنا لیتے ہیں ۔
  • تحریک کے راہنما دوسری تحریکوں کے آغاز میں مدد دینے کے لئے تربیت اور وسائل تیار کرتے ہیں ۔

عموما 5000 سے ذیادہ چرچ قائم ہو چکے ہوتے ہیں ۔

چیلنجز 

  •  ضروری ہے کہ ساتویں مرحلے کے راہنما دوسروں کو  موثر طور پر دیگر تہذیبوں  میں بھیجنے کے لئے تیار کرنا سیکھیں ۔
  • ایسے راہنما تیار کرنا بہت اہم ہے جو ابتدائی CPM کے  راہنماؤں پر انحصار نہ کرتے ہوں ۔
  • بڑھتی ہوئی تحریکوں کے ایک پورے نیٹ ورک کی راہنمائی کم ہی سامنے آتی ہے اس کے لئے ساتویں مرحلے کے بیرونِ ملک سے آنے والے راہنماؤں کے ساتھ تعلقات اور باہمی تربیت کی ضرورت ہوتی ہے ۔
  • ساتویں مرحلے کے راہنما عالمی چرچ کو بہت کچھ دے سکتے ہیں لیکن اس کے لئے ایک  ارادی طور پر کاوش کرنا ضروری ہے کہ عالمی چرچ اُن کی بات سُنے اور اُن سے کچھ سیکھے ۔

بنیادی اصول ( یہ چند اہم ترین اصول ہیں  جن پر CPM کے 38 محرکین اور راہنماؤں کا اتفاق ہے )

  • چھوڑ دینے کی اہمیت تمام گروپ ،شاگرد ، راہنما افزائش نہیں پائیں گے اس لئے اُن میں سے کچھ کو چھوڑ دیں کہ وہ چلے جائیں ۔
  • جن کے ساتھ ہم کام کر رہے ہوں اُن کے ساتھ رابطے قائم  کریں –  خُدا ، خاندان ، کارکنوں کے سا تھ رابطہ ایک دوسرے کے ساتھ ایسے شفاف انداز میں چلیں جیسےزائرین چلتے ہیں ۔
  • تربیت کار نہ صرف دیتا ہے بلکہ معلومات لیتا بھی ہے  اور اُسے اپنے زیر تربیت لوگوں سے کچھ وصول کرنے کے لئے تیار رہنا چاہیے ۔
  • تربیت کی افزائش کریں اس سے بڑھوتری میں سُست رفتاری نہیں ہوتی اگلی نسلوں کے لئے نئے تربیت کاروں کو تربیت دیں (متی 10: 8- ایک حقیقی شاگرد مفت میں پاتا اور مفت میں دیتا ہے )
  • روایتی چرچ پر اعتراضات اُٹھائے بغیر ایک غیر روایتی مسیحی ماحول تخلیق کریں ۔
  • ترقی کے اعداد و شمار رکھنا اور جائزہ  لینا بہت ضروری ہے اس سے افزائش کا تعین ہوتا ہے ۔
  • ہم سب لوگ بڑے اونچے ارادوں کے ساتھ منسٹری کا آغاز کرتے ہیں  لیکن مستقبل میں  ہم اُن میں  کو ئی تبدیلی نہیں  لاتے ہمیں ایسا راسخ انحصار صرف خُد اپر رکھنا چاہیے ہمیں کسی ایسے سسٹم پر انحصار نہیں کرنا چاہیے جو پہلے سے ہی قائم ہو ۔
Categories
حرکات کے بارے میں

نسلوں کے محرکات اور انہیں درپیش چیلنج-حصہ اول

نسلوں کے محرکات اور انہیں درپیش چیلنج-حصہ اول

سٹیو سمتھ اور سٹین پارکس –

ضروری نہیں کہ تحریکیں  اُسی  صاف ستھرے اور باتسلسل انداز میں  ترتیب سے آگے بڑھیں جیسے یہاں بتایا جا رہا ہے۔ دنیا میں پھیلی تمام تحریکیں سات مخصوص مراحل سے گزرتی ہیں۔ ہر مرحلہ کامیابی کا ترجمان ہوتا ہے، لیکن اُس کے ساتھ ساتھ نئے چیلنجز بھی سامنے آتے ہیں ۔چو نکہ  CPM روایات سے ہٹ کے ہے، اس لئے CPM میں ایک راہ پر رہنا مشکل ہوتا ہے۔ CPM کی کاوشوں کو ہر مرحلے پر بہت صبروتحمل کی ضرورت ہوتی ہے ۔

سب سے پہلے دو وضاحتیں کر دوں : جب ہم نسلوں کی بات کرتے ہیں  نسل 1 ، نسل 2 ،نسل 3 تو اس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ ہم نئے گروپوں /چرچوں کی بات کر رہے ہیں جو نئے ایمانداروں کو شمار کرتے ہیں ہم اس میں ابتدائی طور پر پہلے سے موجود ایمانداروں یا چرچز کی بات نہیں کرتے بلکہ انہیں صفر نسل یا جینریشن صفر کہا جاتا ہے یہی سے ہم اعداد وشمار کا آغاز کرتے ہیں ۔

چرچ کی عملی تعریف اعمال 2 : 37-47 میں ملتی ہے جب کسی گروہ میں موجود لوگوں کی ایک تعداد مسیح میں آ کر بپتسمہ لیتی ہے تو وہ عملی طور پر مسیح کی محبت اور فرمانبرداری کا اظہار کرتے ہوئے ایک چرچ بن جاتے ہیں اعمال کے باب نمبر 2 میں موجود چرچز میں یہ ہی عناصر موجود تھے ان میں توبہ ، بپتسمہ ،روح القدس ، خُدا کا کلام ،رفاقت  ،  عشائے ربانی ، دعا ، نشانات اور معجزات ، صدقات ، مل کر بیٹھنا ،شکر گزاری اور حمد و ثنا  شامل ہیں ۔

پہلا مرحلہ : ایک CPM کی کاوش شروع کرنے کے لئے بنیادی محرکات 

  • ایک CPMٹیم موجود ہو جو دوسروں کے ساتھ مل کر کام کر رہی ہو ۔
  • CPMکی ابتدائی کاوشیں عموما باہر کے شاگرد شروع کرتے ہیں جنہیں ہمراہی بھی کہا جاتا ہے یہ شاگرد باہر سے آ کر اُس تہذیب اور اُس سے قریبی تہذیبوں کے لوگوں کے ساتھ مل کر کام کرتے ہیں ۔
  • تحریکیں تقاضا کرتی ہیں کہ ایک بڑے حجم کا تصور سب لوگ آ پس میں شیئر کریں سو باہر سے آنے والا اس مخصوص گروپ کے لئے خُد اکی بُلاہٹ کے بارے میں جاننے کی کوشش کرتا ہے ۔
  • تحریکیں موثر عملی طریقہ کاروں کا تقاضا کرتی ہیں  سو باہر سے آنے والا ان کی بنیاد قائم کرتا ہے ۔
  • ابتدائی محرکین غیر معمولی انداز کی دعا اور روزے رکھنے پر توجہ دیتے ہیں- یہ کام وہ ذاتی اور ساتھی خادموں کے ساتھ مل کر کرتے ہیں ۔
  • غیر معمولی دعاؤں اور روزہ رکھنے کے عمل کو متحرک کرنا بھی اہم ہے اور یہ ہر مرحلے پر جاری رہتا ہے ۔
  • ایک اور اہم سر گرمی مقامی یا قریبی علاقوں کے شرکت داروں کو تلاش کر کے انہیں اپنے ساتھ خدمت میں شامل کرانا ہے ۔
  • رسائی کی حکمت عملیوں  کی افزائش اور اُن کی آزمائش کرنا بھی ضروری ہے تاکہ کھوئے ہوئے لوگوں کو سر گرم کرنےکے لئے مواقع تلاش کئے جائیں ۔ 
  • اس رسائی کے نتیجے میں ضروری ہے کہ سلامتی کے فرزندوں  کے ذریعے ایسے گھروں خاندانوں یا نیٹ روکز کی تلاش کی جائے جہاں بیج بویا جا سکتا ہو  ۔
  • اس مرحلے پر سلامتی کے پہلے خاندان سے رابطہ قائم کیا جاتا ہے ۔

CPM کی ابتدائی کوششوں کو در پیش چیلنج

  • دوستانہ رویہ رکھنے والے لوگوں کو سلامتی کے فرزند بنانے کی کوشش ( ایک حقیقی سلامتی کا فرزند پیاسا ہوتا ہے ) 
  • کسی دلچسپی رکھنے والے فرد کو سلامتی کے فرزند کی حثیت سے غلط شناخت کرنا ( سلامتی کا حقیقی فرزند اپنے خاندان کے دروازے اور اپنے دوستوں  کا حلقہ احباب کھولتا ہے )
  • ذیادہ تعداد میں  ایمانداروں کو تربیت دے کر تلاش میں ساتھ ملانے کی بجائے باہر سے آنے والا سلامتی کے فرزند کو اکیلا تلاش کرتا ہے ۔
  • وسیع اور جرات مندانہ انداز کی رسائی موجود نہ ہو ۔
  • خُداوند پر پورا بھروسہ نہ کرنا کسی ایک مخصوص نمونے کے طریقوں پر ضرورت سے ذیادہ انحصار کرنا ۔
  • درکار محنت سے جی چُرانا( کُل وقتی لوگ اپنا پورا وقت دیتے ہیں جب کہ جُز وقتی لوگ  دعا اور رسائی کو کافی حد تک وقت دیں )
  • ذیادہ پھل لانے والی سر گرمیوں کی بجائے محض اچھی یا درمیانے درجے کی سر گرمیوں پر وقت صرف کرنا  ۔
  • یہ سوچنے کی بجائے کہ کیا کیا جانا چاہیے اس بات پر توجہ دینا کہ میں کیا کر سکتا ہوں ۔
  • ایمان کی کمی (” یہ انتہائی مشکل علاقہ ہے ” )۔
  • ساتھ چلنے والے ہمراہی کام کرنے کی بجائے صرف تربیت دیں اور تربیت حاصل کرنے والوں کو نمونہ پیش نہ کریں ۔

مشکل ترین رکاوٹیں صفر سے پہلی جینریشن کے چرچز کو پیش آتی ہیں

  • پہلی نسل کے چرچز کے لئے بنیادی محرکات ۔
  • لازمی ہے کہ نئے چرچز شاگرد بنانے پر توجہ دیں اور کلام کی بنیاد پر خود کو قائم کریں -نہ کہ باہر سے آنے والوں کی رائے اور اُن کی روایات پر ۔ 
  • انہیں باہر سے آنے والے کی بجائے کلام اور روح القدس پر انحصار کرنے کی ضرورت ہے ۔
  • CPM کا ایک واضح راستہ ہونا لازمی ہے اگرچہ یہ راستہ کئی قسم کا ہو سکتا ہے لیکن اس میں کچھ بنیادی  عناصر یہ ہیں : 1۔ ایمانداروں کی تربیت 2۔ بھٹکے ہوؤں میں سر گرمی کا آغاز 3۔ شاگرد سازی 4۔ عہد بندی 5۔ چرچ کا قیام 6۔ قیادت کی تیاری 7۔ نئے گروہوں کی ابتدا۔
  • تمام لوگوں کے لئے ایک مضبوط اور واضح بُلاہٹ  کا ہونا ضروری ہے ۔
  • چند بنیادی حقائق سے واضح آگاہی ہونا ضروری ہے : یسوع خُدا ہے ، توبہ ، معافی ،بپتسمہ ، ایذارسانی کا سامنا ،وغیرہ 
  • باہر سے آنے والے کو چرچ کا پاسبان نہیں بننا چاہیے ضروری ہے کہ وہ اُس علاقے کے لوگوں کو اختیار دیں اور اُن کی تربیت کریں ۔

پہلی نسل کے چرچز کو در پیش چیلنج

  • ایک عمومی ناکامی یہ ہوتی ہے کہ مقامی طور پر ایسے ساتھی خادم نہ مل سکیں جو آپ کے جیسا تصور ذہن میں رکھتے ہوں ( کچھ لوگ منسٹری کو محض تنخواہ کے حصول کے لئے چلاتے رہتے ہیں )
  • باہر سے آنے والے غلطی قبول نہ کر کے افزائش کو روک دیتے ہیں انہیں اپنا تجربہ باربار دیکھانےکی ضرورت نہیں فرمانبرداری کی بنیاد پر شاگردی نہ صرف غلطیاں درست کرتی ہے بلکہ روح القدس اور بائبل کو راہنما کے  طور پر مانتی ہے ۔
  • راہنما جب بے کار لوگوں کو دیکھتے ہیں تو آہستگی سے انہیں چھوڑ کر آگے بڑھ جاتے ہیں۔
  •   ایک غلطی یہ بھی ہے کہ ایسے لوگوں کو تربیت دی جائے جو دوسروں کو تربیت نہ دینا چاہتے ہوں ۔
  • اس سے متعلقہ ایک غلطی  صرف خدمت اور منسٹری کے پہلوؤں کی تربیت ہے نہ کہ مجموعی  شخصیت کی ( خُدا کے  ساتھ ذاتی رشتہ ، خاندان ، کام ،وغیرہ )
  • باہر سے آنے والے نا تجربہ کار لوگ نئے گروپوں کے آغاز کے لئے مقامی لوگوں کو نہ بھیج کر سارے عمل کو سُست رفتار بنا دیتے ہیں ۔
  • باہر سے آنے والے نئے راہنماؤں کو اُس پائے کی تربیت دینے سے قاصر ہوتے ہیں جو اُن کے لئے ضروری ہے ۔
  • ایک اور بھول یہ ہے کہ لوگوں کو محض ایمان کے اظہار کی تربیت دی جائے اور انہیں اپنے پرانے طریقوں سے ہٹانے کے بارے میں نہ کہا جائے ۔

دوسرا مرحلہ : مرکوز افزائش – ابتدائی دوسری نسل کے چرچ

  •  پہلی نسل ( G1) کے چرچ تیزی سے بڑھ رہے ہوتے ہیں ۔
  • باہر سے آنے والے ارادی طور پر G1 کے راہنما ؤں کی تربیت پر توجہ دیتے ہیں ۔
  • G1 چرچز G2 کے گروپوں اور چرچز کا آغاز کرتے ہیں ۔
  • G1کے شاگردوں کے ایمان کے ساتھ ساتھ انہیں تحریکوں کے اصول بھی ملتے ہیں سو وہ قدرتی  طور پر  آگے بڑھ کر G0  کے شاگردوں کی حیثیت سے نئی نسلیں شروع کرتے ہیں ۔
  • جب شاگردوں اور چرچز کی تعداد بڑھتی ہے تو اُس کے جواب میں عموما مذامت اور ایذارسانی بھی بڑھنے لگتی ہے۔  
  • G0   کے راہنماؤں کے لئے ضروری ہے کہ وہ G1 کے راہنماؤں اور چرچز  کو افزائش کے لئے مدد دیں بجائے اس کے کہ اُن کی توجہ صرف نئے گروپ شروع کرنے پر ہو ۔

چیلنجز

  • CPM کے راستے کو انتہائی مشکل بنا دیا گیا ہے اور اب اسے نئے شاگردوں کی بجائے ایمان میں راسخ مسیحی ہی چلا سکتے ہیں ۔
  • CPM کے راستے کے کچھ اہم حصے موجود نہیں ہیں یہ ابتدائی اور اہم ترین بنیادی عناصر اکثر نظر انداز  کر دیے جاتے ہیں ان کا ذکر اوپر دیئے گئے 6 عناصر میں موجود ہے ۔
  • گروپ کے محرکات کمزور ہیں، پیچھے دیکھنا ،اوپر دیکھنا ،آگے دیکھنا نہیں ہو رہا اور احتساب بھی کمزور ہے ۔
  • سلامتی کا فرزند نہیں مل رہا اور G1 کا آغاز نہیں ہو رہا ۔
  • مرقس 1: 17 کا حکم فوری طور پر گھنٹوں اور دنوں میں  سامنے نہیں لایا جا رہا – مسیح کے پیچھے چلو اور آدم گیر ی کرو۔
  • نمونہ دینے ،مدد کرنے، دیکھنے اور میدان میں جانے کے ماڈل کی تربیت نہیں دی جا رہی ۔
  • پہلی نسل میں خاندان اور دوستوں کے نیٹ ورک حاصل نہیں ہو رہے ۔

دوسری مشکل ترین رکاوٹ G2اورG3 کے چرچز کو درپیش ہوتی ہے ۔

حصہ دوم میں ہم اس چیلنج سے نمٹنے کے طریقے اور مرحلہ نمبر 3 سے 7 کے محرکات اور چیلنجوں پر بات کریں گے۔

Categories
حرکات کے بارے میں

ایک مشن ایجنسی کی تحریکوں کے ثمر آور اسلوب کی دریافت-حصہ دوم

ایک مشن ایجنسی کی تحریکوں کے ثمر آور اسلوب کی دریافت-حصہ دوم

By Doug Lucas –

In part 1 we shared how the Lord led our agency to transition into applying the core fruitful practices of disciple-making movements. Here is how God has led us through the transition and into much greater fruitfulness.

The Fruit

Exactly how does this DMM process unfold and what do we ask our team members to do daily? We teaching them how to move into a new area, learn the language and culture, pray a lot, and live in a “conspicuously spiritual” way, while meeting felt needs in the community.  Our workers seek to become disciples worth multiplying, anticipating that someone (seekers) will notice. We introduce these “open people” to stories about Jesus and His life. We might mention a passage in which Jesus teaches about honesty and explain that, for this reason, we’re returning a small amount of money that many would consider petty. Then we ask if the individual likes that idea. If the individual responds positively, we ask if the person would like to hear more teachings of Jesus. 

The people who say “yes” to these kinds of questions are of the utmost importance to us. They are what some trainers call “persons of peace,” harking back to Jesus’ words in Luke 10, when sending out the 72 disciples. Our workers start three-thirds groups with these interested parties. In those studies, our workers simply introduce a new story from Scripture, then ask questions such as, “What did you like about this passage? What seemed difficult? What does this passage teach us about God? What does this passage teach us about people? If we believe this passage is from God, how should we obey? Who are you going to share this passage with before we meet again? With whom will you tell God’s story or your own testimony?”

Those who are seeking will want to meet again. Those are the people in whom we want/need to invest our time. We repeat these processes until our new “people of peace” become believers, then disciples, then group leaders on their own. Using this simple approach, our workers expect to start groups which multiply. It works in the developing world, and it also is working in the USA.

In one field, our team worked for about 15 years to establish the first beachhead church. Then by introducing DMM principles, they multiplied into seven groups within the next 12 months. In another field (a Muslim land), the group struggled for 10 years with almost no fruit. Upon beginning to apply DMM principles, they had five new groups launched (and multiple baptisms) within the first year. In yet another field, our workers weren’t even sure how to begin for the first five years. Upon implementing simple DMM practices, in the next 17 months, they saw 112 groups begin with more than 750 individuals attending weekly. During those 17 months, 481 of those new followers were baptized, and many of those are already discipling others. 

Now, some years later, that field has seen groups multiply over 16 generations (the original group has had great-, great-, great-, great- [to the 16th generation] spiritual grandchildren). This movement has grown to the point that as of the end of 2017, 3,434 people meet in these groups. During May 2018, 316 people gave their lives to Christ and were baptized, bringing the total added in early 2018 to 1,254. Also during May 2018, 84 new groups sprang to life, making a total of 293 groups so far during 2018.

As a whole, our workers worldwide have seen a major increase in fruit since transitioning to DMM practices. (See accompanying graphs.) During 2018, God raised up 1,549 new simple churches, with 5,546 baptisms, and a combined attendance (as of the end of 2018) of 41,191 souls. God is at work through the 278 Team Expansion missionaries in some 40 countries.

The Transition

In years past, we’ve heard some horror stories about transitioning to DMM models from the traditional, “proclamational” (or attractional) approach. Some agencies like ours have reported that when they changed to DMM approaches, they lost 30 or 40% of their personnel. Apparently, some people don’t like to change. Thanks only to God above, we haven’t yet seen that kind of disenfranchisement. Here are some factors that might be helping us — but keep in mind [disclaimer], these are only guesses, and problems could arise at any time.

  • From our early roots, our organization has always treasured innovation. One of our seven Great Passions is, “Creative, strategic perseverance until the results are achieved.”
  • We had pushed “extraordinary prayer” from the outset as well. Our first publication was a prayer calendar for our first field. Garrison’s writing just sealed the deal even further. So when DMM practices came along, they seemed culturally appropriate because they were already part of our DNA.
  • It was hard to deny the fruit. First, we observed it in the case studies we saw and in the stories told by trainers. But then, a couple of our early-adopting teams experienced similar harvests. How could we argue with God’s blessing on their ministry?
  • Several of our senior leaders quickly embraced DMM practices. I, however, wasn’t among them. I wasn’t opposed. But I initially had trouble grasping it. The training seemed too “fuzzy.” It wasn’t until I broke it down into practical, bite-sized steps that I could see it as doable. (See the outcome at www.MoreDisciples.com)
  • We purposely decided not to rush people into this transition. We allowed them time – in fact, years. Once they saw fruit among their peers, it became easier for them to transition. 
  • Stories helped ease the jump. We changed names of people and places — but told plenty of illustrations to convey the reality. Some stories were good news, while others were sobering.
  • Senior leaders gently and humbly modeled the behavior for me (their president). But for complete alignment, I had to become personally involved. I couldn’t just teach it. I had to do it.

If your organization or church is considering transitioning to DMM principles, try one or more of these options:

  • Listen to the podcasts and read the blog entries at www.MoreDisciples.com
  • Take a “trial” group through the Zume training material at www.ZumeProject.com. (Both Zume and MoreDisciples are free of charge.) 
  • Read Stubborn Perseverance by James Nyman and Robby Butler.
  • Read T4T: A Discipleship Re-Revolution, by Steve Smith and Ying Kai.
  • Read Miraculous Movements: How Hundreds of Thousands of Muslims Are Falling in Love with Jesus by Jerry Trousdale. 
  • Read The Kingdom Unleashed: How Ordinary People Launch Disciple-Making Movements Around the World by Jerry Trousdale and Glenn Sunshine.

Don’t hesitate to contact Team Expansion for more updates on our journey — www.teamexpansion.org.

In 1978, God called Doug Lucas, a student in Bible college, to bring together a prayer meeting in a dorm room — and that prayer meeting became the genesis of Team Expansion. Since that time, Doug has served as both missionary (in Uruguay and later in the USSR/Ukraine) and Founder/President of this global organization (learn more at www.TeamExpansion.org). Based in Louisville, KY, Doug has a BA in Bible, an MA in Missions, an MBA, and a doctoral degree in Business Administration. In 1995, he created a weekly email/web newsletter www.Brigada.org  to provide resources, motivation, and trends in global missions. He’s passionate about multiplying disciples. Toward that end, he and a colleague have launched training websites at www.MoreDisciples.com and www.MissionsU.com.

Edited from the article “Discovering the Fruitful Practices of Movements,” originally published in the November-December 2017 issue of Mission Frontiers, www.missionfrontiers.org, pages 6-11, and published on pages 287-295 of the book 24:14 – A Testimony to All Peoples, available from 24:14 or Amazon.

Categories
حرکات کے بارے میں

ایک مشن ایجنسی کی تحریکوں کے ثمر آور اسلوب کی دریافت- حصہ اول

ایک مشن ایجنسی کی تحریکوں کے ثمر آور اسلوب کی دریافت- حصہ اول

ڈگ لوقس –

تعارف

ہماری مشنری تنظیم 1978 میں ایک عظیم مقصد کے تحت شروع کی گئی : نارساؤں کے درمیان کام کے لئے بہت سے مشنریوں کو بھیجنے کے لئے ۔ ڈاکٹر رالف ونٹر  جیسے محتاط دانشوروں کی وجہ سے 1990 میں ہم نے نارسا قوموں کے گروہوں پر توجہ مرکوز کرنا شروع کر دی ۔ ہمارا مقصد صرف بھیجے گئے  کارکنوں کا شمار رکھنا نہیں رہا  بلکہ اس کے علاوہ اُن لوگوں کی تعداد کا تعین کرنا بھی ہو گیا جنہیں سر گرم کرنے کے لئے اُن لوگوں کو بھیجا جا رہا تھا ۔ہم نے بڑی احتیاط کے ساتھ اپنے تمام کارکنوں کو مقامی زبان اور لوگوں کے ساتھ میل جول بڑھانے کی تربیت دی۔ ہم نے چرچز کے قیام پر زور دیا ہم نے اس توقع کے ساتھ دعا کی کہ جب کارکنوں کی ہر ٹیم لوگوں کے ساتھ سر گرم ہو جائے گی تو ان کارکنوں کو کسی نئے چرچ کی جماعت قائم کرنے کے لئے صرف ایک سال کے قریب کا عرصہ درکار ہو گا ۔ہمیں یہ بھی پوری توقع تھی کہ نئے راہنماؤں کی ایک مرکزی جماعت کی تربیت میں زیادہ عرصہ لگ سکتا ہے ۔

سال 2000 کے بعد کے عرصے میں ہم نے ڈاکٹر ڈیوڈ گیریزن جیسے محققین کے کہنے کے مطابق CPM کے لئے اہداف مقرر کرنے  شروع کئے ۔اپنی تنظیم کے اس تیسرے بدلتے ہوئے روپ میں  ہم نے دیکھا کہ کچھ چرچ محض اپنی جگہ پر محدود ہو کر رہ جاتے ہیں۔ اس کے برعکس اعمال کی کتاب میں ہم دیکھتے ہیں کہ شاگردوں نے  ہر علاقے یا ملک میں محض ایک نیا چرچ قائم کرنے سے بڑھ کر بہت کچھ کیا۔ خُدا نے اُن کی تعداد بڑھائی ۔اسی طرح ہم نے اپنے کارکنوں کو ترغیب دی کہ وہ ایسے چرچ قائم کریں جو آگے مزید چرچز قائم کرنے کے قابل ہوں۔ اب ہمارا ہدف محض اس بات کا تعین نہیں تھا کہ کتنے چرچز قائم ہوئے بلکہ یہ تھا  کہ اُن چرچز نے کتنے نئے چرچز قائم کیے ۔

سال 2010 تک ہمارے اندرایک قسم کا انقلاب آ چکا تھا ۔میں یقین سے نہیں کہہ سکتا کہ اُسے کیا نام دیا جائے لیکن اسے شاگرد سازی کی تحریک کی سوچ کہنا بہتر ہو گا۔ ابتدا میں یہ فرق کوئی اتنا بڑا نظر نہیں آتا ۔حقیقت یہ تھی کہ میرے لئے بھی یہ تصور ابتدا میں بہت دھندلا تھا لیکن جب ہم اس تصور کو سمجھ گئے تو اُس کا نتیجہ بہت شاندار نکلا۔ 

ثمر آور اسلوب

شاگرد سازی کے اسلوب کے بارے میں آپ کی رائے کچھ بھی ہو ،اس سوچ اور طریقے  کے نتیجے میں پیدا ہونے والی توانائی کو نظر انداز  کرنا ممکن نہیں ہے۔ ابتدائی تربیتی سیشنز میں  ہماری توجہ طریقۂ  کار اور حکمت عملی پر ہوتی تھی ۔ اس لئے شاگرد سازی کی تحریکوں کو ہمارا ذہن قبول نہیں کر رہا تھا ۔شاگرد سازی کی تحریکوں کے ایک تربیت کار سرجنٹ کر ٹس کے مطابق اسے چند لفظوں میں بیان کیا جا سکتا ہے –”ایسے شاگرد بنے جو آگے افزائش کرنے کے قابل ہوں “( کیا یہ ہی طریقہ یسوع کا بھی نہیں تھا ؟) ڈیوڈ گیریزن نے دعا کو چرچز کی تخم کاری کی تحریکوں کےبہت سے اہم عناصر میں سے اولین قرار دیا ہے، لیکن کسی وجہ سے ہمیں دعا کی غیر معمولی اہمیت سمجھنے میں 10 سال سے زیادہ عرصہ لگ گیا اور ہم اس کی بجائے اپنی ساخت اور مہمات پر ہی لگے رہے۔ دوسرے الفاظ میں دنیا بدلنے کے لئے ہمیں پہلے خود کو بدلنے کی ضرورت تھی ۔ہماری ابتدائی کاوشیں امریکی کاروباری اسالیب سے کافی زیادہ متاثر تھیں جن میں  حکمت عملی اور تزویراتی منصوبہ بندی شامل تھی۔اب یہ کچھ زیادہ ہی آسان دکھائی دیتا تھا کہ ہم ایک نئے کارکن سے کہیں کہ بس اُسے  صرف خُدا کی کہانی سُنانے کا جذبہ پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔ میرا خیال ہے کہ ہم سب یہ ہی چاہتے ہیں کہ ہمارا کام کسی نہ کسی حکمت عملی پر مبنی ہو ۔ شاید اس طرح ہماری کوششیں ذہانت پر مبنی دکھائی دیتی ہیں ۔ اس لئے کارکنوں کو صرف دعا پر ابھارنا اور تین بٹا تین گروپوں کی سہولت کاری کروانا  کچھ زیادہ ہی آسان لگتا تھا) گروپوں کے مشترکہ وقت میں تین سادہ سے عناصر شامل تھے : 

  1.  پیچھے مُڑ کر دیکھنا ، خُدا کی فرمانبرداری اور اُس کی بُلاہٹ پر خوشی منانا ۔
  2. اوپر دیکھنا -کہ خُدا نے اُن کے لئے کیا تیار کر رکھا ہے اور یہ دریافتی بائبل سٹڈی میں ہفتہ بہ ہفتہ ہوتا تھا ۔
  3. آگے دیکھنا -تاکہ خُد اکی فرمانبردای کا طریقہ جانا جائے ، سیکھا ہوا علم عمل کے ذریعے دوسروں کو دیا جائے اور دعا کے ذریعے اہداف مقررکئے جائیں۔ 

مشہور کتاب چرچ پلانٹنگ موومنٹز نے گیریزن کا بتایا  ہوا ایک اور طریقہ پہلوؤں سے بھی زیادہ مشکل تھا۔ عموماً ہم یہ کرتے  ہیں کہ جب نئے ایمانداروں کو ایذارسانی کا سامنا ہوتا ہے تو ہم انہیں منظر سے نکال دیتے ہیں۔ کچھ لوگ اسے خروج کا نام بھی دیتے ہیں۔ چاہے اسے کوئی بھی نام دیا جائے  یہ یقینا انسانی سوچ کا پہلا ردعمل ہوتا ہے۔ مسئلہ یہ ہے کہ جب ہم کسی سر گرم ایماندار کو اُس کے تناظر سے باہر کر دیتے ہیں تو  آگے بڑھنے کا سفر ر ک جاتا ہے ۔اس وجہ سے نہ صرف نیا ایماندار  اپنے گھر سے کٹ کر رہ جاتا ہے بلکہ اُس کے اندر کے جذبے کی آگ بھی ٹھنڈی ہو جاتی ہے ۔کسی وجہ سے ہم یہ نہ سمجھ سکے کہ خُد ااُن لوگوں کو برکت دیتا ہے جو ایذااُٹھاتے ہیں ۔اور اس کا نتیجہ بہت شاندار رہا ۔

فرمانبرداری اور احتساب کو تحریکوں کے اجرا کے لئے مرکزی عوامل کے طور پر اجاگر کرنا کچھ عجیب لگتا تھا ۔کیا ہم ابھی تک فرمانبرداری نہیں کرتے چلے آئے تھے ؟ ہاں لیکن ہم نے فرمانبرداری کو صرف یسوع کے بارے میں سوچنے تک محدود رکھا اور اُس طرف نہیں سوچا کہ اُس نے ہمیں کیا کرنے کو کہا ہے ۔ اس کا معیار صرف چرچ میں حاضری دینے تک تھا۔  لیکن یہ جاننا بہتر ہوتا ہے کہ کیا چرچ میں آنے والے یہ لوگ اپنے ایمان کے اظہار کے لئے واقعی کچھ کرتے ہیں کہ نہیں ۔ایک بار پھر کرٹس سارجنٹ کی بنیادی تعلیمات کے مطابق ، ” یسوع کے پیچھے چلنا فضل کی علامت ہے دوسروں کو یسوع کے ساتھ ایک تعلق میں لانا بڑی فضل کی بات ہے ایک نئی روحانی جماعت کی ابتدا کرنا اس سے بھی بڑا فضل ہے لیکن سب سے بڑا فضل دوسروں کو نئی روحانی جماعتوں کے آغاز کی تربیت دینا ہے “۔کچھ عشروں تک ہماری تنظیم نے لوگوں کو مسیح کے پاس لانے پر توجہ دی ۔پھر ہم نے انہیں بائبل کی تعلیمات کی تعلیم دینا شروع کی اور روحانیت کو محض تعلیمات سے آگاہ ہونے کے برابر جانا ۔لیکن یسوع یہ نہیں چاہتا کہ لوگ صرف تعلیمات حاصل کریں اُس نے انہیں بتایا کہ اگر انہیں اُس سے محبت ہے تو وہ اُس کے حکموں کی تعمیل کریں گے ۔ 

دریافتی تعلیم کا تصور سمجھنا مشکل ترین چیزوں میں  سے ایک ہے   ۔شاید یہ اس لئے بہت مشکل ہے کیونکہ اصل میں یہ انتہائی آسان ہے ناقدین کے خیال میں شاگرد سازی کی تحریکوں کے کارکن کلام کو انتہائی سادہ بیان کرتے ہیں، اور کیوں نہ ہو کہ نئے ایماندار یسوع کی کہانی سُننے سے پہلے گہری اور وسیع تربیت حاصل کریں ؟ لیکن حقیقت صدیوں سے ہماری آنکھوں میں آنکھیں گاڑے کھڑی تھی۔  یسوع نے جس شخص کو بدروح سے نجات دلائی، اُسے وہ کتنے عرصے سے جانتا تھا ، اس سے قبل کہ اُس نے اُسے اپنے لوگوں میں واپس بھیجا کہ وہ جا کر انہیں بتائے کہ خُداوند نے اُس کے لئے کیا کیا ہے ؟( مرقس 5: 1-20) شاید یہ عرصہ زیادہ سے ذیادہ آدھے دن کا تھا ۔ واہ کیا بات ہے ہم دراصل اس معاملے کو کچھ ضرورت سے زیادہ ہی سنجیدہ لے رہے تھے اور دیکھیے کہ مرقس کے باب نمبر 5 میں مذکور اس شخص نے دکپلُس کے اپنے آبائی علاقے کی تاریخ بدل دی ۔

یہ عناصر یقیناً بنیادی عناصر کہلائے جا سکتے ہیں ، فرمانبرداری کا عملی اظہار ، خُدا کی کہانی سُنانے کا جذبہ ، ایذارسانی کا شکار لوگوں کے لئے دعا ( لیکن انہیں فرار نہ کرانا )، فرمانبرداری اور دریافتی تعلیم۔ حقیقت یہ ہے کہ اس سارے کام میں 20 سے زیادہ گھنٹے نہیں  لگتے اور ایک ایسا شاگرد تیار ہو جاتا ہے جو آگے مزید شاگرد بنا سکتا ہے-  صرف 20 گھنٹے ۔

حصہ دوم میں ہم  اپنی تبدیلی کے عمل اور اِس کے زریعے خُدا    کے لائےپھل سے آپ کو آگاہ کریں گے۔

1978 میں خُدا نے ایک بائبل کالج کے طالبِ علم ڈگ لوُکس کو بُلایا کہ وہ  ایک ڈارم کے کمرے میں دُعائیہ میٹنگ منعقد کریں۔ اِس کے نتیجے میں ٹیم ایکسپینشن کا جنم ہُوا۔اُس وقت سے ڈگ ایک مشنری (یوراگوئے اور بعد ازاں روُس/یوکرائن میں) اور اِس عالمی تنظیم کے بانی اور صدر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔(  مزید جانئےwww.TeamExpansion.org )      ۔ لوُیس ویل سے تعلُق رکھنے والے ڈگ بائبل میں بی اے،  مشنز میں ایم اے، ایم بی اے اور بزنس ایڈمنسٹریشن میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری کے حامل ہیں۔  1995 میں اُنہوں نےعالمی مشنز کے وسائل، تحریک اور رُجحانات سے آگاہی کے لئے ایک ہفتہ وار ایمیل/نیوز لیٹر           www.Brigada.org    

جاری کیا۔ وہ شاگردوں کی افزائش کا بھر پُور جذبہ رکھتے ہیں اور اِس مقصد کے لئے اُنہوں نے ایک ساتھی کار کُن کے ساتھ مِل کر     یہ تربیتی ویب سائٹس بھی جاری کی ہیں:

www.MoreDisciples.com اور www.MissionsU.com.

یہ اقتباس  ایک مضمون                                            “Discovering the Fruitful Practices of Movements,” سے لیا گیا ہے جو مشن فرنئٹیر  ز کے نومبر-دسمبر  2017 کے شمارے کے صفحات نمبر 6سے 11 پر شائع ہوا ،    www.missionfronters.org۔  یہ مضموُن  ابتدائی طور پر  24:14 – A Testimony to All Peoples  میں صفحات 287- 291  پر شائع ہوا اور 24:14  اور Amazon    پر بھی دستیاب ہے۔

Categories
حرکات کے بارے میں

افریقہ کی ایک تحریک میں موجودہ چرچزکا کردار

افریقہ کی ایک تحریک میں موجودہ چرچزکا کردار

شالوم –

موجودہ مقامی چرچز شاگرد سازی کی تحریک میں  ایک اہم کردار اداکرتے ہیں۔ اپنی منسٹری کی ابتدا سے ہی ہم نے اس اصول کو اپنا لیا کہ منسٹری میں ہم جو کچھ بھی کریں، ہم اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ چرچ سر گرم طور پر بادشاہی کی منادی کی منسٹری میں شامل ہو۔ اکثر اوقات لوگ سوچتے ہیں ، ” اگر ایک چرچ روایتی نہ ہو تو موجودہ چرچز اُسے قبول نہیں کریں گے ” ۔لیکن میرا خیال ہے کہ اس میں کلیدی عنصر تعلق ہے۔ ہم چرچ کے راہنماؤں تک ہر سطح پر رسائی کرتے ہیں اور ایک عظیم مقصد سے انہیں آگاہ کرتے ہیں: ارشاداعظم ۔ یہ کسی بھی مقامی چرچ کسی بھی علاقائی وابستگی یا کسی بھی تناظر سے بڑھ کر ہے ۔اگر ہم محبت ، تعلق اور بادشاہی کے پُر خلوص تصور کے  جذبے  کے ساتھ اُنہیں آگاہ کریں تو ہم دیکھتے ہیں کہ چرچز ہماری بات سُنتے ہیں ۔

ایک علاقے میں ہمارے پاس 108 مقامی گروپوں کے ساتھ رسمی شراکتیں موجود ہیں۔ اُن میں سے کچھ مقامی چرچز ہیں اور کچھ علاقائی منسٹریاں ہیں۔ ابتداسے ہی ہم نے اُن کے ساتھ غیر رسمی گفتگو کے ذریعے رابطہ کیا ۔ہم نے ارشاداعظم کی ذمہ داری کے بارے میں بات کی اور اُس کے بعدپھر ہم چرچ کے ذمہ دار لوگوں کے ساتھ رسمی گفتگو کرنے لگے۔ اگر وہ کھُلے ذہن کے ہوں تو ہم ابتدا ئی طور پر اُن کے لئے تربیت کا انتظام کرتے ہیں، جو کہ 2 سے 5 دن کی ہوتی ہے۔ ہم پوری کوشش کرتے ہیں کہ وہ مناسب لوگوں کو دعوت دیں ۔ ہم چاہتے ہیں کہ 20 فیصد لوگوں کا تعلق راہنماؤں سے ہو اور 80 فیصد لوگ سر گرم کارکن ہوں ۔یہ تناسب بہت اہم ہے۔ اگر ہم صرف راہنماؤں کو تربیت کریں تو عموما وہ  اتنے مصروف ہوتے ہیں  کہ پُر خلوص ارادہ رکھتے ہوئے بھی  انہیں سیکھی ہوئی چیزوں پر عمل کرنے کا وقت نہیں ملتا۔ اگر ہم صرف فیلڈ کے راہنماؤں یا چرچ قائم کرنے والوں کو تربیت دیں پھر بھی عملی طور پر اطلاق مشکل ہو گا کیو نکہ چرچ کے راہنما نہیں سمجھ سکیں گے کہ کیا کرنے کی ضرورت ہے ۔اس لئے ہم اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ فیصلہ ساز اور سر گرم  کارکنان، دونوں کی بیک وقت تربیت کی جائے ۔

سب سے پہلے ہم دلی معاملات پر توجہ دیتے ہیں۔ ہم ارشاد اعظم ، نا مکمل ذمہ داری اور چیلنج کے بارےمیں بات کرتے ہیں۔ پھر ہم مواقع اور ارشاداعظم کےتکمیل کے طریقے پر بات کرتے ہیں  ۔یہیں پر شاگرد سازی کے تحریکوں  کی حکمت عملی سامنے آتی ہے ۔ آخری سوال یہ ہوتا ہے کہ” ہم مل کر اس بارے میں کیا کریں گے ؟ ” 

تربیت دینے کے بعد ہم ہمیشہ اُس کی جائزہ  کاری  کرتے ہیں اور اس عمل میں فیصلہ سازوں کو شریک کرتے ہیں۔ چرچ کے ساتھ مل کر محض ایک تربیتی سیشن ہی ہمارا حتمی مقصد نہیں ہوتا۔ ہم اُن کے ساتھ ایک لمبے سفر پر چلنا چاہتے ہیں ۔ہم اپنے سامنے ایک مقصد رکھتے ہیں  کہ اُن کے اندر شعلہ جلایا جائے، انہیں تیز رفتاری دی جائے اور شاگرد سازی کی تحریکوں کو تسلسل دیا جائے۔  ہم شعلہ جلانےکے بعد بھی ر ُک نہیں جاتے۔ ہم انہیں تیز رفتاری اور تسلسل دیتے رہتے ہیں۔

تربیتوں کے بعد ہمارے حکمت عملی کے کوارڈینیٹر اوربنیادی تربیت کے کوارڈینیٹر جائزہ کاری کرتے ہیں۔  ہر تربیت کے بعد ایک ایکشن پلان مرتب کیا جاتا ہے۔ تربیت حاصل کرنے والے ہر فرد کے ساتھ ساتھ چرچ اور ہماری منسٹری کو بھی اس ایکشن پلان کی ایک کاپی دی جاتی ہے۔ اس پلان میں چرچ کے رابطے کے فرد کا نام اور فون نمبر موجود ہوتا ہے۔ پھر اُس کے بعد ہمارے راہنما فون پر رابطے کے ذریعے جائزہ کاری کرتے ہیں۔ یہ جائزہ وہ تربیت میں شامل ہونے والے شُرکا اور چرچ کے رابطے کے افراد سے معلومات حاصل کر کے مرتب کرتے ہیں۔ پھر 3 ماہ بعد ہم جائزہ کاری کے لئے ایک رسمی دعوت دیتے ہیں اور جانتے ہیں کہ ہمارے پلان پر عمل درآمد کے سلسلے پر کیا کچھ ہوا ۔

اُس کے بعد ہم منسٹری کے کام میں آگے بڑھتے ہوئے لوگوں کے ساتھ سلسلے جاری رکھتے ہیں۔ ہم تعلقات سازی کو یقینی بناتے ہیں اور تربیت ، کوچنگ اور راہنمائی فراہم کرتے رہتے ہیں ۔ہم اُن کا رابطہ اُس علاقے میں اپنے فیلڈ کے کارکنوں سے کراتے ہیں تاکہ اُن کی حوصلہ افزائی کے لئے ایک نیٹ ورک موجود ہو ۔پھر ایسے افراد کو جو ایک خاص حد تک صلاحیت ظاہر کرتے ہیں  ، ہم حکمت عملی کے کوارڈینیٹر اُس علاقے کے لئے مقرر کردیتے ہیں  ۔

جب اُن میں سے کچھ لوگ پلان کا اطلاق کرنے لگتے ہیں تو اُن کی رپورٹ فیلڈ سے ہوتی ہوئی اُن کے چرچ تک جاتی ہے۔ چرچ کو اُس کی تصدیق کرنا ہوتی ہے۔ ہم چرچ کو نظر انداز نہیں کرنا چاہتے ۔ ہم چاہتے ہیں کہ چرچ منسٹری کی کاروائی میں شریک ہو۔ اس سے چرچ کو ملکیت کا احساس ہوتا ہے اور رشتوں میں مضبوطی پیدا ہوتی ہے ۔ 

ہم ہمیشہ اس بات کو یقینی بناتے ہیں  کہ تمام پیش رفت سے چرچ کے راہنماؤں کو آگاہ کیا جاتا رہے۔  کچھ نارسا گروپوں تک پہنچنا بہت حساس معاملہ ہوتا ہے ۔ایسے علاقوں میں  عین ممکن ہے کہ چرچ تحریک کی پیش رفت میں براہِ راست  شامل نہ ہونا چاہے۔ لیکن پھر بھی چرچ منسٹری کے لئے دعا کرتا ہے اور مناسب طریقوں سے مدد بھی کرتا ہے۔ چرچ نئے چرچز کے قیام میں بھی مدد دیتا ہے اور عبادت کے وہ طریقے سکھاتا ہے جو نئے ایمانداروں کی تہذیبی روایات سے مناسبت رکھتے ہیں ۔

اس عمل میں ہم موجودہ چرچز کے پہلے سے موجود منسٹری کے طریقوں کو چیلنج نہیں  کرنا چاہتے، کیو نکہ اس طرح وہ خطرے کی زد میں نظر آنے لگتے ہیں ۔موجودہ چرچ اپنے روایتی  طریقے پر چلتا رہتا ہے ۔ہمارے مشن کی ترجیح نارساؤں تک رسائی ہے ہمارے طریقۂ          کار کی تبدیلی کا ہدف نارسا لوگ ہیں۔ سو ہم چرچ  کو نارساؤں تک پہنچنے کا چیلنج دے کر تربیت اور وسائل فراہم کرتے ہیں ۔ہم واضح طور پر بتاتے ہیں کہ چرچ کے عمومی طریقہ ٔ            کار نارسا لوگوں کو سر گرم کرنے میں ناکام ثابت ہوں گے۔ ہم چاہتے ہیں  کہ وہ بھی تحریکوں کی سوچ اپنائیں اور اسی طریقہ کار کے ذریعے نارسا لوگوں تک پہنچیں ۔

اکثر اوقات یہ نئی سوچ پورے چرچ کی تبدیلی  کا باعث بن جاتی ہے۔ چرچ کے کچھ راہنما بھی سر گرم کارکن اور تحریکوں کے راہنما  بن جاتے ہیں۔ سو کبھی کبھی یہ نئی سوچ مقامی چرچز کو براہِ راست متاثر کر دیتی ہے۔ لیکن یہ ایک ضمنی نتیجہ ہے اور ہمارا بنیادی ہدف نہیں ہے۔ 

موجودہ چرچز کے ساتھ شراکت کاری ایک اہم عنصر ہے جس نے ہمیں شاگرد سازی کی تحریکوں کو تیزرفتار بنانے میں مدد دی ہے۔ ہم سب کا تعلق انہی چرچز سے ہی ہے اور ہمارا مقصد دیگر چرچز کو متاثر کرنا اور نئے چرچز کی ابتدا کرنا ہے۔ سو ہم خُداوند کی تمجید کرتے ہیں کہ وہ موجود چرچز میں حاضر ہے اور اُن کے ذریعے کام کرتے ہوئے نارسا قوموں کے درمیان نئے چرچز کے قیام کی تحریکیں چلا رہا ہے   ۔

شالوم (عرفیت) افریقا میں تحریکوں کے ایک رہنُما ہیں جو گذشتہ 24 سال سے بین التہذیبی منادی میں مشغول ہیں۔ اُن کا دِلی جذبہ ہے کہ وہ افریقا اور اُس سے باہر نا رسا  گروہوں میں شاگرد سازی کی تحریکوں کو اُبھرتا، رفتار پکڑتا اور تسلسل پاتا دیکھیں۔

یہ مضموُن  ابتدائی طور پر  24:14 – A Testimony to All Peoples  میں صفحات 263- 266  پر شائع ہوا اور 24:14  اور Amazon    پر بھی دستیاب ہے۔

Categories
حرکات کے بارے میں

شاگردسازی کی تحریکوں کے خواص رکھنے والےمُختصر گروپ۔حصہ دوم

شاگردسازی کی تحریکوں کے خواص رکھنے والےمُختصر گروپ۔حصہ دوم

– پال واٹسن  –

حصہ اول میں ہم   نےافزائش پانے والے اور قابلِ افزائش چرچز میں بدل  جانے والے گروپوں کے چار  خواص پر بات کی تھی۔ بقیہ لازمی خواص یہ ہیں۔

فرمانبرداری 

جیسا کہ میں نے پہلے کہا کہ فرمانبرداری شاگرد سازی کی تحریکوں کا ایک لازمی عنصر ہے ۔ چھوٹے سے چھوٹے گروپوں،حتیٰ کہ  کھوئے ہوئے لوگوں کے گروپوں میں بھی فرمانبرداری ہونا لازمی ہے ۔ وضاحت کے لئے آپ کو بتا دوں کہ ہم کھوئے ہوئے لوگوں کی جانب دیکھ کر اور انگلی اُٹھا کر یہ نہیں کہتے ،” آپ پر لازم ہے کہ کلام کے ان الفاظ کی پوری طرح تعمیل کریں ” اس کی بجائے ہم پوچھتے ہیں ،” اگر آپ یقین رکھتے ہیں کہ یہ خُدا کے الفاظ ہیں  تو آپ ان الفاظ کو اپنی زندگیاں بدلنے کے لئے کیسے استعمال کریں گے ؟” یا درکھیے کہ وہ ابھی تک خُدا پر ایمان نہیں لائے اس لئے ” اگر ” کا لفظ بالکل قابلِ قبول ہے۔

جب وہ مسیح کے پیچھے چلنے کا فیصلہ کر لیتے ہیں تو آپ اس سوال میں تھوڑی سی تبدیلی لاتے ہیں ، ” چونکہ آپ کا ایمان ہے کہ یہ خُدا کے الفاظ ہیں ، تو آپ اپنی زندگی میں تبدیلی لانے کے لئےانہیں  کیسے استعمال کریں گے ؟”  چونکہ وہ ابتدا سے ہی یہ سوال پوچھ رہے ہوتے ہیں ،اس لئے نئے ایمانداروں کو خُدا کے کلام کی تعمیل میں کوئی مشکل پیش نہیں آئے گی نہ ہی انہیں یہ سمجھنے میں مشکل پیش آئے گی کہ خُدا کا کلام اُن سے کیا چاہتا ہے اور خُدا کاکلام ان سے کیا کچھ بدلنے کا تقاضا کرتا ہے ۔

احتساب 

گروپ کی خصوصیات میں احتساب کی شمولیت کا آغاز دوسری میٹنگ سے ہو جاتا ہے ۔گروپ کی طرف دیکھیے اور پوچھیں  ، ” آپ لوگوں نے کہا تھا کہ آپ اس ہفتے فلاں کام کرنےمیں مدد دیں گے۔ یہ سب کیسا رہا ؟” یہ بھی پوچھیں ،” آپ میں  سے بہت سے لوگوں نے اپنی زندگی کے اُن پہلوؤں کی نشاندہی کی تھی جنہیں آپ تبدیل کرنا چاہتے تھے۔ کیا آپ نے انہیں تبدیل کیا ؟ تبدیلی کا یہ عمل کیسارہا ؟” اگر انہوں نے اس سلسلے میں کچھ بھی نہ کیا ہو تو اُن کی حوصلہ افزائی کیجیے کہ اس مرتبہ وہ ایسا کرنے کی کوشش  کریں اور اگلی ملاقات میں اس بارے میں  آپ کو آگاہ کریں۔ اس بات پر زور دیجیے  کہ پورے گروپ کے لئے یہ بات انتہائی ضروری ہے کہ ہم مل کر ایک دوسرے کی کامیابیوں پر خوشی منائیں ۔

ابتدامیں سب اس پر حیرت زدہ ہوں گے۔  وہ اس کی توقع نہیں کر رہے ہوتے۔ تاہم دوسری ملاقات میں بہت سے لوگ تیار ہو جائیں گے۔ تیسری ملاقات کے بعد ہر ایک یہ جان لے گا کہ آگے کیا ہونا ہے اور اُس کے لئے تیار رہے گا ۔ یقینا یہ عمل اُس وقت بھی جاری رہے گا جب سب لوگ بپتسمہ پا چکے ہوں گے ۔

عبادت 

آپ بھٹکے ہوئے لوگوں سے اُس خُدا کی عبادت کرنے  کا نہیں کہہ سکتے جس پر وہ ایمان نہیں رکھتے۔ نہ ہی آپ کو چاہیے کہ آپ انہیں جھوٹے انداز میں وہ گیت گانے پر مجبور کریں  جن پر وہ ایمان نہیں رکھتے ۔لیکن اس کے باوجود گروپ کی خصوصیات میں عبادت کا عنصر قائم کرنا اور عبادت کا بیج بونا ممکن  ہے ۔

جب وہ اُن چیزوں کے بارے میں  بات کرتے ہیں جن کے لئے وہ شکر گزار ہیں، تو یہ عبادت کا ایک انداز بن جاتا ہے جب وہ کلام سُننے کے جواب میں اپنی زندگیوں میں تبدیلیاں لاتے ہیں  تو یہ بھی عبادت کا ہی ایک انداز ہے  ۔جب وہ اپنے معاشروں میں  لانے والی تبدیلیوں  پر خوشی منا رہے ہوتے ہیں ، تو یہ بھی عبادت بن جاتی ہے ۔ 

حمد وثنا اور عبادت کے گیت عبادت کا لازمی حصہ نہیں ہیں ۔عبادت تو خُدا کے ساتھ ایک تعلق کا نام ہے۔ خُدا کی حمد وثنا کے لئے گیت گانا خُدا کے ساتھ ہمارے تعلق سے حاصل ہونے والی خوشی کا اظہار ہے ۔ یقیناً بالآخر وہ حمد وثنا کے گیت گانے لگیں گے  ۔ تاہم عبادت کی خصوصیت گیت گانے سے بہت پہلے ہی گروپوں میں  قائم کرنا بہت لازمی ہے ۔



خُدا کا کلام 

خُدا کا کلام گروپوں کی میٹنگ کا مرکزی حصہ ہے۔ گروپ میں  شامل لوگ کلام پڑھتے ہیں اُس پر بات چیت کرتے ہیں ،ایک دوسرے کے ساتھ مل کر کلام کے اقتباسات یاد کرتے ہیں اور کلام پر عمل کے لئے حوصلہ افزائی پاتے ہیں ۔ کلام کسی بھی استاد کے مقابلے میں ثانوی حیثیت نہیں رکھتا ۔کلام سب سے بڑا استاد ہے ۔اس پر ہم گروپوں کی خصوصیات اور لازمی عناصر کے اگلے حصے میں  مزید بات کریں گے ۔

دریافت

بھٹکے ہوئے لوگوں کے ساتھ کام کرتے ہوئے ہمیں کوشش کرنی چاہیے کہ ہم کلام کی وضاحت سے گریز کریں۔ اگر ہم ایسا کریں گے تو ایسا دکھائی دے گا کہ ہم استاد  اور اختیار کے حامل ہیں  ۔اور یوں ہمارے بغیر کلام کا پھیلاؤاور تقلید مشکل ہو جائے گی ۔اس کے نتیجے میں مزید گروپ تشکیل نہیں پا سکیں گے اور نہ ہی اُن کے نتیجے میں مزید گروپوں کی افزایش ہو گی

 یہ کافی مشکل کام ہے۔ ہمیں تعلیم دینا بہت اچھا لگتا ہے۔ ہم سوالوں کے جواب جانتے ہیں اور ہم دوسروں کو تعلیم دینا پسند کرتے ہیں۔  لیکن اگر ہم چاہتے ہیں کہ ہم ایسے شاگرد تخلیق کریں جو اپنے سوالوں کے جوابوں کے لئے  کلام اور روح القدس کی جانب دیکھیں، تو پھر ہمیں اس کردار کو چھوڑنا ہو گا ۔ ہمیں بس اُن کی مددکرنی ہے کہ وہ خود یہ دریافت کریں کہ خُدا اپنے کلام کے ذریعے اُن سے کیا کہتا ہے ۔

اس تصور کو مزید مستحکم کرنے کے لئے ہم باہر سے آ کر گروپوں کی ابتدا کرنے والے لوگوں کو ” سہولت کار “کہتے ہیں۔  وہ تعلیم نہیں دیتے بلکہ سہولت کاری کرتے ہیں۔ اُن کا کام ایسے سوالات پوچھنا ہے جن کے نتیجے میں  بھٹکے ہوئے لوگ کلام کا مطالعہ کرنے لگیں ۔کوئی ایک اقتباس پڑھنے کے بعد وہ پوچھتے ہیں  ،”  یہ الفاظ خُدا کے بارے میں  کیا بتاتے ہیں ؟” اور ،” یہ الفاظ انسانوں یا انسانیت کے بارے میں ہمیں کیا بتاتے ہیں ؟”اور ،” اگر آپ کو یقین ہے  کہ یہ خُدا کے الفاظ ہیں تو آپ اپنی زندگیاں تبدیل کرنے کے لئے کیا کریں گے ؟” دریافت کا عمل تقلید اور افزائش کے لئے انتہائی ضروری ہے ۔اگر گروپ خود ہی کلام  میں سے روح القدس پر انحصار کر کے جواب تلاش نہیں  کریں گے ، تو وہ توقعات کے مطابق  ترقی نہیں  کریں گے ۔اور عین ممکن ہے کہ اُن کی افزائش بالکل ہی نہ ہو سکے ۔

گروپ کی اصلاح 

ہمارے گروپوں  کے  زیادہ  ترراہنمااور چرچز کے راہنما کسی ادارے میں بائبل کی تربیت کے حامل نہیں ہیں۔ جب لوگ یہ سُنتے ہیں تو کہتے  ہیں کہ کیا اس میں  بدعت کا امکان نہیں ہے ؟ آپ ان گروپوں کو غلط راہ پر چلنے سے کیسے روک سکتے ہیں ؟ یہ بہت اہم سوالات ہیں ۔اور راہنماؤں کی حیثیت سے ہمیں  یہ سوالات پوچھنے بھی چاہیٔیں ۔

پہلی بات یہ ہے کہ ابتدا میں تمام گروپوں میں بدعت کی جانب چلے جانے کا رجحان ہوتا ہے ۔وہ خُدا کے کلام کے علاوہ کچھ زیادہ نہیں  جانتے۔ وہ خُدا کو دریافت کرنے کے عمل سے گزر رہے ہوتے ہیں جو انہیں فرمانبرداری در فرمانبرداری کی طرف لے جاتا ہے ۔لیکن ابتدا سےہی یہ ممکن نہیں ہوتا کہ وہ سب کچھ جان لیں ۔ جب گروپ مزید کلام پڑھتے چلے جاتے ہیں تو وہ یہ بہتر طور جاننے لگتے ہیں کہ خُدا اُن سے کیا چاہتا ہے۔ سوا س طرح بدعت اور بھٹکنے کے امکانات بھی کم ہو جاتے ہیں ۔یہ شاگرد سازی کا حصہ ہے ۔

اگر ہم یہ دیکھیں کہ وہ کلام سے بہت ہی دور جا بھٹکے ہیں ،تو ہم فوری طور پر ایک نیا اقتباس متعارف کرواتے ہیں  اور اُس اقتباس پر انہیں دریافتی بائبل سٹڈی کے عمل سے گزارتے ہیں۔ ( یاد رہے کہ میں نے سکھانے یا اصلاح کرنے کے الفاظ استعمال نہیں کیے ۔ اصلاح کرنے کے لئے روح القدس خود ہی  کلام کا استعمال کرے گا۔انہیں صرف کلام کے درست حصے کی جانب راہنمائی کی ضرورت ہو گی) اضافی مطالعہ کر لینے کے بعد وہ جان جاتے ہیں کہ انہیں کیا کرنا ہے۔ اہم بات یہ  ہے کہ وہ کرتے بھی ہیں ۔

دوسری بات یہ، کہ بدعت کی ابتدا عموما ًزیادہ متاثر کُن راہنماؤں سے ہوتی ہے جو کچھ   حد تک تربیت یافتہ ہوتے ہیں  اور گروپ کو سکھاتے ہیں  کہ بائبل کیا کہتی ہے، اور انہیں اُس کی تعمیل کے لئے کیا کرنا ہے ۔ایسی صورت حال میں  گروپ راہنما کی تعلیمات قبول کر کے اُن پر عمل شروع کرتا ہے اور خود سے کبھی بھی کلام کے حوالہ جات دیکھنے کی زحمت  نہیں کرتا  ۔

تمام گروپوں  کو یہ سکھاتے ہیں کہ وہ کلام پڑھیں۔ پھر ہم یہ جاننے کی کوشش کرتے ہیں کہ گروپ کا ہر رکن اُس پر کیا ردِعمل دیتا ہے گروپوں کو ایک آسان سا سوال کرنا سکھایا جاتا ہے ۔ ، ” کلام کے اس حوالے میں آپ کیا دیکھتے ہیں؟” جب کو ئی فرمانبرداری  کے تصور پر مبنی کوئی عجیب سی بات کہتا ہے تو گروپ یہ ہی سوال پوچھتا ہے۔ جب کوئی کلام کے اس حوالے میں اپنی جانب سے کوئی تفصیلات شامل کرتا ہے تو گروپ یہ ہی سوال پوچھتا ہے ۔اس سوال کے نتیجے میں گروپ کے تمام ارکان  صرف اُسی حوالے پر اپنی توجہ مرکوز کرتے ہیں اور اپنے تاثرات اور فرمانبرداری کے تصور سے دوسروں کو آگاہ کرتے ہیں ۔

سہولت کار گروہی اصلاح کا نمونہ پیش کرتا ہے ۔سہولت کار کاکا م یہ بھی ہے کہ وہ نظروں  کے سامنے موجود حوالے پر توجہ مرکوز کئے رکھنے کو ممکن بنائے ۔

ایمانداروں کی کہانت 

نئے ایمان داروں اور ایسے لوگوں کو جو ابھی تک ایمان میں نہیں آئے، یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ اُن کے اور مسیح کے درمیان کوئی اور تیسرا شخص موجود نہیں ہے ۔ ہماری کوشش ہونی چاہیے کہ ہم وہ تما م رکاوٹیں دور کریں۔ اسی وجہ سے کلام ہی سب سے اہم سمجھا جانا چاہیے ۔اسی وجہ سے باہر سے آنے والے تعلیم دینے کی بجائے محض سہولت کاری کرتے ہیں۔  یہ ہی وجہ ہے کہ گروپوں کو یہ سکھایا جاتا ہے کہ وہ کلام پر عمل کرتے ہوئے خود اپنی اصلاح کریں ۔

جی ہاں، راہنما ضرور ابھر کر سامنے آئیں گے۔  ایسا ہونا قدرتی سی بات ہے۔ لیکن راہنمائی  محض اُن کے کردار کی بنیاد پر راہنمائی کہلاتی ہے ۔راہنما کسی بھی طرح روحانی طور پر یا طبقاتی نُکتۂ نظر سے  کوئی مختلف یا بلند تر طبقہ نہیں  ہے۔ ہاں یہ ضرور ہے   کہ اُن کا احتساب اعلیٰ سطح پر ہوتا ہے ۔ لیکن یہ احتساب کسی بھی طور انہیں بلند تر درجہ عطا نہیں کرتا ۔

اگر ایمان داروں میں کہانت کا عنصر موجود نہ ہو تو آپ  ایک چرچ تخلیق نہیں کر سکیں گے اس لئے شاگرد سازی کے عمل میں اس مخصوص عنصر اور خصوصیت کو شامل کیا جانا ضروری ہے ۔

گروپوں کی میٹنگز میں ان لازمی عناصر ااور عوامل کو استعمال کرتے ہوئے ہم نے دیکھا ہے کہ بھٹکے ہوئے لوگ  یسوع کے فرمانبردار شاگرد بنتے ہیں جو جا کر نئے شاگرد بناتے ہیں اور نئے گروپوں کی تشکیل کرتے ہیں جو بعدازاں  چرچز بن جاتے ہیں ۔ 

    پال نے امریکہ اور کینیڈا میں شاگرد سازوں کی جماعت اور شاگرد سازی کے اصولوں کے اطلاق کے لئے کانٹیجٔس ڈیسا یٔپل میکنگ (www.contagiousdisciplemaking.com) کی بُنیاد رکھی۔  وہ World Christian Movement میں پرسپیکٹوز کے  باقاعدہ تربیت کار ہیں اور اُنہوں نے اپنے والد، ڈیوڈ واٹسن کے ساتھ مِل کر          Contagious Disciple Making: Leading Others on a Spiritual Journey of Discovery نامی کتاب بھی تحریر کی ہے۔

Categories
حرکات کے بارے میں

شاگردسازی کی تحریکوں کے خواص رکھنے والےمُختصر گروپ۔حصہ دوم

شاگردسازی کی تحریکوں کے خواص رکھنے والےمُختصر گروپ۔حصہ دوم

پال واٹسن –

حصہ اول میں ہم   نےافزائش پانے والے اور قابلِ افزائش چرچز میں بدل  جانے والے گروپوں کے چار  خواص پر بات کی تھی۔ بقیہ لازمی خواص یہ ہیں۔

فرمانبرداری 

جیسا کہ میں نے پہلے کہا کہ فرمانبرداری شاگرد سازی کی تحریکوں کا ایک لازمی عنصر ہے ۔ چھوٹے سے چھوٹے گروپوں،حتیٰ کہ  کھوئے ہوئے لوگوں کے گروپوں میں بھی فرمانبرداری ہونا لازمی ہے ۔ وضاحت کے لئے آپ کو بتا دوں کہ ہم کھوئے ہوئے لوگوں کی جانب دیکھ کر اور انگلی اُٹھا کر یہ نہیں کہتے ،” آپ پر لازم ہے کہ کلام کے ان الفاظ کی پوری طرح تعمیل کریں ” اس کی بجائے ہم پوچھتے ہیں ،” اگر آپ یقین رکھتے ہیں کہ یہ خُدا کے الفاظ ہیں  تو آپ ان الفاظ کو اپنی زندگیاں بدلنے کے لئے کیسے استعمال کریں گے ؟” یا درکھیے کہ وہ ابھی تک خُدا پر ایمان نہیں لائے اس لئے ” اگر ” کا لفظ بالکل قابلِ قبول ہے۔

جب وہ مسیح کے پیچھے چلنے کا فیصلہ کر لیتے ہیں تو آپ اس سوال میں تھوڑی سی تبدیلی لاتے ہیں ، ” چونکہ آپ کا ایمان ہے کہ یہ خُدا کے الفاظ ہیں ، تو آپ اپنی زندگی میں تبدیلی لانے کے لئےانہیں  کیسے استعمال کریں گے ؟”  چونکہ وہ ابتدا سے ہی یہ سوال پوچھ رہے ہوتے ہیں ،اس لئے نئے ایمانداروں کو خُدا کے کلام کی تعمیل میں کوئی مشکل پیش نہیں آئے گی نہ ہی انہیں یہ سمجھنے میں مشکل پیش آئے گی کہ خُدا کا کلام اُن سے کیا چاہتا ہے اور خُدا کاکلام ان سے کیا کچھ بدلنے کا تقاضا کرتا ہے ۔

احتساب 

گروپ کی خصوصیات میں احتساب کی شمولیت کا آغاز دوسری میٹنگ سے ہو جاتا ہے ۔گروپ کی طرف دیکھیے اور پوچھیں  ، ” آپ لوگوں نے کہا تھا کہ آپ اس ہفتے فلاں کام کرنےمیں مدد دیں گے۔ یہ سب کیسا رہا ؟” یہ بھی پوچھیں ،” آپ میں  سے بہت سے لوگوں نے اپنی زندگی کے اُن پہلوؤں کی نشاندہی کی تھی جنہیں آپ تبدیل کرنا چاہتے تھے۔ کیا آپ نے انہیں تبدیل کیا ؟ تبدیلی کا یہ عمل کیسارہا ؟” اگر انہوں نے اس سلسلے میں کچھ بھی نہ کیا ہو تو اُن کی حوصلہ افزائی کیجیے کہ اس مرتبہ وہ ایسا کرنے کی کوشش  کریں اور اگلی ملاقات میں اس بارے میں  آپ کو آگاہ کریں۔ اس بات پر زور دیجیے  کہ پورے گروپ کے لئے یہ بات انتہائی ضروری ہے کہ ہم مل کر ایک دوسرے کی کامیابیوں پر خوشی منائیں ۔

ابتدامیں سب اس پر حیرت زدہ ہوں گے۔  وہ اس کی توقع نہیں کر رہے ہوتے۔ تاہم دوسری ملاقات میں بہت سے لوگ تیار ہو جائیں گے۔ تیسری ملاقات کے بعد ہر ایک یہ جان لے گا کہ آگے کیا ہونا ہے اور اُس کے لئے تیار رہے گا ۔ یقینا یہ عمل اُس وقت بھی جاری رہے گا جب سب لوگ بپتسمہ پا چکے ہوں گے ۔

عبادت 

آپ بھٹکے ہوئے لوگوں سے اُس خُدا کی عبادت کرنے  کا نہیں کہہ سکتے جس پر وہ ایمان نہیں رکھتے۔ نہ ہی آپ کو چاہیے کہ آپ انہیں جھوٹے انداز میں وہ گیت گانے پر مجبور کریں  جن پر وہ ایمان نہیں رکھتے ۔لیکن اس کے باوجود گروپ کی خصوصیات میں عبادت کا عنصر قائم کرنا اور عبادت کا بیج بونا ممکن  ہے ۔

جب وہ اُن چیزوں کے بارے میں  بات کرتے ہیں جن کے لئے وہ شکر گزار ہیں، تو یہ عبادت کا ایک انداز بن جاتا ہے جب وہ کلام سُننے کے جواب میں اپنی زندگیوں میں تبدیلیاں لاتے ہیں  تو یہ بھی عبادت کا ہی ایک انداز ہے  ۔جب وہ اپنے معاشروں میں  لانے والی تبدیلیوں  پر خوشی منا رہے ہوتے ہیں ، تو یہ بھی عبادت بن جاتی ہے ۔ 

حمد وثنا اور عبادت کے گیت عبادت کا لازمی حصہ نہیں ہیں ۔عبادت تو خُدا کے ساتھ ایک تعلق کا نام ہے۔ خُدا کی حمد وثنا کے لئے گیت گانا خُدا کے ساتھ ہمارے تعلق سے حاصل ہونے والی خوشی کا اظہار ہے ۔ یقیناً بالآخر وہ حمد وثنا کے گیت گانے لگیں گے  ۔ تاہم عبادت کی خصوصیت گیت گانے سے بہت پہلے ہی گروپوں میں  قائم کرنا بہت لازمی ہے ۔



خُدا کا کلام 

خُدا کا کلام گروپوں کی میٹنگ کا مرکزی حصہ ہے۔ گروپ میں  شامل لوگ کلام پڑھتے ہیں اُس پر بات چیت کرتے ہیں ،ایک دوسرے کے ساتھ مل کر کلام کے اقتباسات یاد کرتے ہیں اور کلام پر عمل کے لئے حوصلہ افزائی پاتے ہیں ۔ کلام کسی بھی استاد کے مقابلے میں ثانوی حیثیت نہیں رکھتا ۔کلام سب سے بڑا استاد ہے ۔اس پر ہم گروپوں کی خصوصیات اور لازمی عناصر کے اگلے حصے میں  مزید بات کریں گے ۔

دریافت

بھٹکے ہوئے لوگوں کے ساتھ کام کرتے ہوئے ہمیں کوشش کرنی چاہیے کہ ہم کلام کی وضاحت سے گریز کریں۔ اگر ہم ایسا کریں گے تو ایسا دکھائی دے گا کہ ہم استاد  اور اختیار کے حامل ہیں  ۔اور یوں ہمارے بغیر کلام کا پھیلاؤاور تقلید مشکل ہو جائے گی ۔اس کے نتیجے میں مزید گروپ تشکیل نہیں پا سکیں گے اور نہ ہی اُن کے نتیجے میں مزید گروپوں کی افزایش ہو گی

 یہ کافی مشکل کام ہے۔ ہمیں تعلیم دینا بہت اچھا لگتا ہے۔ ہم سوالوں کے جواب جانتے ہیں اور ہم دوسروں کو تعلیم دینا پسند کرتے ہیں۔  لیکن اگر ہم چاہتے ہیں کہ ہم ایسے شاگرد تخلیق کریں جو اپنے سوالوں کے جوابوں کے لئے  کلام اور روح القدس کی جانب دیکھیں، تو پھر ہمیں اس کردار کو چھوڑنا ہو گا ۔ ہمیں بس اُن کی مددکرنی ہے کہ وہ خود یہ دریافت کریں کہ خُدا اپنے کلام کے ذریعے اُن سے کیا کہتا ہے ۔

اس تصور کو مزید مستحکم کرنے کے لئے ہم باہر سے آ کر گروپوں کی ابتدا کرنے والے لوگوں کو ” سہولت کار “کہتے ہیں۔  وہ تعلیم نہیں دیتے بلکہ سہولت کاری کرتے ہیں۔ اُن کا کام ایسے سوالات پوچھنا ہے جن کے نتیجے میں  بھٹکے ہوئے لوگ کلام کا مطالعہ کرنے لگیں ۔کوئی ایک اقتباس پڑھنے کے بعد وہ پوچھتے ہیں  ،”  یہ الفاظ خُدا کے بارے میں  کیا بتاتے ہیں ؟” اور ،” یہ الفاظ انسانوں یا انسانیت کے بارے میں ہمیں کیا بتاتے ہیں ؟”اور ،” اگر آپ کو یقین ہے  کہ یہ خُدا کے الفاظ ہیں تو آپ اپنی زندگیاں تبدیل کرنے کے لئے کیا کریں گے ؟” دریافت کا عمل تقلید اور افزائش کے لئے انتہائی ضروری ہے ۔اگر گروپ خود ہی کلام  میں سے روح القدس پر انحصار کر کے جواب تلاش نہیں  کریں گے ، تو وہ توقعات کے مطابق  ترقی نہیں  کریں گے ۔اور عین ممکن ہے کہ اُن کی افزائش بالکل ہی نہ ہو سکے ۔

گروپ کی اصلاح 

ہمارے گروپوں  کے  زیادہ  ترراہنمااور چرچز کے راہنما کسی ادارے میں بائبل کی تربیت کے حامل نہیں ہیں۔ جب لوگ یہ سُنتے ہیں تو کہتے  ہیں کہ کیا اس میں  بدعت کا امکان نہیں ہے ؟ آپ ان گروپوں کو غلط راہ پر چلنے سے کیسے روک سکتے ہیں ؟ یہ بہت اہم سوالات ہیں ۔اور راہنماؤں کی حیثیت سے ہمیں  یہ سوالات پوچھنے بھی چاہیٔیں ۔

پہلی بات یہ ہے کہ ابتدا میں تمام گروپوں میں بدعت کی جانب چلے جانے کا رجحان ہوتا ہے ۔وہ خُدا کے کلام کے علاوہ کچھ زیادہ نہیں  جانتے۔ وہ خُدا کو دریافت کرنے کے عمل سے گزر رہے ہوتے ہیں جو انہیں فرمانبرداری در فرمانبرداری کی طرف لے جاتا ہے ۔لیکن ابتدا سےہی یہ ممکن نہیں ہوتا کہ وہ سب کچھ جان لیں ۔ جب گروپ مزید کلام پڑھتے چلے جاتے ہیں تو وہ یہ بہتر طور جاننے لگتے ہیں کہ خُدا اُن سے کیا چاہتا ہے۔ سوا س طرح بدعت اور بھٹکنے کے امکانات بھی کم ہو جاتے ہیں ۔یہ شاگرد سازی کا حصہ ہے ۔

اگر ہم یہ دیکھیں کہ وہ کلام سے بہت ہی دور جا بھٹکے ہیں ،تو ہم فوری طور پر ایک نیا اقتباس متعارف کرواتے ہیں  اور اُس اقتباس پر انہیں دریافتی بائبل سٹڈی کے عمل سے گزارتے ہیں۔ ( یاد رہے کہ میں نے سکھانے یا اصلاح کرنے کے الفاظ استعمال نہیں کیے ۔ اصلاح کرنے کے لئے روح القدس خود ہی  کلام کا استعمال کرے گا۔انہیں صرف کلام کے درست حصے کی جانب راہنمائی کی ضرورت ہو گی) اضافی مطالعہ کر لینے کے بعد وہ جان جاتے ہیں کہ انہیں کیا کرنا ہے۔ اہم بات یہ  ہے کہ وہ کرتے بھی ہیں ۔

دوسری بات یہ، کہ بدعت کی ابتدا عموما ًزیادہ متاثر کُن راہنماؤں سے ہوتی ہے جو کچھ   حد تک تربیت یافتہ ہوتے ہیں  اور گروپ کو سکھاتے ہیں  کہ بائبل کیا کہتی ہے، اور انہیں اُس کی تعمیل کے لئے کیا کرنا ہے ۔ایسی صورت حال میں  گروپ راہنما کی تعلیمات قبول کر کے اُن پر عمل شروع کرتا ہے اور خود سے کبھی بھی کلام کے حوالہ جات دیکھنے کی زحمت  نہیں کرتا  ۔

تمام گروپوں  کو یہ سکھاتے ہیں کہ وہ کلام پڑھیں۔ پھر ہم یہ جاننے کی کوشش کرتے ہیں کہ گروپ کا ہر رکن اُس پر کیا ردِعمل دیتا ہے گروپوں کو ایک آسان سا سوال کرنا سکھایا جاتا ہے ۔ ، ” کلام کے اس حوالے میں آپ کیا دیکھتے ہیں؟” جب کو ئی فرمانبرداری  کے تصور پر مبنی کوئی عجیب سی بات کہتا ہے تو گروپ یہ ہی سوال پوچھتا ہے۔ جب کوئی کلام کے اس حوالے میں اپنی جانب سے کوئی تفصیلات شامل کرتا ہے تو گروپ یہ ہی سوال پوچھتا ہے ۔اس سوال کے نتیجے میں گروپ کے تمام ارکان  صرف اُسی حوالے پر اپنی توجہ مرکوز کرتے ہیں اور اپنے تاثرات اور فرمانبرداری کے تصور سے دوسروں کو آگاہ کرتے ہیں ۔

سہولت کار گروہی اصلاح کا نمونہ پیش کرتا ہے ۔سہولت کار کاکا م یہ بھی ہے کہ وہ نظروں  کے سامنے موجود حوالے پر توجہ مرکوز کئے رکھنے کو ممکن بنائے ۔

ایمانداروں کی کہانت 

نئے ایمان داروں اور ایسے لوگوں کو جو ابھی تک ایمان میں نہیں آئے، یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ اُن کے اور مسیح کے درمیان کوئی اور تیسرا شخص موجود نہیں ہے ۔ ہماری کوشش ہونی چاہیے کہ ہم وہ تما م رکاوٹیں دور کریں۔ اسی وجہ سے کلام ہی سب سے اہم سمجھا جانا چاہیے ۔اسی وجہ سے باہر سے آنے والے تعلیم دینے کی بجائے محض سہولت کاری کرتے ہیں۔  یہ ہی وجہ ہے کہ گروپوں کو یہ سکھایا جاتا ہے کہ وہ کلام پر عمل کرتے ہوئے خود اپنی اصلاح کریں ۔

جی ہاں، راہنما ضرور ابھر کر سامنے آئیں گے۔  ایسا ہونا قدرتی سی بات ہے۔ لیکن راہنمائی  محض اُن کے کردار کی بنیاد پر راہنمائی کہلاتی ہے ۔راہنما کسی بھی طرح روحانی طور پر یا طبقاتی نُکتۂ نظر سے  کوئی مختلف یا بلند تر طبقہ نہیں  ہے۔ ہاں یہ ضرور ہے   کہ اُن کا احتساب اعلیٰ سطح پر ہوتا ہے ۔ لیکن یہ احتساب کسی بھی طور انہیں بلند تر درجہ عطا نہیں کرتا ۔

اگر ایمان داروں میں کہانت کا عنصر موجود نہ ہو تو آپ  ایک چرچ تخلیق نہیں کر سکیں گے اس لئے شاگرد سازی کے عمل میں اس مخصوص عنصر اور خصوصیت کو شامل کیا جانا ضروری ہے ۔

گروپوں کی میٹنگز میں ان لازمی عناصر ااور عوامل کو استعمال کرتے ہوئے ہم نے دیکھا ہے کہ بھٹکے ہوئے لوگ  یسوع کے فرمانبردار شاگرد بنتے ہیں جو جا کر نئے شاگرد بناتے ہیں اور نئے گروپوں کی تشکیل کرتے ہیں جو بعدازاں  چرچز بن جاتے ہیں ۔ 

    پال نے امریکہ اور کینیڈا میں شاگرد سازوں کی جماعت اور شاگرد سازی کے اصولوں کے اطلاق کے لئے کانٹیجٔس ڈیسا یٔپل میکنگ (www.contagiousdisciplemaking.com) کی بُنیاد رکھی۔  وہ World Christian Movement میں پرسپیکٹوز کے  باقاعدہ تربیت کار ہیں اور اُنہوں نے اپنے والد، ڈیوڈ واٹسن کے ساتھ مِل کر          Contagious Disciple Making: Leading Others on a Spiritual Journey of Discovery نامی کتاب بھی تحریر کی ہے۔

Categories
حرکات کے بارے میں

نارسا قوموں کے لئے دعا سیکیورٹی کو مدنظر رکھنا، راز چھپانا ہے یا دانش مندی؟

نارسا قوموں کے لئے دعا سیکیورٹی کو مدنظر رکھنا، راز چھپانا ہے یا دانش مندی؟

چک بیکر –

دنیا بھر میں پھیلے ہوئے مسیحی جاننا چاہتے ہیں کہ نارسا قوموں میں خُدا کی بادشاہی کیسے آگے بڑھ رہی ہے۔ اس  میدان میں کام کرنے والے انجیل کے مناد  چاہتے ہیں کہ دوسرے ایماندار اس معاملے میں با خبر رہیں، تا کہ وہ مؤثر دعاؤں ،حوصلہ افزائی اور مزید شراکت کاروں کی تلاش میں مدد دے سکیں ۔اکثر یہ اچھے ہداف پوری طرح حاصل نہیں ہو سکتے کیونکہ سیکیورٹی کی بنا پر ذیادہ تفصیلات بتائی نہیں جا سکتیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ زیادہ تفصیلات  کھول جانے سے منسٹری اور مقامی ایمانداروں کو نقصان پہنچ سکتا ہے ۔   ضروری ہے کہ ہم معلومات انتہائی ضرورت کے تحت ہی فراہم کریں اس کا مقصد راز چھپانا نہیں بلکہ لوگوں کی دانش مندی سے خدمت کرنا ہے۔ نارساؤں میں کام کرنے والی بہت سی منسٹریوں کو اپنی کامیابیوں کی تشہیر کرنے کی وجہ سے نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ کچھ ایسے لوگ بھی ہیں جنہوں نے قابلِ بھروسہ شراکت کاروں کے ساتھ اصل نام اور اُن  کی تفصیلات شئیر کیں اور انہوں نے اُسے آگے پھیلایا ۔یوں یہ تفصیلات  کلام کے دشمنوں تک پہنچیں۔ لہٰذا ہمیں معلومات دوسرے لوگوں کو دینے میں بہت ہی زیادہ احتیاط کرنے کی ضرورت ہےکہ ہم یہ معلومات کسےدے رہے ہیں ۔

اس کے ساتھ ساتھ ہم یہ بھی نہیں چاہتے کہ ہم اپنی معلومات اور تفصیلات بالکل ہی چھپا کر رکھیں کیونکہ اس سے تعاون اور شراکت میں رکاوٹ پیدا ہوتی ہے۔ میدان میں کام کرنے والی منسٹریوں کو قابلِ بھروسہ روابط کی ضرورت ضرور رہتی ہے جن کے ساتھ وہ محفوظ E mail  یا Messages کے ذریعے رابطہ رکھتے ہیں۔ لیکن اس سے کہیں زیادہ اہم یہ ہے کہ جنہیں معلومات دی جا رہی ہوں وہ اسے اپنے تک محدود رکھیں۔ دعا کرنے والوں کو چاہیے کہ وہ دعا کے لئے بائبل میں دئیے گئے نمونوں پر ہی عمل کریں ( جیسا کہ زبور اور افسیوں 1: 15-23 اور 3: 14-21، فلپیوں 1: 9-11 اور کلسیوں 1: 9-12 میں بتایا گیا ہے )۔ یہ دعائیں مختلف صورت حال میں کسی مخصوص تفصیل کا تقاضا نہیں کرتیں ۔

مؤثر دعا کے لئے لازمی نہیں ہے کہ کسی منسٹری یا اُس کے سامنے کی صورت حال کے بارے میں سب کچھ جانا جائے۔ ہم سب کے لئے اچھا ہو گا کہ اگر  ہم خود سے یہ سوال کریں کہ یسوع کی فرمانبرداری اور خطرے کی زد میں موجود اُس کے شاگردوں کی خدمت کرنے کے لئے ہمیں کتنی حد تک معلومات  واقعی آگے پہنچانے کی ضرورت ہے ؟معلومات کو محفوظ رکھنے کا مقصد صرف انتہائی سیکیورٹی نہیں بلکہ غیر ضروری خطرات کو کم کرنا ہے ۔ہم جانتے ہیں کہ خطر ناک علاقوں میں جہاں مسیح کی خوشخبری کی منادی نہیں دی گئی وہاں کچھ ضروری خطرات تو  اپنی مرضی سے مول لینے ہی ہوتے ہیں ۔

جوشوا پراجیکٹ اور ایسے دوسرے ذارئع پر مفید معلومات موجود  ہوتی ہیں۔ ان میں ایسی معلومات بھی شامل ہیں جو تحریکوں کی بنیادی سر گرمیوں کے بارے میں ہیں جن سے دعا کرنے میں مدد ملتی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ہم چاہتے ہیں کہ 5 یا 10 سال آگے بڑھ کر ایک ایسے وقت کے بارے میں سوچیں جب تحریک کسی ایک مخصوص علاقے میں شروع ہو چکی ہو اور ہم حیرت زدہ ہوں کہ ہم نے مخصوص علاقوں کے بارے میں کُھل کر بات کر کے کیا کِیا ہے ۔ ہم تجویز کرتے ہیں کہ خُداوند کے بیٹے اور بیٹیاں دعا کی راہنمائی میں اور E mail بھیجنے کے وقت زیادہ محتاط رویہ اختیار کریں ۔

ذیل میں کچھ نکات دیئے گئے ہیں جن سے آپ کو دعا کے لئے تحریک دینے کی غرض سے وسائل کو ترتیب دینے میں مدد ملے گی: 

  1.  ایمانداروں کی تعداد کا ذکر کرنا خطرناک نہیں ہوتا لیکن کئی مرتبہ اس سے مسائل جنم لے لیتے ہیں۔ اگر کلام کے مخالفین کو کسی ایک جگہ میں موجود ایمانداروں کی تعداد معلوم ہو جائے تو کیا اس سے وہ ایمانداروں کے خلاف کوئی مخصوص ایکشن لے سکتے ہیں ؟خاص طور پر یہ ایسے ماحول میں ہو سکتا ہے جب ایک خطرناک علاقے میں ایک نیا گروپ شروع ہوا ہو۔جنہیں ہم معلومات دے رہے ہیں اُن کے لئے یہ جاننا کتنا ضروری ہے ؟ اور تعداد بتانے کے پیچھے ہمارا مقصد کیا ہے ؟  کیا یہ اس لئے ہے کہ ہم  کسی مخصوص نتظیم کی کار کردگی اچھی دِکھائیں یا مالی مدد حاصل کریں؟ ہمیں خود سے پوچھنا چاہیے  کیا یہ اعداد و شمار خُدا کے کام کو جلال دے رہے ہیں یا میری تنظیم کو اچھا بنا کر دِکھا رہے ہیں۔ اور پھر تیار رہیے کہ آپ  کا مقصد قوموں میں خُدا کے جلال پر مرکوز ہونا چاہیے ۔
  2. اپنے ذہن میں رکھیے کہ آپ کے اعداد وشمار اگر فوکس گروپ میں حکام کے ہاتھ لگ جائیں تو کیا ہو گا ۔اگر یہ اعداد و شمار علاقے کا کوئی پولیس والا پڑھے تو وہ اس کے بارے میں کیا سوچے گا ؟ ہمیشہ مثبت طرزِ عمل رکھیے اور اکثریتی مذہب پر کوئی تنقید نہ کریں۔ الفاظ ایسے رکھیں جس میں خُدا کی رحمت اُس کے فضل اور راہنمائی کی درخواست کی گئی ہو ۔یہ بات ذہن میں رکھتے ہوئے کہ یہ اعدادو شمار ایسے لوگوں کے ہاتھ بھی لگ سکتے ہیں ، ایسی باتیں لکھیں جن کا تعلق اکثریتی مذہب کے لوگوں کی ذاتی صحت اور تندرستی  ، خوشحال خاندانوں ،امن سے زندگی گزارنے سے ہو ۔
  3. ہم چاہتے ہیں کہ ہر مقام پر موجود ایماندار نارسا دوستوں کے ساتھ اور اُن کے آس پاس کے لوگوں کے ساتھ ایسی حوصلہ افزا گفتگو کرتے رہیں جس سے ظاہر ہو کہ آپ اُن دوستوں تک خوشخبری کا پیغام پہنچانا چاہتے ہیں۔ اُنہیں بتائیں کہ ہم ایک حقیقی تبدیلی کا آغاز چاہتے ہیں اور یہ کہ مسیح کے تمام عظیم وعدے اُن کے لئے بھی پورے ہوں ۔
  4. اپنے ذہن میں رکھیں کہ کوئی بھی تحریری مواد انجیل کی خوشخبری کے مخالفین کے ہاتھ لگ سکتا ہے جو نارسا قوموں کے درمیان موجود ہوتے ہیں۔ اپنے آپ سے پوچھیے کہ اس دعائیہ مواد اور گُوگل کو استعمال کر کے کیا کوئی ایسے مقامات پر خادموں اور نئے ایمانداروں کو تلاش کر سکتا ہے ؟ کیا آپ نے کسی مخصوص علاقے میں مخصوص جگہوں، پہاڑوں ،مسجدوں ،مذہبی مقامات، وغیرہ کے نام نامعلوم گروپ کے ناموں کے ساتھ منسلک تو نہیں کر دیئے ؟ کیا ایسا ممکن ہے کہ تفتیش کی صورت میں اُس علاقے میں نئے داخل ہونے والے ا جنبیوں یا غیر ملکیوں کا سراغ لگایا جا سکے ؟ ہم تجویز کرتے ہیں کہ تحریری مواد میں سے ایک لاکھ سے کم آبادی کے  گروپوں  کے بپتسموں وغیرہ کے تمام اعداد وشمار نکال دیئے جائیں۔ اس کی بجائے ہم ایسے کہہ سکتے ہیں کہ اس علاقے میں بہت کم مصدقہ ایماندار ہیں ۔لیکن ہم خُدا سے دعا کر رہے ہیں کہ وہ انہیں اور اُن کی گواہی کو اور زیادہ بڑھائے۔
  5. ہو سکتا ہے کہ آپ قابل ِ بھروسہ لوگوں کو ہی معلومات فراہم کر رہے ہیں ۔لیکن آپ یہ نہیں جان سکتے کہ وہ یہ معلومات غیر محفوظ انداز میں کم قابلِ بھروسہ اور کم محفوظ لوگوں کو کیسے پہنچا سکتے ہیں لہذا انتہائی خطرناک علاقوں میں یہ ہی بہتر ہے کہ ہمیں وہاں ہونے والے واقعات اور اُن کی جگہ کے بارے میں نہ ہی معلوم ہو۔ بہتر ہے کہ یہ بھی نہ کہیں کہ فلاں فلاں جگہ پر کچھ ہو رہا ہے۔ اس کی بجائے یہ کہیں کہ جہاں تک ہمیں معلوم ہے ،کسی مخصوص علاقے میں ایسی قوم موجود ہے جنہیں ہماری خاص ضرورت ہے ۔
  6. ایک سادہ سا اصول یہ ہے: اگر آپ مخصوص معلومات شئیر کر رہے ہوں تو اُس کے ساتھ کسی مخصوص گروہ یا مقام یا مخصوص ناموں کو شامل نہ کریں۔ اگر آپ ایسا کریں تو صرف موجودہ معلومات ہی شئیر کریں۔ مخصوص معلومات فراہم کرنے کا ایک محفوظ طریقہ لوگوں مقامات اور دیگرتفصیلات کے لئے کوڈ نام یا عُرف استعمال کرنے کا ہے ۔آپ منادی یا  چرچز کی تخم کاری کی زبان استعمال کرنے کی بجائے کاروباری زبان استعمال کر سکتے ہیں ( فلاں فلاں مقام پر ہمارے کچھ نئے کلایٔنٹ سامنے آئے ہیں ) لیکن یہاں بھی آپ کو عُرفیت ہی استعمال کرنی چاہیے۔ یہ بات بھی انتہائی اہم ہے کہ یہ عُرفیت یا کوڈ والے نام کسی بھی جگہ پر، کہیں محفوظ کمپیوٹر میں  بھی ،ایک ساتھ نظر نہیں آنے چاۂیں ۔ کیونکہ ہم جانتے ہیں کہ ایسے محفوظ کمپیوٹر بھی  کبھی پوری طرح محفوظ نہیں ہوتے ۔
  7. جب ممکن ہو تو دعا کے لئے کلام کی آیات شامل کریں ۔ایسی آیات کا انتخاب کریں کہ انہیں کوئی بھی پڑھے تو وہ اُس کے دل کو چھو لے ۔اس طرح آپ دعا کرنے والوں کو خُدا کے زیادہ قریب محسوس کروائیں گے اور مقامی لوگوں کو پتہ چلے گا کہ ہم اُن کے لئے خُدا کی کس رحمت اور کس فضل کی دعا کر رہے ہیں ۔
  8. لوگوں کی ضروریات کا ذکر ایسے کریں جیسے آپ اُن ضروریات کے پورا کرنے کا کوئی طریقہ نکالنے کی کوشش کر رہے ہیں  ۔ مقامی مسائل کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کریں تاکہ دعا کرنے والوں ، منادی کے خادموں او رمعاونین کو بڑی تحریکیں شروع کرنے میں مدد ملے !
  9. تحریکیں بڑھنے کے ساتھ ساتھ منسٹری کے لئے عموما اور تحریک کے لئے خصوصا ایذارسانی اور مخالفت بڑھتی چلی جاتی ہے۔ ہم کچھ ایسے کہہ سکتے ہیں کہ اُن نئے ایمانداروں کے لئے دعا کریں جو شاگرد سازی کے گروپوں میں اِکٹھے ہو کر گواہی دیتے ہیں ،وہ خُدا کی محبت اور جلال کا اظہار کریں اور اُن کے دوستوں میں شاگرد سازی کا عمل بڑھتا جائے ۔کچھ شاگردوں نے اس فرمانبرداری کی بہت بھاری قیمت چُکائی ہے اور کچھ کو شہید بھی کیا گیا ہے ۔شہیدوں کے خاندانوں کے لئے دعا کریں اور انہیں مارنے والوں کی نجات کے لئے بھی دعا کریں ۔
  10. کیو نکہ خُدا بہت سی قوموں اور مقامات پر نئے چرچز کے قیام کی تحریکیں شروع کرتا جا رہا ہے تو تمام نارسا گروہوں  کو شاگرد بنانے کے لئے  پورے چرچ کو متحرک کرنے میں ہمارا کردار بھی بدل رہا ہے۔ ان تحریکوں کے ہزاروں نئے ایماندار بھی خُداوند کی کلیسیا ہیں اور وہ چرچ کا حصہ ہوتے ہوئے نارسا قوموں میں سے  ہزاروں نئے ایمانداروں کے  دل جیت رہے ہیں۔ ہمیں خود سے پوچھنا چاہیے کہ ہم اس میں کیسا کردار ادا کر سکتے ہیں ؟ہم کس طرح دور دراز  کے علاقوں میں  مسیحی پس منظر والے خادمین کو بھیج سکتے ہیں۔ ہم میدان میں موجود ٹیموں کی مدد کر کے انہیں کس طرح راستے  پرقائم رہنے اور تحریکوں  کو ترقی دینے میں مدد دے سکتے ہیں؟ یا ہم کس طرح دعا ، تعاون اور تحریکوں کی جاری  سر گرمیوں کو زندہ رکھنے میں مزید کاوشیں کر سکتے ہیں ۔ عالمی چرچ کو یہ سب کچھ کرتے رہنے کی ضرورت ہے خاص طور پر اُن علاقوں میں جہاں تحریکیں موجود نہیں ہیں ایسے علاقوں میں ہمیں تیسر ےسوال پر بہت توجہ دینے کی ضرورت ہے  ۔جو کئی نئے علاقوں میں سب سے ذیادہ فائدہ مند ثابت  ہو سکتا ہے ۔
  11. ہماری ترجیح یہ ہونی چاہیے کہ ہم کس طرح تحریکوں اور اُن کے قائدین کو مدد دیں، نہ کہ انہیں نقصان دیں ۔ تحریکوں کو زیادہ نقصان حکومتوں یا دیگر مذاہب سے نہیں بلکہ  پہلےسے موجود مسیحی فرقوں اور چرچ کے راہنماؤں سے ہوتا ہے۔ ضروری ہے کہ ہم چرچز کو نئی تحریکوں کی افزائش کے بارے میں سمجھائیں اور انہیں بتائیں کہ وہ انہیں نقصان سے بچاؤ کے لئے کیا کر سکتے ہیں ۔اس کے لئے تہذیبی  حساسیت  ، روحانی لگاؤ اور جذبے سے بھرپور دعا کی ضرورت ہے ۔
  12. ہمیں دعا اور تحریری مواد میں بھی تبدیلی لانی ہے ۔ہمیں دیکھنا ہے کہ ہم گھریلو چرچز کی چھُپی ہوئی تحریکوں کے لئے  کیسے ہزاروں لوگوں کو دعا میں متحرک کر سکتے ہیں۔ ہم سمجھتے ہیں کہ 20 سال پہلے ترجیح یہ تھی کہ کسی کو کسی طرح بھی ، کچھ بھی کرنے کے لئے نارسا قوموں میں بھیجا جانا ضروری ہے۔ جب کہ آج ہماری اولین ترجیح یہ ہے کہ نئے ایماندار اپنے دوستوں اور علاقے کے قریبی لوگوں تک دعا اور محبت کے ذریعے رسائی حاصل کریں۔ اس کے ساتھ ساتھ ہماری آج کی ترجیح یہ بھی ہے  کہ موجودہ تحریکیں نئی تحریکوں کو پیدا کریں تاکہ وہ قریبی علاقوں میں موجود  نارسا لوگوں تک پہنچ جائیں ۔
  13. ان تمام باتوں کی روشنی میں ہم دعائیہ راہنما مواد کو پھر سے تحریر کرنے لگے ہیں، جس میں دعا کے طریقے اور دعا میں استعمال کے  لئے کلام کے مخصوص حصوں پر زور دیا گیا ہے۔ اس مواد میں قوموں اور ایمانداروں کی تعداد کے بارے میں مخصوص معلومات موجود نہیں ہیں۔ کچھ لوگ اس ڈھکے چھُپے انداز سے متفق نہیں لیکن ہماری ترجیح یہ ہے کہ حقیقی ایمانداروں کو نجات دلا کر انہیں شاگرد بنایا جائے تاکہ دعا کی روشنی میں خُدا کی بادشاہی کی طرف پیش قدمی ہوتی رہے۔ ہمارا سب سے بڑا مقصد ایک ہی ہے اور اس کے لئے ہمیں احساس علاقوں اور گروپوں میں اپنی ترجیحات بدلنے کی  ضرورت ہے۔ ہو سکتا ہے کہ اس وجہ سے  کچھ علاقوں میں ہمیں فنڈز کی کمی ہو یا فنڈز  زیادہ حساس  پراجیکٹس اور منسٹریوں کی طرف منتقل ہو جائیں۔ لیکن ہم یوحنا اصطباغی کے پیچھے چلتے ہوئے کہتے ہیں :” ضرور ہے کہ وہ بڑھے اور میں گھٹوں ” ہمارا مقصد یہ نہیں کہ ہم اپنی تعریف کے طریقے اور  خود کو مطمئن کرنے کی راہیں  نکالیں ۔لیکن ہمارا مقصد یہ ہے کہ ہم وہ سب کچھ کریں جو حقیقی طور پر خُدا کی بادشاہی کو آگے  بڑھائے ۔
  14. لوگوں کو دعا کا طریقہ سِکھانا اور بھٹکے ہوؤں کو تلاش کرنے کے لئے کلام کے کلیدی حصوں کا استعمال انتہائی بیش قدر ہے۔ اگر ہم کچھ مخصوص تفصیلات سے آگاہ نہ ہوں تو اس کا مطلب یہ نہیں کہ خُدا ہماری دعائیں نہیں سُنے گا اور اُن کے ذریعے کام نہیں کرے گا۔ یقیناً زبور اور پولوس کے جیسی مختصر دعائیں جلال کے تخت کے سامنے بہت بڑے بڑے کام کر سکتی ہیں ۔

ہمیں ذہنی بلوغت حاصل کرنے کی ضرورت ہے تاکہ معلومات کی کمی ہمارے جذبے اور نارسا ؤں کے لئے ہماری دعاؤں کے جوش کو کم نہ کر دے۔ آئیے آگے بڑھتے رہیں اور کھیتی کے   مالک سے دعا کرتے رہیں ۔۔۔لیکن مخصوص معلومات صرف مخصوص لوگوں کے ساتھ ہی شئیر کریں ۔

چک بیکر ایشیا اور کیلیفورنیا میں 35 سال سے زیادہ عرصے سے چرچز قائم کرنے والوں اور مشنری امیدواروں کو تربیت دیتے رہے ہیں۔ انہوں نے دعائیہ راہنمائی کے کتابچوں کی تدوین بھی کی ہے اور نارسا قوموں کے لئے دعاؤں کے بڑے بڑے اجتماعوں کی راہنمائی بھی کی ہے ۔یہ مضمون اُن کی نارسا قوموں کے ایک حساس علاقے میں موجود ٹیم کے ساتھ خط و کتابت سے لیا گیا ہے ،جہاں نئے ایمانداروں کو شہید بھی کیا گیا تھا ۔

یہ اقتباس  ایک مضمون سے لیا گیا ہے جو مشن فرنئٹیر  ز کے جنوری – فروری  2021 کے شمارے کے صفحات نمبر 33سے 36 پر شائع ہوا ،    www.missionfronters.org

Categories
حرکات کے بارے میں

دعا کی اہمیت

دعا کی اہمیت

Excerpted with permission from the highly recommended book

The Kingdom Unleashed: How Jesus’ 1st-Century Kingdom Values Are Transforming Thousands of Cultures and Awakening His Church by Jerry Trousdale & Glenn Sunshine. 

(Kindle Locations 761-838, from Chapter 3 “Praying Small Prayers to an Almighty God”)

Prayer was … central to Jesus’ life and the lives of believers in the early church. In monasteries, life was structured around regular times of prayer. Monasticism has a generally negative reputation among evangelicals, but it is worth noting that every major reform in the church, up to and including the Reformation, started in monasteries. 

We can also say unequivocally that every major revival and every movement of the Spirit was preceded by long, intense prayer. The question, then, is why do Christians in the Global North spend so little time and attention on prayer? The answer is found in a significant shift in culture that took place between the eighteenth and nineteenth centuries. 

 

From Deism to Materialism

As early as the seventeenth century, thinkers in Europe were becoming increasingly rationalistic. Some began moving toward deism, the idea that God created the universe and then stepped back and let it run on its own without ever intervening in it. This was done in a misguided notion of protecting the glory of God; if God did intervene in the world, they reasoned, it would suggest that He did not make it right in the first place. Deists thus had no place for revelation, for miracles, for the Incarnation— or for prayer. 

Deism is a fundamentally unstable worldview. It suggests that God acts only as the Creator of the universe, not as its Sustainer. Therefore, it becomes very easy to drop God out of the system altogether if you can find another explanation for the universe that does not require a Creator. By the early nineteenth century, the scientific establishment began to argue that the universe was eternal, and therefore God was unnecessary. They thus became materialists; that is, they argued that the only things that exist are matter and energy. Given these assumptions, a materialist must conclude that all physical events have purely physical causes, and empirical observation and science are the only things that qualify as true knowledge. 

Christians have never adopted a materialistic viewpoint, for obvious reasons, yet elements of materialism have so shaped the cultural mindset in the Global North that they have also shaped the de facto worldview of the church. When combined with the fact/ value distinction, which we discussed in the last chapter, materialism has had a devastating effect on prayer and on reliance on the Holy Spirit in the life of the church. We acknowledge (at least in theory) that God can act in the physical world— but we tend not to expect Him to. When praying for the sick, for instance, we tend to assume that God will work through the mind and skill of the physician or through medicines or through the normal healing processes of the body, or even by miracles, and so we pray that way. We tend not to pray specific prayers asking for divine intervention in the physical world. Why? Because we have erred in our thinking, unconsciously believing that physical events have only physical causes; and because we have erred in our practice, relegating God primarily to the realm of values— intangible things— rather than giving Him Lordship over the world of facts that can be measured and studied by science. 

 

The Problem of Affluence

The affluence of the Global North has also had a negative impact on prayer because we unconsciously believe that we do not need to rely on prayer for most things in our daily lives. The Global North is so wealthy that most of us do not have to worry about having our basic needs met. The things that we think we need are better described as things that we want, and our problems are mostly “first world problems,” and our “prayers” are more like selfish wishes. Scripture often warns us of the dangers of affluence, including presuming on the future (Luke 12: 16– 21) and forgetting the Lord (Deut. 8: 17– 18) because we assume that we got where we are by our own power or abilities. Jesus’ instructions to pray for our daily bread seem irrelevant when we have a refrigerator full of food. 

This abundance of resources also seduces the church away from relying on prayer. Consider how decisions are typically made in churches: there is a short prayer followed by a long discussion about the issues; a proposal is made and voted on; and a short prayer is said asking God to bless the decision that was made. We would be far better off spending more, if not most, of our time seeking God’s wisdom through prayer rather than relying on our own ideas. Yet we are so used to making our own decisions and relying on our own resources that it seems natural to do that in the church, as well. We pay marketing, media, and management consultants to tell us how to grow the church, how to run stewardship campaigns, how to raise money for a building fund— all examples of relying on our own resources rather than on prayer and the Holy Spirit. 

The simple truth is this: secular methods will never produce spiritual results. There are no consultants in the places where the church is growing the quickest. Those brothers and sisters have to depend on prayer and on obeying the instructions given in Scripture for spreading the Gospel. 

 

Lifestyle and Mindset Issues

Another barrier to prayer is lifestyle: we are simply too busy. Churches are built around programs that keep us doing things, and individually we have so much going on that we do not have time to pray. Or so we think. Martin Luther reportedly said that he was so busy that he could not possibly get everything done without taking at least two hours a day to pray. He knew something that we have forgotten. 

Our busyness is connected to a cultural bias toward acting to make things happen. Our culture loves slogans and aphorisms such as “God helps those who help themselves” or “if it’s going to be, it’s up to me.” We know in our minds that these notions are not scriptural, yet too often our actions don’t line up with that thinking. Our cultural ideal is to be strong, independent, and self-reliant. Yet the Bible tells us that we are strong when we are weak, that we are dependent on God and on one another, that we can do nothing apart from Jesus. Churches hold classes and seminars on personal evangelism, they encourage people to invite their friends to church, but they rarely hold prayer meetings focused on disciple-making and growth of the Kingdom. Yet Jesus tells the disciples not to try to spread the Gospel without waiting first for the Holy Spirit, and every major endeavor in the Gospels and Acts is preceded by deep and intense prayer. In other words, if we want to move the church forward, the critical action that we must take is prayer. 

Yet another barrier is a lack of mental discipline. Our fast-paced culture and the constant availability of the internet, often in our pockets, have so affected our minds that our attention span has shrunken from 12 seconds in 2000 to 8.25 seconds in 2015— and the average attention span of a goldfish is nine seconds! We can, of course, focus longer on things that truly captivate our attention, but unfortunately, it seems prayer is not one of them. It is thus difficult for us to manage anything beyond short prayers— unlike our brothers and sisters in the Global South who often spend all night in prayer. 

Another area where we lack discipline is in the practice of fasting. Fasting is closely associated with prayer, biblically, historically, and currently in the Global South, yet it is rare to find Christians in the Global North who fast. The fact/ value distinction discussed in chapter two is again at work here; we do not understand what fasting is supposed to accomplish since we do not see a close connection between body and spirit. And in a consumerist culture like ours, self-denial seems strange, alarming, and unhealthy. all. If we did believe in prayer, we would do it more. 

Part of the reason for this is, once again, the fact/ value distinction, along with the materialistic mindset. The physical world of fact is separate and distinct from the world of the spirit according to this false worldview, and consequently, it is hard for us to see how praying can produce change in the physical realm. We know intellectually that God can make things happen in the physical world, but we do not expect Him to. 

Psychologically, we also have to deal with the problem of unanswered prayer (or, more precisely, prayer that God answers with a “no” or a “wait”). People fear to pray specific prayers because too often God has not granted us what we asked for. We provide ourselves with cover in these situations by making sure that we pray “if it be Your will,” but we do not believe or trust that God will give us what we ask. Our prayers seem ineffective, which reinforces the fact/ value distinction in our minds and makes us less inclined to pray, preferring instead to act.

The effect of all this is that, even in our discipleship programs, we tend to discount prayer. We offer regular classes on the Bible and train people to lead small group Bible studies, yet most churches have little if any teaching on how to pray. When we do pray, our prayers tend to be so vague that we cannot really say with certainty whether God actually answered them, or whether things would have worked out the same way even without prayer or divine intervention. Often this vagueness is put in spiritual language— bless so-and-so— without any concrete idea of what blessing would look like. 

Prayer is the lifeblood of movements. The church in the Global North does not rely on prayer, and if behavior is any indication, it does not believe in it, either. If we are going to see movements in the Global North [or anywhere else], we will need to see a new, ongoing commitment to serious, intense, persistent prayer for God to open heaven, to raise up disciple makers and church planters, to guide us to His people of peace, and to empower our work.

Categories
حرکات کے بارے میں

دعا کے بارے میں سیکھنے کے قابل کچھ سبق

دعا کے بارے میں سیکھنے کے قابل کچھ سبق

جیری ٹروس ڈیل اور گلین سن شائن  کی بہت پڑھی جانے والی کتاب دی کنگڈم  اَن لیشڈ سے اقتباسات ، مصنفین کی اجازت کے ساتھ

( کِنڈل :   2470 – 2498  ، باب نمبر 9 ” بہت ذیادہ اور مسلسل دعا “)

شاگرد سازی کی تحریکوں میں سنجیدہ دعا اور روزوں کو مرکزی حیثیت حاصل ہے۔ دعا کے بغیر کچھ بھی ممکن نہیں ہوتا۔ اس کے باوجود دنیا کے شمالی حصے کے چرچز دعا کے معاملے  میں بہت کمزور ہیں۔ ہم دنیا کے جنوبی خطوں کے بارے میں ایسے کون سے  تجربات حاصل کر چکے ہیں جن کا ذکر یہاں کیا جا سکتا ہے ؟

  • دعا سیکھنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ آپ ایسے لوگوں کے ساتھ مل کر دعا کریں جو دعا کرنا جانتے ہوں۔ اس سلسلے میں کلاسز اور تربیت مددگار ثابت ہو سکتی ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ کوچنگ اور ماڈلنگ کے ذریعے بھی کامیابی مل سکتی ہے۔ لیکن دعا کے معاملے میں  بہترین استاد تجربہ ہے ۔
  • دعاؤں میں راہنمائی کے لئے زبور اور بائبل کی دعائیں استعمال کریں ۔
  • اس معاملے میں خُداوند کی دعا خاص طور پر اہم ہے۔ روح القدس کی آواز سُنیں جو مخصوص مقاصد کے لئے آپ کو مخصوص انداز میں  دعا کرنے کی   تحریک دے رہا ہوتا ہے ۔
  • چھوٹے پیمانے پر آغاز کریں۔ پوری رات جاگ کر دعا کرنے یا چالیس دن کے روزے رکھنے، یا کوئی ایسی چیز  کرنے کی کوشش نہ کریں جس کا جاری رکھنا مشکل ہو ۔اور روزے رکھنے سے پہلے اپنے ڈاکٹر سے مشورہ ضرور کر لیں ۔شروع میں ہفتے میں ایک مرتبہ صبح سے شام تک کے روزے سے ابتدا کریں۔ جب آپ اس کے عادی ہو جائیں تو وقت کا  دورانیہ یا ہفتے میں روزے  رکھنے کے دنوں کی تعداد بڑھا کر خود کو چیلنج دیں۔ باب نمبر 3 میں افریقہ سے آنے والے دعائیہ شیڈول پر نظر ڈالیں تا کہ آپ کو اس معاملے میں نئے خیالات اور تصورات مل سکیں ۔ روزے رکھتے ہوئے دعا کو اضافی وقت دینا یقینی بنائیں اسی طریقے پر عمل کرتے ہوئے آپ ذیادہ سے ذیادہ دعا کرنے کی عادت اپنا سکتے ہیں ۔
  • ایک فرد کی حیثیت سے اپنے چرچ  یا دعائیہ رفاقت کی جماعت کو دعوت دیں کہ وہ آپ کے ساتھ  دعا اور روزے میں شامل ہوں ۔
  • نئے ایمانداروں کو دعا میں شامل کریں اور اُن سے دعا کروایں ۔
  • ذاتی دعا اور چھوٹے بڑے گروپوں میں جماعتی دعا کے ساتھ ساتھ چلتے پھرتے خُدا سے دعا کر کے بات کریں  اور اُس سے درخواست کریں کہ وہ آپ کے معاشرے میں اپنی بادشاہی لائے اور آپ کو کیسے اور کہاں آغاز کرنے کا طریقہ بھی بتائے ۔ ایسی ذاتی بات چیت جیسی دعا کے دوران، خُدا نے لوگوں کو اُن مخصوص گلیوں یا علاقوں کے نام سے بھی آگاہ کیا جہاں سے انہیں  کام کا آغاز کرنا تھا۔
  • کئی لوگوں کو دعا میں شامل کرنے کا تجربہ کریں ۔

مثال کے طور پر کئی سال پہلے کوریا کے چرچز نے جماعتی دعاؤں کو اتنی اہمیت دینا شروع کی کہ بہت سے مسیحی اپنی  پوری چھٹیاں دعا میں گزارنے لگے۔ اس طرح دعا ئیہ میٹنگز میں شراکت بڑھتی ہے۔ اور ایسی دعائیہ میٹنگز دنیا کے جنوبی حصے میں تیزی سے پھیلنے لگیں ۔دعائیہ راہنما دعا کے لئے ایک مخصوص علاقے کا نام  لیتے اور پھر ہر کوئی اُس مخصوص علاقے کے لئے با آوازِ بلند دعا کرنے لگتا ۔پھر کچھ دیر کے بعد دعا کے لئے ایک نیا موضوع بتایا جاتا اور پورا گروپ اُس معاملے پر دعا کرنے لگ  جاتا ۔

امریکی عام طور پر خاموش دعا کے عادی ہیں ،جس میں عموما ایک وقت میں ایک ہی شخص راہنمائی کر رہا ہوتا ہے۔  امریکیوں کو کورین انداز کی یہ دعا بہت عجیب لگے گی۔ تا ہم دنیا کے جنوبی حصوں میں لوگوں کو دعا کے عمل میں سر گرمی دکھانے کی غرض سے یہ ایک انتہائی عام اور مؤثر طریقہ کار ہے۔ اس طریقے میں دعا میں راہنمائی  کرنے والے مسلسل راہنمائی کے ذریعے مناجات کے موضوع بتاتے چلے جاتے ہیں اور پوری جماعت دعا میں بلند آواز سے حصہ لیتی ہے۔ اور پھر اُس کے بعد وہ کلام کی دعائیں پڑھتے ہیں جس سے جماعت کا ذہن  عبادت ، شکرانے ، توبہ ، دعائیہ گیت گانے اور یہاں تک کہ خاموش دعا کی طرف بھی چلا جاتا ہے۔ یہ طریقہ کار نصف رات اور پوری رات کی دعائیہ میٹنگز میں بھی استعمال ہوتا ہے ۔ روحانی جنگ ایک حقیقت ہے۔ اس جنگ میں دعا اور روزہ دو اہم ترین ہتھیار ہیں۔  انہیں استعمال کرنا سیکھئے ۔

Categories
حرکات کے بارے میں

The Story of Movements and the Spread of the Gospel

The Story of Movements and the Spread of the Gospel

By Steve Addison –

Luke begins the book of Acts by telling us that what Jesus began to do and teach, he now continues to do through his disciples empowered by the Holy Spirit.

Luke’s story of the early church is the story of the dynamic Word of the gospel which grows, spreads, and multiplies, resulting in new disciples and new churches. We get to the end of Acts and yet the story doesn’t end. Paul is under house arrest awaiting trial; meanwhile the unstoppable Word continues to spread throughout the world. Luke’s meaning is clear: the story continues through his readers who have the Word, the Spirit and the mandate to make disciples and plant churches.

Throughout church history we see this pattern continue: the Word going out through ordinary people, disciples and churches multiplying. While the Roman Empire was collapsing, God was calling a young man named Patrick. He lived in Roman Britain but was kidnapped and sold into slavery by Irish raiders. Alone and desperate, he cried out to God who rescued him. He went on to form the Celtic missionary movement that was responsible for evangelizing and planting roughly 700 churches: throughout Ireland first and then much of Europe over the next several centuries.

Two hundred years after the Reformation, Protestants still had no plan or strategy to take the gospel to the ends of the earth. That was until God used a young Austrian nobleman to transform a bickering band of religious refugees. In 1722 Count Nikolaus Zinzendorf opened his estate to persecuted religious dissenters. Through his Christlike leadership and the power of the Holy Spirit, they were transformed into the first Protestant missionary movement, known as the Moravians.

Leonard Dober and David Nitschmann were the first missionaries sent out by the Moravians. They became the founders of the Christian movement among the slaves of the West Indies. For the next fifty years the Moravians worked alone, before any other Christian missionary arrived. By then the Moravians had baptized 13,000 converts and planted churches on the islands of St. Thomas, St. Croix, Jamaica, Antigua, Barbados, and St. Kitts.

Within twenty years Moravian missionaries were in the Arctic among the Inuit, in southern Africa, among the Native Americans of North America, and in Suriname, Ceylon, China, India, and Persia. In the next 150 years, over 2,000 Moravians volunteered to serve overseas. They went to the most remote, challenging, and neglected areas. This was something new in the expansion of Christianity: an entire Christian community—families as well as singles—devoted to world missions.

When the American War of Independence broke out in 1776, most English Methodist ministers returned home. They left behind six hundred members and a young English missionary named Francis Asbury who was a disciple of John Wesley. 

Asbury had left school before he turned twelve to become a blacksmith’s apprentice. His grasp of Wesley’s example, methods and teaching enabled him to adapt them to a new mission field while remaining true to the principles.

Methodism not only survived the Revolutionary War, it swept the land. Methodism under Asbury outstripped the strongest and most established denominations. In 1775 Methodists were only 2.5% of total church membership in America. By 1850 their share had risen to 34%. This was at a time when Methodist requirements for membership were far stricter than the other denominations. 

Methodism was a movement. They believed the gospel was a dynamic force out in the world bringing salvation. They believed that God was powerfully and personally present in the life of every disciple, including African Americans and women, not just the clergy. They also believed it was their duty and priority to reach lost people and to plant churches across the nation.

American Methodism benefited greatly from the pioneering work of John Wesley and the English Methodists. Freed from the constraints of traditional English society, Asbury discovered that the Methodist movement was even more at home in a world of opportunity and freedom. 

As the movement spread through the labors of young traveling preachers, Methodism stayed cohesive through a well-defined system of community. Methodists remained connected with each other through a rhythm of class meetings, love feasts, quarterly meetings and camp meetings. By 1811 there were 400-500 camp meetings held each year, with a total attendance of over one million.

When Asbury died in 1816 there were 200,000 Methodists. By 1850 there were one million Methodists led by 4,000 traveling preachers and 8,000 local preachers. The only organization more extensive was the U.S. government.

Eventually Methodism lost its passion and settled down to enjoy its achievements. In the process it gave birth to the Holiness movement. William Seymour was a holiness preacher with a desperate desire to know the power of God. He was the son of former slaves, a janitor and blind in one eye. God chose this unlikely man to spark a movement that began in 1906 in a disused Methodist building on Azusa Street.

The emotionally charged meetings ran all day and into the night. The meetings had no central coordination, and Seymour rarely preached. He taught the people to cry out to God for sanctification, the fullness of the Holy Spirit, and divine healing.

Immediately, missionaries fanned out from Azusa Street to the world. Within two years they had brought Pentecostalism to parts of Asia, South America, the Middle East, and Africa. They were poor, untrained, and unprepared. Many died on the field. Their sacrifices were rewarded; the Pentecostal/charismatic and related movements became the fastest growing and most globally diverse expression of worldwide Christianity.

At the current rate of growth, there will be one billion Pentecostals by 2025, most of them in Asia, Africa, and Latin America. Pentecostalism is the fastest expanding movement—religious, cultural, or political—ever. 

Jesus founded a missionary movement with a mandate to take the gospel and multiply disciples and churches everywhere. History is replete with examples of movements just like in the book of Acts; I have named only a few. Three essential elements are necessary for Jesus movements: his dynamic Word, the power of the Holy Spirit and disciples who obey what Jesus has commanded.

Steve Addison is the author of Pioneering Movements: Leadership That Multiplies Disciples and Churches www.movements.net.

Adapted from an article originally published in the Jan-Feb 2018 issue of Mission Frontiers, www.missionfrontiers.org, pages 29-31, and published on pages 169-173 of the book 24:14 – A Testimony to All Peoples, available from 24:14 or Amazon.

Categories
حرکات کے بارے میں

1 – پھل پر نظر- مختصر جائزہ 2021

1 – پھل پر نظر- مختصر جائزہ 2021

ٹریور لارسن –

جب میں کالج میں داخل ہوا تو میں خُداوند سے ملا اور پھر کالج کے سالوں کے دوران میں روحانی طور پر بڑھتا گیا ۔خُداوند نے مجھےمختلف   تہذیبوں اور ملکوں سے تعلق رکھنے والے روم میٹ دئیے جنہوں نے دنیا کی زندگی میں میری دلچسپی ختم کر کے رکھ دی ۔بعد میں میں ریاضی کا استاد اور ریسلنگ یعنی کُشتی کا کوچ بن گیا ۔میں نے جانا کہ کوچنگ نے میری خدمت اور منادی پر گہرا اثر ڈالا ۔ایک کوچ ایسے سوالات پوچھتا ہے جیسے آپ دوسروں کی کیسے مدد کر سکتے ہیں کہ وہ جو کچھ کر رہے ہوںاُس میں ذیادہ سے ذیادہ موثر بن جائیں ؟  اب میں جنوب مشرقی ایشیائی معاشروں میں مقامی تحریکوں کو ذیادہ سے ذیادہ موثر بنانے، چرچز کے قیام اور قیادت کی راہنمائی میں معاونت فراہم کر رہا ہوں۔ پڑھانے اور کوچنگ کے بعد میں سیمنری چلا گیا ۔ جہاں میں نے کمبوڈیا ، ویت نام اور لاؤس سے آنے والے بہت سے مہاجرین میں منادی کی یہ وہ لوگ تھے جو ابھی جنگ کے میدانوں سے وہاں پہنچے تھے اور اُن کے پاس لاکھوں  لوگوں کے مارے جانے کی کہانیاں تھیں ۔ان مہاجروں کو امریکہ کے 10 شہروں میں بسایا گیا تھا جن میں وہ شہر بھی شامل تھا جہاں میں سیمنری  میں موجود تھا ۔ 

میں نے 15 اور سیمنری کے ساتھیوں کے ساتھ مل کر ٹیمیں تشکیل دیں جو اُن زبانوں کے گروپوں کے مطابق بنائی گئی تھیں جن پر ہم توجہ دے رہے تھے ۔میں نے یہ جانا کہ مقامی جنوب مشرقی ایشیائیوں کو دوسرے لوگوں کو  شاگرد بنانے کے لئے متحرک کرنا بھی بہت اچھا تھا  ۔میں اس حقیقت کو جان کر حیران رہ گیا کہ ایسے لوگ جن کے بارے میں ہم سمجھتے تھے کہ وہ ہم سے منادی  حاصل کر رہے ہیں اور ہم سے تربیت لے رہے ہیں ، دراصل نئے چرچز کا قیام کرنے لگے تھے نہ صرف اپنے شہر میں بلکہ اپنے رشتہ داروں کے ذریعے کمبوڈیا میں بھی ۔ہم نے اُسی وقت کئی نسلوں کے چرچز کی سوچ اپنائی جو آج تک چل رہی ہے  میں 7 سال تک کیلیفورنیا میں  پاسٹر رہا اور پھر اُس کے بعدمیں  1993 سے 28 سالوں تک ایشیا کی ایک سیمنری میں تعلیم دیتا رہا ہوں۔  میں 15 سیمنریوں میں جو ایک دوسرے سے منسلک ہیں ،ڈاکٹر یٹ اور ماسٹر کی سطح کی تعلیم دیتا ہوں  یہ ہی اُس ملک میں ویزہ حاصل کرنے کے لئے  میری وجہ ہے ۔لیکن ہم 22 سال پہلے نارسا قوموں میں کام کرنے کے لئے متحرک ہوئے اور ہم نے اکثریتی مذہب کے نارسا  گروپوں پر توجہ مرکوز کی ۔ میں نے مقامی چرچ قائم کرنے والوں کی ایک تنظیم قائم کی جن کا کام  ہمارے ملک کے نارسا گروہوں تک پہنچنا تھا یہ میری زندگی کا ایک اہم کام بن گیا جب کہ ساتھ ہی ساتھ میں سیمنری میں تعلیم بھی دیتا رہا ۔

کچھ لوگ اس قسم کے غیر روایتی چرچ کا تصور قبول کرنے میں مشکل کا شکار ہوتے ہیں یاد رہے کہ سیمنری کا پروفیسر ہوتے ہوئے میں  روایتی چرچز اور مختلف فرقوں کے راہنماؤں کے ساتھ بڑی مضبوطی سے منسلک ہوں ۔جو مجھے اپنے چیلنجز کے بارے میں بتاتے رہتے ہیں لیکن جب میں پہلی مرتبہ یہاں آیا تو روایتی چرچ بہت پھل لا رہے تھے  ۔تاہم 20 سال کے عرصے کے دوران روایتی چرچز کا پھل کم ہوتا چلا گیا اور وہ الجھن اور ذہنی دباؤ کا شکار ہوتے چلے گئے ۔ ہمارے تناظر میں صورت حال سن 2000 کے بعد سے ذیادہ بدلی جب بنیاد پرستی بڑھتی چلی گئی اور روایتی چرچ نئی صورت حال میں اپنے طور طریقے بدلنے میں سُست رفتار رہے  ۔ وہ اس مایوس کُن صورتحال کے بارے میں مجھ سے بات کرتے رہے ۔

نارسا قوموں کے گروہوں میں روایتی چرچ پھل لانے میں ذیادہ کامیاب نہیں تھے۔ اِس لیے 1998 میں  ہم نے سیمنری کے چار نوجوان تحصیل شدہ  طُلبا کے ساتھ خاموشی سے ایک تجربہ شروع کیا تاکہ ایک نیا  نمونہ استعمال کرنے کی کوشش کے ذریعے نارسا قوموں میں بہتر نتائج لائے جا سکیں ۔ اس چھوٹی سی منادی کی ٹیم کا لایا ہوا پھل بڑھتا چلا گیا جب کہ مقامی روایتی چرچز کے راہنما مجھے بتاتے رہے کہ اُن کا پھل کم ہوتا چلا جا رہا ہے ۔میں نے دیکھا کہ یہاں 2 مختلف دنیاؤں کا ٹکراؤ ہو رہا ہے : دو مختلف گروہ ،دو مختلف طریقوں سے خُداوند کی خدمت کرتے ہوئے بہت مختلف نتائج پیدا کر رہے ہیں۔ یہ ہی میرا پس منظر ہے میں خدمت کے دونوں نمونوں کی کہانیاں سمجھتا ہوں روایتی چرچز اور ہماری ٹیم کے شروع کئے ہوئے ایسے چرچز جو کسی چار دیواری میں قائم نہیں ہوتے ۔

قصہ مختصر ، میں نے مقامی منادوں کے ساتھ آغاز کیا جو میرے خیال کے مطابق اکثریتی مذہب میں منادی کے لئے بہترین تھے۔ پھر میں نے چار کُل وقتی مقامی منادوں کو تربیت دی جو ہمارے اس تجرباتی نمونے پر کام کر رہے تھے۔ ہم نے فیصلہ کیا کہ ہم صرف ان ہی لوگوں کا شمار رکھیں گے جو اکثریتی مذہب سے تعلق رکھتے ہیں  کیو نکہ ہم اُن لوگوں کو شمار کر کے کامیابی حاصل نہیں کرنا چاہتے تھے جن تک رسائی آسان تھی  ۔ہمیں پہلے پانچ ایمانداروں کے ایک مختصر سے گروہ تک رسائی حاصل کرنے میں 3 سال لگ گئے ۔ پھر ہمیں مزید 22 گروپ بنانے کے لئے 4سال تک جدوجہد کرنا پڑی۔ اس دوران ہم یہ بھی سمجھ گئے کہ کون سے طریقے موثر ہیں اور کون سے طریقے بے کار ہیں  ۔ان میں سے ذیادہ تر گروپ پہلی نسل کے گروپ تھے جن کی قیادت ہمارے چرچز کا قیام کرنے والے خادم کر رہے تھے ۔تب تک منادی کے کام نے مقامی راہنماؤں میں جڑ نہیں پکڑی تھی  مزید 52 گروپ بنانے میں 3 اور سال لگے اور اُس دوران ہم پھل لانے والے طریقہ کار کی دریافت کرتے چلے گئے۔ پھر اگلے 2 سالوں میں  ہماری منادی کے نتیجے میں 110 گروپ تشکیل پا چُکے تھے اُس وقت ہم یہ جان کر حیران ہو گئے کہ ایمانداروں کے گروہ بہت تیزی سے دوگنے ہوتے جا رہے ہیں اور ہم تب بہت حیران ہوئے جب ہم نے دیکھا کہ تیسری نسل کے پہلے گروپ تشکیل پا چُکے ہیں۔ تب ہم سمجھے کہ ہماری منادی مقامی تہذیب اور مقامی راہنماؤں میں جڑ پکڑتی جا رہی ہے  ۔

امریکہ جاتے ہوئے جہاز کے سفر میں میں اُن 110 گروپوں کا شمار کر رہا تھا جنہیں میں نے ایک کانفرنس میں کیس سٹڈی کے طور پر پیش کرنا تھا ۔ جب میں نے اُن اعداد و شمار کا جائزہ لیا جو مجھے ائیر پورٹ پر دئیے گئے تھے ۔تو میں نے جانا کہ ہماری رفتار دُگنی ہو چُکی ہے اور میری آنکھوں سے آنسو بہنے لگے یہ تعداد دُگنی ہونے میں 2006 سے 2008 تک کا عرصہ لگا  اور یہ اُس مقابلے میں کم تھا جو اُس سے پہلے ہوتا رہا ۔میں  سوچنے لگا  ، ” واہ کیا ہی بات ہے اگر ہم گروپوں کی تیسری نسل تک پہنچ چُکے ہیں تو آٹھویں نسل تک پہنچنے کے لئے ہمیں کیا چیز روک سکتی ہے ؟کیا یہ ایک مسلسل بڑھتا جانے والا نظام بن سکتا ہے ؟ اس مسلسل بڑھتی ہوئی تعداد کے راستے میں کیا رکاوٹیں آ سکتی ہیں ؟ 

سال 2000 میں پہلے گروپ کے بعد سے یہ تحریک ہزاروں گروپوں کی صورت اختیار کر چُکی ہے ۔جو تحریکوں کا ایک خاندان بن گئی ہے  بہت سے مختلف نارسا قوموں کے گروہوں میں ایک ہزار یا ذائد ایماندار ہیں جو کہ کم از کم 6 نسلوں میں تقسیم ہیں۔ یہ سب لوگ  اُن بہت سے ممالک میں پھیلے ہوئے ہیں جو ایشیا کے ایک ملک سے نکل کر جانے والے محرکین کی کوششوں کا ثمر ہیں ۔ یہ انتہائی حیرت انگیز بات ہے کیونکہ میرا ابتدائی مقصد ، میری پوری زندگی کا ہدف صرف 200گروپ تھے جو اُس وقت بھی تقریباً ناممکن لگتے تھے۔ میرا خیال ہے کہ خُداوند آپ کو ابتدا کرنے کے لئے ایک تعداد دیتا ہے اور پھر اگلی حدوں تک جانا آپ کی اپنی  سوچ اور تصور پر انحصار کرتا ہے اور ابتدائی چھوٹے سے ہدف کے پیچھے جاتے ہوئے آپ ایک ایسا نظام تشکیل دے سکتے ہیں جو کہ بعد میں وسیع تر ہونے کی صلاحیت رکھتا ہے۔  ایک ایسے نظام کو جو ثمر آور طریقہ کار کے خواص رکھتا ہو اور مسلسل وسعت پانے کا حامل ہو  ، ہم قابلِ حصول نظام کہتے ہیں ۔

Categories
حرکات کے بارے میں

Ordinary People as Witnesses Making Disciples – Part 2

Ordinary People as Witnesses Making Disciples – Part 2

By Shodankeh Johnson, Victor John, and Aila Tasse –

The leader of a large movement in India shares these testimonies of God’s work through ordinary people.

The main leader in one area of our country, Abeer, has consistently reported that the Discovery Study approach is a great tool for growing people’s faith quickly. This is especially true for illiterate people, because each person can easily listen to the story on the speaker and discuss the questions.

Abeer has many generations of disciples that have reproduced from his ministry. One of the 5th generation leaders, Kanah, is 19 years old. He has already started Discovery Groups in three villages. One day, this young man went to G. Village, and was surprised to discover that a family there said they were followers of Jesus! Kanah visited the seven members of the family, including the 47-year-old mother, Rajee. During their conversation, Rajee said, “Yes, we know about Jesus, but we have no idea how we will ever grow in our faith because pastors do not come here.”

Kanah felt great sympathy for this family because his testimony was the same. When he first gave his allegiance to Christ, there had been no pastor to teach him in the ways of his new faith. Pastors would come to his village occasionally, just as one had visited this family, but the pastors would only come to preach for a while, collect an offering, and then leave. They had never committed themselves to regular visits or actual disciple-making of any kind. They had only been taught to preach, so that is what they had done. 

After listening to Rajee, Kanah said to her, “Auntie, I tell you truthfully, my story is just like yours. But one day, after I had been alone in my faith for a long time, I met a team who told me that while it was so good I had given my allegiance to Christ, I hadn’t been told the whole story. Not only are we to follow Jesus and be His disciple, but we’ve also been commanded to go and make disciples of all nations.” 

Rajee said, “We don’t have a Bible and we don’t know how to read. Kanah said, “Yes, I understand.  In my village there are also many people who cannot read, but this team gave me a speaker with Bible stories on it. If you listen to this speaker, you’ll hear God’s word and learn it, and as you discuss the questions on the speaker the truths will go deeper into your heart and life.”

Rajee asked if she could have such a speaker. Two days later, he returned to that village and gave the family a speaker. He explained: “After listening to these stories, it’s very important to discuss the five questions so you can grow in your faith without depending on someone to come from far away and teach you. 

Rajee’s family had waited a whole year for a pastor to return and teach them, but no one ever came. Then this young 19-year-old visited one day and gave them the tools they needed to grow in their faith. In ways like this, the Holy Spirit is working and this movement is growing. Kanah isn’t a pastor; he’s not had any Bible training. He’s not even a member of a big church. He’s just a simple guy from a village. And because he himself has followed this pattern for learning and growing in faith, he is able to share it with others. We praise God that even simple people are functioning as a royal priesthood – serving God and bring His salvation to others. 

What if, instead of relying upon sermons as our mode of instruction, we focused on discussing the Bible: everyone interacting over a passage in a small group and then obeying what they learned? Thousands of small churches in India today are doing exactly that. Here is a recent testimony of how this approach is helping followers of Jesus grow in their faith.

A woman named Diya lives in “K. Village,” which is far from any town. Residents there cannot travel or leave their village very often because it is so remote. This isolation really bothered them. They wondered how they would ever learn more about God. Once, they heard a man talk about Jesus, that He is great and able to do miracles. But in their isolation, they wondered if they would ever hear more about Him.

One day, several disciple makers met in the home of a church leader in that general area. The leader asked: “What do we do about people with whom we’ve been able to share a little bit about Jesus, but they need to know more? How can we follow up with people who live so far away that it’s hard for us to reach them?” This question touched JP, one of the disciple makers. 

He thought, “I have a bicycle. I could go visit with people who live in remote villages.” This is how JP ended up in Diya’s village. He met with her and her whole family and they talked about Jesus. He told them about Matthew 28, that we who are His disciples are commanded to go and make other disciples. He told her how she and her family could also obey Jesus’ commands and that as they applied Jesus’ instructions to their lives, their faith would grow. Diya and her whole family were so happy that someone from “the outside” had come all the way to their village to meet with them to talk about Jesus! 

JP gave them a speaker saying, “Sister, here is a simple way you can worship Jesus together in your home. I, too, am illiterate. I am not wise. I was never trained in an official pastor training program. But I have this speaker with many Bible stories on it.” JP told Diya how she and her family could use the speaker to study God’s Word. He left it with her, and worship to Jesus began in that village for the first time. 

One day, a neighbor family came to Diya’s house to join them in their Bible study. However as soon as they heard the voice start to narrate the Scripture, the 19-year-old daughter in the neighbor’s family began to cry out – truly wailing. Priya had a demon in her, and everyone was very afraid. 

What would happen? None of them were pastors. What were they supposed to do? What would the demon do? No one knew. So they all just kept listening to the story. The narration went on while Priya kept wailing and everyone else present was silently asking God to do a miracle. As the story ended, finally someone was brave enough to say, “Let’s pray!” So they all prayed for Priya and she was freed of the demon! And that’s not all. She also had been ill for a long time, and during that meeting, God not only freed her of the demon but also healed her illness. After witnessing these two miracles, both families declared that they wanted to be followers of Jesus! Priya’s family has now also started hosting a Bible study group in their own home. 

Diya and Priya have since visited 14 different villages for the purpose of spreading Jesus’ story! In those 14 villages, 28 Discovery Bible studies are taking place regularly. These groups are not yet spiritually mature. They are infants in the Lord, but the ladies have faith that many disciples will be made in those places. The main church leader in the area, the one who hosted the meeting that JP attended, has visited these groups himself and talked to them about growing mature in Christ.

This is the power of God’s Word and His Spirit, working where there are no seminaries or paid clergy. Just simple people hearing God’s words and putting them into practice, like the “wise man” Jesus described in Matt 7. Jesus said that anyone who hears His words and obeys is like a wise man who built his house on rock so that nothing moved it, not rain or even floods. How precious and wonderful to be taught this lesson by people who can’t even read! 

Our God is making clear that he can use all kinds of people to make disciples. He delights to show his amazing power through human weakness. As the Apostle Peter told the household of Cornelius: “I now realize how true it is that God does not show favoritism” (Acts 10:34 NIV). God delights to do extraordinary things through ordinary people. As we read the testimonies of these “ordinary” witnesses around the world, what might the Father want to say to us about our role as his witnesses? 

Shodankeh Johnson is the leader of New Harvest Ministries (NHM) in Sierra Leone. Through God’s favor, and a commitment to Disciple Making Movements, NHM has seen hundreds of simple churches planted, over 70 schools started, and many other access ministries initiated in Sierra Leone in the last 15 years. This includes churches among 15 Muslim people groups. They have also sent long-term workers to 14 countries in Africa, including eight countries in the Sahel and Maghreb. Shodankeh has done training, catalyzing prayer and disciple-making movements in Africa, Asia, Europe, and the United States. He has served as the President of the Evangelical Association of Sierra Leone and the African Director of New Generations. He is currently Director of prayer and Pioneer Ministries at New Generations.

Victor John, a native of north India, served as a pastor for 15 years before shifting to a holistic strategy aiming for a movement among Bhojpuri people. Since the early 1990’s he has played a catalytic role from its from inception to the large and growing Bhojpuri movement.

Aila Tasse is the founder and director of Lifeway Mission International (www.lifewaymi.org), a ministry that has worked among the unreached for more than 25 years. Aila trains and coaches DMM in Africa and around the world. He is part of the East Africa CPM Network and New Generations Regional Coordinator for East

(1) Excerpted from “Discovery Bible Studies Advancing God’s Kingdom,” in the May-June 2019 issue of Mission Frontiers; published on pages 174-184 of the book 24:14 – A Testimony to All Peoples, available from 24:14 or Amazon

(2) For security reasons, all personal names within these vignettes have been changed.

The five questions, as recorded in the mp3 audio DBS story sets, are: 

  1. In this whole story that you’ve heard, what one thing do you like the most?
  2. What do you learn from this story about God, about Jesus or about the Holy Spirit?
  3. What do you learn from this story about people, and about yourself?
  4. How should you apply this story to your life in the next few days? Is there a command to obey, an example to follow, or a sin to avoid?
  5. Truth is not to be hoarded. Someone shared truth with you that has benefitted your life. So, with whom will you share this story in the next week?
Categories
حرکات کے بارے میں

عام لوگ گواہ بن کر شاگرد سازی کرتے ہوئے- حصہ اول

عام لوگ گواہ بن کر شاگرد سازی کرتے ہوئے- حصہ اول

شوڈنکےجانسن ،وکٹر جان  اورآیلاٹسے 

شوڈنکےجانسن ،وکٹر جان  اورآیلاٹسے

 CPM کے موضوع پر اپنی ایک زیر ِ طبع کتاب کے مسودے میں شوڈنکے جانسن سیرا   لیؤن میں تحریک کے بارے میں کہتے ہیں:

میں بتانا چاہتا ہوں کہ خُدا کس طرح بہت سے عام لوگوں کو استعمال کر رہا ہے۔ مثال کے طور پر ہمارے پاس چرچز کے کئی نابینا تخم کار ہیں ۔    ہم انہیں شاگرد بناتے ہیں اور انہیں تربیت دیتے ہیں۔ اُن میں سے کچھ کو ہم نابیناؤں کے سکول بھیجتے ہیں تاکہ وہ بریل سیکھ کر بائبل پڑھ سکیں۔ اگرچہ وہ مکمل طور پر نابینا ہیں، لیکن ان خواتین و حضرات نے کئی چرچز کی بنیاد رکھی ہے ،اور بہت سے لوگوں کو شاگرد بنایا ہے۔ خُدا نے انہیں ایسے لوگوں کو شاگرد بنانے کے لئے بھی استعمال کیا ہے جو نابینا نہیں تھے ۔یہ لوگ دریافتی گروپوں کی راہنمائی بھی کرتے ہیں جن کے  کچھ ممبر قوت بصارت  کے حامل ہیں ۔

ہم نے یہ بھی دیکھا کہ خُدا ایسے ناخواندہ لوگوں کو استعمال کر رہا ہے، جو کبھی سکول نہیں گئے ۔اگر آپ انگریزی کا کوئی حرف لکھیں تو انہیں پتہ نہیں ہو گا کہ یہ حرف کیا ہے۔ لیکن کئی سالوں پر پھیلی ہوئی شاگرد سازی کے عمل کے با عث  وہ کلام کے حوالے دے سکتے ہیں ۔                              وہ کلام کی تشریح کر سکتے ہیں ۔ اور وہ پڑھے لکھے لوگوں کو شاگرد بھی بنا سکتے ہیں ، اگرچہ اُن میں سے خود کوئی بھی سکول نہیں گیا ۔

مثال کے طور پر میری والدہ ناخواندہ ہیں، لیکن انہوں نے ایسے لوگوں کی تربیت کی جو اب اعلیٰ تعلیم یافتہ پاسٹر اور چرچ کے تخم کار ہیں۔ وہ بہت سی مسلمان خواتین کو ایمان کی جانب لے کر آئیں ۔ اور اُن کی تعداد اُن عورتوں سے کہیں زیادہ ہے جنہیں میں ایمان کی طرف آتے ہوئے دیکھ چکا ہوں ۔ وہ کبھی سکول نہیں گئیں، لیکن وہ کھڑی ہو کر کلام کے حوالے دے سکتی ہیں۔ وہ کہہ سکتی ہیں ” یوحنا کے چوتھے باب کی ساتویں اور آٹھویں آیت پڑھیں ” اور جب آپ انجیل کھول کر اُس حوالے تک پہنچتے ہیں تو وہ اُس سے پہلے ہی کلام کے اُس حصے کی تشریح کر رہی ہوتی ہیں ۔

 دنیا کے دیگر حصوں میں بھی تحریکوں کے راہنماؤں کی یہ گواہی گونج رہی ہے کہ خُدا  عام لوگوں کو استعمال کر رہا ہے ۔ وکٹر جان اپنی کتاب ” بھو جپوری پیش رفت” میں لکھتے ہیں :

بھو جپوری لوگوں میں  خُدا  اب ہر ذات کے لوگوں میں متحرک ہے۔ یہاں  تک کہ نچلی ذات کے لوگ اونچی ذات کے لوگوں تک رسائی حاصل کر رہے ہیں ۔ مختلف  ذاتوں میں تقسیم شدہ ایمان دار اگر چہ معاشرتی سطح پر ایک دوسرے کے ساتھ گھُلتے  ملتے نہیں لیکن وہ دعائیہ میٹنگز میں اکٹھے ہوتے ہیں اور مل کر دعا کرتے ہیں۔ ہم ایک ایسی نچلی ذات کی خاتون کو جانتے ہیں جو گاؤں میں نچلی ذات کے طبقے کے لوگوں کی دعا میں راہنمائی کرتی ہیں، اور پھر گاؤں کے دوسرے حصے میں  جا کر اونچی ذات کے لوگوں کی بھی راہنمائی کرتی ہیں ۔ اگرچہ وہ نچلی ذات سے تعلق رکھتی ہیں اور ایک خاتون ہیں (جس کا راہنما بننا بھی کسی گاؤں میں غیر معمولی بات ہے ) ، خُدا انہیں اونچی اور نچلی دونوں ذاتوں کے لوگوں میں  بہت مؤثر طور پر استعمال کر رہا ہے ۔

ہندوستان میں ایک اور بڑی تحریک کے راہنما کہتے ہیں : اگر آپ کو یہ بتایا گیا ہے کہ براہمنوں  تک صرف براہمن ہی پہنچ سکتے ہیں تو آپ کو غلط بتایا گیا ہے ۔ اگر آپ کو یہ کہا گیا ہے کہ صرف پڑھے لکھے لوگ ہی پڑھے لکھوں تک پہنچ سکتے ہیں ،تو  یہ بھی غلط ہے ۔خُدا ان حدود تک محدود نہیں ہے ۔

شمالی افریقہ کی تحریکوں سے منسلک آیلاٹسے خُدا کے کاموں کی مندرجہ ذیل کہانیاں بیان کرتے ہیں1

ایک عادی شراب نوش کا  شاگرد سازبننا

جارسو2 ایک ایسے سلسلے کے راہنما ہیں ،جنہوں نے شمالی افریقہ کے کم ترین رسائی والے گروپوں میں دوسال کے عرصے میں 63 چرچز قائم کئے ہیں ۔ چار ماہ پہلے جارسو  اُس گروہ کے لوگوں میں سے کچھ کو بپتسمے دے رہے تھے ۔ جیلو ،جو کہ مسیح کا پیروکار نہیں تھا، ایک فاصلے پر کھڑے ہو کر جارسو کو بپتسمے دیتے ہوئے دیکھ رہا تھا ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

1مشن  فرنٹئیرز کے نومبر-دسمبر 2017 کے شمارے میں سے ڈاکٹر آئیلا ٹسے کے مضمُون  “Disciple Making Movements in East Africa,”

سے ماخُوذ۔

2۔ سیکیورٹی وجوہات کی بِنا پر تمام اصل نام تبدیل کر دئے گئے ہیں۔

اپنے ہاتھ میں شراب کا جام پکڑے ہوئے جیلو نے اس سارے عمل کا مشاہدہ کیا اور بپتسمے کے عمل کا مزاق اُڑانا شروع کر دیا  ۔بپتسمے سے پہلے جارسو نے یسوع کے بپتسمے کی کہانی سُنائی اور اُس کے بارے میں  لوگوں سے بات چیت کی ۔اب کچھ فاصلے پر کھڑےہوئے  جیلو نے ان باتوں پر بہت گہری دلچسپی  لینا شروع کر دی۔ اس کہانی کے اختتام تک وہ جان چکا تھا کہ اُسے یسوع کے پیچھے چلنے کی ضرورت ہے ۔ اُس نے فوری طور پر شراب نوشی ترک کر دی اور اپنے ہاتھ میں تھامی ہوئی بقیہ شراب بھی پھینک دی ۔

وہ اُس شام جلدہی اپنے گھر چلا گیا ۔ اُسکی بیوی اُسے ہوش میں اور خالی ہاتھ دیکھ کر حیران ہوئی کیو نکہ وہ عموما ایک دو بوتلیں گھر اُٹھا لایا کرتا تھا ۔ اُس کی بیوی نے اُسے شراب کی ایک بوتل پیش کرنا چاہی جو وہ اُس سے پہلے ہی گھر لا چکی تھی ۔ جیلو نے یہ کہہ کر اُسے حیران کر دیا کہ اُس نے شراب پینی چھوڑ دی ہے اور یہ کہ وہ بوتل دکان پر واپس لے جائے اور رقم واپس لے آئے ۔

جیلو پڑھنا لکھنا نہیں جانتا تھا اُس نے اپنی بیوی سے کہا کہ وہ گھر میں پڑی بائبل لائے اور اُسے یسوع کی وہ کہانی پڑھ کر سُنائے جو اُس نے بپتسمہ کے موقع پر باہر سُنی تھی ۔اُس کی بیوی بائبل لے آئی  اورجب اُس نے بپتسمہ کی کہانی بیان کر دی تو جیلو نے اُسے بتایا کہ اُس نے جارسو سے کیا سُنا تھا ۔

اُسی شام جیلو اور اُس کی بیوی نے یسوع کے پیچھے چلنے کا فیصلہ کر لیا ۔اگلے روز جیلو نے جارسو سے رابطہ کیا، جس نے اُسےخاندان  میں دریافتی بائبل سٹڈی کا طریقہ سکھا دیا۔ اگلے دن سے ہی جیلو اور اُس کی بیوی روزانہ اپنے بچوں کے ساتھ مل کر ہر شام دریافتی بائبل سٹڈی کرنے لگے ۔

دو ہفتوں کے بعد جیلو ،اُس کی بیوی اور اُن چند ہمسایوں نے جودریافتی  بائبل سٹڈی میں شریک ہو چکے تھے، بپتسمہ لے لیا۔   جیلو اور اُس کی بیوی نے اپنا سفر جاری رکھا اور ایسے آٹھ مزید دریافتی گروپ شروع کرنے کے لئے  سہولت کاری کی۔ جیلو اپنی گواہی کے اختتام پر کہتا ہے ،کہ اگر یہ موجودہ رجحان جاری رہے تو عین ممکن ہے کہ اُس کا پورا ضلع ہی انجیل کے ذریعے بدل جائے ۔



نئے عہد نامے کی راہب

ہمارے ایک چرچ کے تخم کار واریو،دوسال قبل راہب نامی ایک نوجوان خاتون سے ملے۔ راہب بہت خوش شکل تھی اور واریو جب پہلی مرتبہ  اُس سے ملے تو وہ جسم فروشی کا دھندہ کرتی تھی ۔

واریو نے اُسے بائبل سے راہب کی کہانی سُنانا شروع کی ،جس کا ذکر عبرانیوں کے نام خط کے  11  ویں باب میں بھی ہے۔ اُس نے اُسے بتایا کی کس طرح راہب، جسم فروشی چھوڑ کر ایمان کی جانب آئی اور کس طرح سے وہ مسیح کی نسل میں شامل ہوگئی ۔

راہب نے خود کبھی بھی بائبل کا مطالعہ نہیں کیا تھا لیکن وہ جانتی تھی کہ بائبل میں راہب نامی ایک عورت کا ذکر ہے اور وہ عورت جسم فروشی کرتی تھی ۔ یہ بات اُس نے بہت سے لوگوں سے سُنی تھی جو اُس کا نام جانتے تھے ۔

لیکن جب اُس نے پہلی مرتبہ  واریو سے راہب کی پوری کہانی سُنی تو وہ بہت متاثر ہوئی ،اور اُس نے واریو سے پوچھا کہ کیا وہ بائبل کی راہب جیسی بن سکتی ہے۔ واریو نے کہا ہاں ،اور اُسے دعا کی پیش کش کی۔ اس عمل کے دوران  بالآخر وہ شیطان کی قید سے آزاد ہو گئی۔ اس کے بعد اُس کی زندگی ڈرامائی طور پر تبدیل ہو گئی ۔

وہ مسیح کی بہت پکی پیروکار اور شاگرد ساز بن گئی۔ اُس نے ایک مسیحی سے شادی کر لی اور دونوں مل کر پورے دل سے شاگرد سازی کرنے لگے۔ گذشتہ ایک سال میں انہوں نے اپنے علاقے میں 6 نئے چرچز کی بنیاد رکھی ہے ۔

شوڈنکے  جانسن نیو ہارویسٹ منسٹری(NHM)  ، سئیرا لیون کے رہنُما ہیں۔ خُدا کے فضل اور  شاگرد سازی کی تحریکوں  سے وابستگی کے باعث وہ گذشتہ 15 برس میں سیئیرا لیون میں سینکڑوں چرچز اور 70 سکُولوں کے ساتھ ساتھ بہت سی رسائی کی منسٹریاں قائم کر چُکے ہیں۔  اَن میں مُسلم علاقوں کے 15 چرچز بھی شامِل ہیں۔  وہ افریقا کے 14 ممالِک میں  ، جن میں ساحل اور مغرب کے آٹھ ممالک بھی شامل ہیں، طویل مدتی کارکُن بھی بھیج چُکے ہیں۔  شوڈنکے افریقا، ایشیا، یورپ اور امریکہ میں شاگرد سازی کی تحریکوں کی تربیت اور افزائش بھی کر چُکے ہیں۔  وہ سئییرا لیون کی ایونجیلیکل ایسوسی ایشن کے صدر اور نیو جنریشنز کے افریقن ڈائرکٹر بھی رہ چُکے ہیں۔  آج کل وہ   نیو جنریشنز کے  ڈائرکٹر پریئرز اور منسٹری کے پایئنیر ہیں۔

  وکٹر جان شمالی ہندوستان کے باشندے ہیں اور 15 سال تک ایک پاسٹر کی حیثیت سے خدمات انجام دیتے رہے۔ اُس کے بعد انہوں نے بھوج پوری لوگوں کے درمیان تحریک کے آغاز کے لئے ایک جامع اور مربوط حکمت عملی مرتب کرنا شروع کی ۔ 1990 کی دہائی کے ابتدائی سالوں سے وہ اس خیال کو عملی جامع پہنانے کے لئے متحرک ہیں اور بھوج پوری تحریک کو وسعت اور  مضبوطی دینے میں بہت بڑا کردار رکھتے ہیں ۔ 

ڈاکٹر آئیلا ٹیسے  Lifeway Mission International (www.lifewaymi.org)    نامی مشنری تنظیم کے بانی اور ڈائریکٹر ہیں، جو25 سال سے زیادہ عرصے سے نا رسا قوموں میں کام کر رہی ہے۔ آئیلا افریقا اور دُنیا بھر میں شاگرد سازی کی تحریکوں کی تربیت اور کوچِنگ کر رہے ہیں۔ وہ مشرقی افریقا  کے  CPM   نیٹ ورک    کا حِصہ اور  مشرقی افریقا کے لئے   New Generations Regional Coordinator ہیں۔

Categories
حرکات کے بارے میں

بچے اورنوجوان : تحریکوں کی تصویر کے کھوئے ہوئے ٹکڑے

بچے اورنوجوان : تحریکوں کی تصویر کے کھوئے ہوئے ٹکڑے

مصنف: جوزف مائیرز ، سینئر مدیر ایکس ایل –

ایکس ایل  کے اپریل 2021 کے شمارے کے صفحات 14 سے 18 سے تدوین کرکے اجازت کے ساتھ پوسٹ کیا گیا

روایتی چرچز کے منظر نامے میں بچوں اور نوجوانوں کی منسٹری کے بارے میں بے تحاشہ معلومات دستیاب ہیں اور سینکڑوں ویب پیج ، مضامین اور کتابیں چرچز کی تخم کاری کی تحریکوں اور شاگرد سازی کی تحریکوں کے بارےمیں معلومات  فراہم کرتی ہیں ۔لیکن بڑی  تفصیل سے تلاش کرنے کے بعد مجھے صرف ایسے دو حوالہ  جات مل سکے جو بچوں / نواجونوں کی تحریکوں کے بارے میں تفصیل کے ساتھ تمام مسائل کا حل پیش کرتے ہیں۔ پہلا جارج او کونر کا تحریر کردہ مضمون ری پرڈیوس ایبل  پاسٹرٹریننگ: چرچ پلانٹنگ گائیڈ لائنز فورم دی ٹیچنگ  آف جار ج پیٹرسن ہے  ( پیساڈینا، کیلیفورنیا: ولیم کیری لائبریری ، 2006) ۔ان ہدایات میں سے ہدایت نمبر 32 کہتی ہے ” بچوں کو سنجیدگی سے منسٹری کی خدمات انجام دینے دیں “(صفحات 140 – 9) اگرچہ یہ تصورات تحریکو ں کو ذہن میں رکھ کر پیش نہیں کئے گئے لیکن پھر بھی یہ ایسے قارئین  کے لئے ،جو ان کا اطلاق کرنا چاہیں ،مددگار ہو سکتے ہیں اور کافی حد تک معلومات فراہم کر سکتے ہیں ۔

ذیل میں اس کا ایک خلاصہ دیا جا رہا ہے ۔

  • بچوں کو محض وعظ یا کہانی سُنانے کی بجائے انہیں عبادت میں سر گرمی سے شریک ہونے کا موقع دیں  ۔مثال کے طور پر عبادت کے دوران بچوں کو بائبل کی کہانیوں کی تمثیلیں پیش کرنا بہت اچھا لگتا ہے ۔مختلف عمر کے بچوں کے ساتھ ساتھ بڑوں کو بھی شامل کر کے وعظ کو ڈرامائی انداز میں پیش کرنے سے سُننے والوں پر بہت گہرا اثر پڑتا ہے ۔
  • بچوں اور بڑوں کو الگ کر دینے سے معاشرتی ترقی کا عمل روک جاتا ہے  ۔بچے بڑوں اور مختلف عمر کے دیگر بچوں کے ساتھ کام کر کے بہت فائدہ اٹھا سکتے ہیں ۔
  • چرچز اور والدین کو چاہیے کہ وہ بچوں اور نوجوان افراد کی شاگرد سازی کے لئے ایک عملی اور مربوط انداز اپنا کر تربیت دیں ۔
  • مسیحی والدین، خاص طور پر باپوں کو چاہیے کہ وہ بچوں کی تربیت میں بہت آگے جائیں اور چرچز کو ایسی سر گرمیاں ترتیب دینی چاہیں جس میں پورے خاندان شامل ہوں ۔
  • ہر عمر کے بچے بڑوں کی توجہ چاہتے ہیں۔ بڑی عمر کے بچوں کا چھوٹے بچوں کے لئے شاگرد سازی کا کام انجام دینا فائدہ مند ہوتا ہے ،کیونکہ یہ شاگرد بننے اور بنانے والے دونوں کو افزائش میں مدد دیتا ہے ۔
  • بچوں کو خُد اکے کام میں سر گرم انداز میں شریک ہونے میں مدد دیں۔ 
  • اس بات پر دھیان دیں کہ کون سابچہ کیا کردار ادا کر سکتا ہے ۔
  • بچے تخلیق کاری میں بہت دلچسپی لیتے ہیں انہیں موقع دیجیے کہ وہ اپنی تخالیق مثلا  گیت ، نظمیں ، خاکے یا آرٹ ورک وغیرہ دوسرے بچوں کے ساتھ ساتھ ،اگر مناسب ہو تو بڑوں کو بھی دِکھا سکیں ۔
  • بچے زبانی تعلیم کی بجائے عملی تعلیم سے بہتر سیکھتے ہیں ۔مثلا کے طور پر بچوں کو ابتدائی سال سے ہی دعائیہ رفاقت کا حصہ بنانے سے اُن میں چرچ کی محبت پیدا ہوتی ہے جو آگے چل کر چرچ کی سِکھائی ہوئی سچائیوں پریقین کرنے اور اُس کا نمونہ بننے میں مدد دیتی  ہے ۔
  • کلام پولوس کے انداز میں سکھائیں۔ بائبل کی تعلیم اچھے انداز میں دی جائے تو مختلف مذہبی  تصورات کی بنیاد مستحکم طور پر پڑتی ہے ۔بائبل میں سے واقعات پر مبنی اقتباسات   سے آغاز کر کے مثلا تخلیق ، آدم کاجنت سے نکالے جانا ، ابرہام کے ساتھ وعدہ یا شریعت دینے کے جیسے واقعات نہ صرف بچوں بلکہ بڑوں کو بھی بعد میں مختلف مشکل تصورات سمجھنے میں مدد دیتے ہیں ۔
  • دلچسپی اور سمجھ بوجھ بڑھانے کے لئے کلام کے کسی بھی حصے کو مختلف اور  دلچسپ انداز میں  پیش کریں۔  ان میں  پڑ ھ کر سُنانا ، ڈرامہ پیش کرنا ، معروضی سبق سِکھانا اور سوالات پوچھنا جیسی سر گرمیاں شامل ہیں۔ یہ سب کچھ ایک ہی تعلیمی یا تبلیغی  سیشن میں کئے جا سکتے ہیں۔ 

دوسرا معاون وسیلہ سی اینڈرسن کا تحریر کیا ہوا ایک مضمون ہے جس کا عنوان انتہائی مناسب ہے ” کیا بچے اور کم سن بالغ افراد بھی شاگرد سازی کی تحریک کا حصہ بن سکتے ہیں ؟” شاگرد سازی کی تحریکوں میں خاندانی مسائل سے نمٹنے کے اصولوں کے سیکشن   میں وہ والدین کو 6 نکات سمجھاتی ہیں جو بچوں اور کم عمر لڑکے لڑکیوں کو شاگرد اور شاگردساز بننے میں مدد دے سکتی ہیں:

  • بچوں کو تفریح فراہم کرنے کی بجائے اُن کی تربیت کا سوچیں بچوں اور کم عمر نوجوانوں کو یہ سمجھائیں کہ وہ بھی کاہن ہیں ۔
  • بچوں اور کم عمر بڑوں میں تحریکوں کی سوچ ابھاریں ۔اُن کےساتھ ساتھ اُن کے والدین کو بھی شامل کریں۔ ( اس اصول کے ساتھ ساتھ وہ مشورہ دیتی ہیں ،” انہیں یہ جاننے میں مدد دیں کہ خُدا اُن کے ذریعے ایک تحریک کا آغاز کر کے بہت کچھ کر سکتا ہے اور اُن سے کہیے کہ وہ آپ کے ساتھ مل کر اس کے لئے دعا کریں “)
  • بچوں اور کم عمر بالغوں سے اپنی توقعات بلند رکھیں  ۔ انہیں چیلنج دیا جائے تو وہ چیلنج پورا کریں گے ۔
  • بچوں کو ہمیشہ اُن کے اپنے اپنے گروپوں میں ہی تقسیم نہ کریں  ۔
  • والدین کویہ سمجھنے میں مدد دیں کہ یہ اُن کی ذمہ داری ہے کہ اُن کے بچے مسیح کی فرمانبرداری کریں اور شاگرد وں کی تعداد میں افزائش کریں ۔   

اگرچہ یہ اصول ” کیسے” کی بجائے ذیادہ تر ” کیا ” کے مسئلے کو حل کرتے دِکھائی دیتے ہیں، پھر بھی یہ ابتدا کے لئے بہت اچھے اصول ہیں  جو بعدمیں نوجوانوں اور بچوں کو حتیٰ کہ قائدین کو بھی تحریکو ں کے سر  گرم شُرکا بننے میں مدد دے سکتے ہیں ۔

اینڈرسن مضمون کے اختتام پر ہمیں ان الفاظ میں خبردار کرتی ہیں ،جن کا یاد رکھنا نوجوان افراد کی شاگرد سازی کرنے والوں کے لئے بہت ضروری ہے :

بہت کم چرچز نوجوانوں کو شاگرد ساز بننے کی توقع رکھتے ہیں انہیں چیلنج ہی نہیں دیا جاتا کہ وہ اپنی روحانی صلاحیتیں  کسی موثر انداز میں استعمال کر سکیں۔ اگر ہم مغرب میں تحریکیں  ابھرتے اور چلتے دیکھنا چاہتے ہیں تو ہمیں یہ طریقہ کار بدلنے کی ضرورت ہے۔ آپ میں سے جن کا تعلق افریقہ یا ایشیا سے ہے ،انہیں چاہیے کہ وہ بچوں کی شاگرد سازی کے اس غیر موثر مغربی چرچ کے نمونے کو اپنانے سے گریز کریں !

نوجوان ہمارے چرچز اور تحریکوں کا مستقبل ہیں ۔لیکن ہم انہیں اپنے مستقبل میں اتنا اہم نہیں سمجھتے۔ یقینا ایسی بہت سی کہانیاں ہیں جس میں خُد اکے ذریعے  بچے اور نوجوان تحریکوں میں کام کرتے نظر آ رہے ہیں، لیکن اس کے لئے وقت اور محنت کرنے کی ضرورت ہے ۔

اب آخر میں، میں آپ کو ایک چیلنج دینا چاہوں گا ۔اپنی اپنی منسٹریوں پر نظر ڈالیں۔ اُن لوگوں سے بات کریں  جو آپ کی تحریکوں کا حصہ ہیں۔ اپنے اُن ساتھی کارکنوں سے بات کریں جو دیگر تحریکوں میں شریک ہیں   ۔خُدا  بچوں اور نوجوانوں کو شاگرد بنانے تربیت  دینے اور راہنما بنانے کے لئے کیا کر رہا ہے؟ یہ کیسے ہو رہا ہے ؟ کیاہی اچھا ہو کہ اُ سے کے نام کو جلال دینے کے لئے اور مسیح کے بدن کلیسیا کی تعمیر کے لئے ہم ایک دوسرے کو اس سے آگاہ کریں تاکہ دوسرے وہ حاصل کر لیں جو آپ نے سیکھا ہے اور پھر اُس کا اطلاق کر سکیں ؟ 

اگر آپ مجھ سے متفق ہیں تو مجھے [email protected]  پر Email بھیجیے ۔خُداوند نے چاہا تو ہم مستقبل قریب میں ” بچے اور تحاریک ” کا ایک  دوسرا شمارہ بھی شائع کر سکتے ہیں۔

(1) https://www.dmmsfrontiermissions.com/children-teenagers-dmm/

(2) Ibid.

Categories
حرکات کے بارے میں

دعا اور روحانی جنگ

دعا اور روحانی جنگ

جیری ٹروس ڈیل اور لین سن شائن کی انتہائی مقبول کتاب “دی کنگڈم ان لیشڈ: یسوع کی پہلی صدی کی بادشاہی کی اقدار کیسے ہزاروں تہذیبوں کو تبدیل کر رہی ہیں اور اُس کے چرچ کو جگا رہی ہیں “سے مصنفین کی اجازت سے نقل کیا گیا ۔

(کِنڈل : 2399-2469، باب نمبر 9 “بھرپُور دعا”)

شاگرد سازی کی تحریکیں نہ تو کوئی پروگرام ہیں ،نہ حکمت عملی اور نہ ہی کوئی نصاب ۔ایسی تحریک بس صرف خُدا کی تحریک ہوتی ہے۔ اُس کے بغیر کچھ بھی نہیں ہو سکتا ۔یہی وجہ ہے کہ شاگرد سازی کی تحریکوں کے بارے میں تمام بات چیت دعا اور روزے سے شروع ہوتی ہے ۔ہمارا قادرِمطلق خُدا باپ دل و جان سے کوشش کر رہا ہے کہ وہ کھوئے ہوؤں کو اپنے پاس لائے۔ دعا اور روزے کے ذریعے ہم اُس کی راہ پر ہم قدم ہو جاتے ہیں۔ اگر ہم اپنے وسائل اور قوت پر بھروسہ کر کے چلتے رہیں توکوئی نتائج حاصل نہیں کر سکتے۔خُدا کہتا ہے ،”  مجھ سے مانگو اور میں تمہیں قوموں کا وارث بناؤں گا اور دنیا کی انتہاتک سب کچھ تمہاری وراثت بنے گا “۔ وہ یہ بھی کہتا ہے ” تم جس جگہ قدم رکھو گے میں وہ جگہ تمہیں عطا کروں گا ،جیسے میں نے موسیٰ سے وعدہ کیا تھا ۔۔۔” ۔چرچز کی تخم کاری اور شاگردی کی ہر تحریک کے پیچھے بھرپور دعا اور روزے ہوتے ہیں ، گھٹنے ٹیکنا ہوتا ہے اور خُدا کے سامنے رونا اور آنسو بہانا ہوتا ہے۔  اسی کے ذریعے ہمیں کامیابی ملتی ہے اور پھر آپ میدان میں جا کر نتائج خود دیکھتے ہیں ۔

ینوساڈجاو ، اینگیج ! افریقین ویڈیو سیریز

دعا اور روحانی جنگ

دعا اُس روحانی جنگ کا ایک اہم عنصر ہے جس سے ہمارا روزانہ واسطہ پڑتا ہے ۔کبھی کبھی ایسا لگتا ہے کہ ہمارے صبح آنکھیں کھول کر اپنے فون پر نظر ڈالنے سے لے کر رات کو بستر میں  جانے تک ۔ سارا دن سب کچھ کرتے ہوئے ہم گناہ سے آلودہ ہوتے رہتے ہیں اگرچہ یہ روحانی جنگ بہت عام سی بات ہے پھر بھی ہم اکثر اسے نظر انداز کر جاتے ہیں اور اس کے بارے میں سوچتے بھی نہیں اس کے علاوہ شمالی دنیا اکثر شیطانی سر گرمیوں کو نظر انداز کر جاتی ہے لیکن جنوبی دنیا کے چرچز ایسا نہیں کر سکتے ۔

ایک شخص، جِسے ہم گونڈا  کہیں گے، وہ وسطی افریقہ کے ایک ملک کا  چرچ کا تخم کار ہے ۔اُس نے خُدا کو وسطی افریقہ میں بہت سے  معجزات کر کے کامیابیاں لاتے دیکھا ہے،   اور وہ انتہائی مشکل حالات میں  بھی بچتا رہاہے۔ اُس نے ہمیں چار اصول بتائے جن پر اُس کی منسٹری کی تشکیل ہوئی ہے : 

  1. اُس کے لئے ہر چیز دعا کے گرد گھومتی ہے اور خُد اکی آواز سُننے پر انحصار کرتی ہے ۔ 
  2. وہ سلامتی کے فرزندوں کی تلاش کرتا ہے ۔
  3. جب وہ انہیں تلاش کر لیتا ہے تو وہ دریافتی بائبل سٹڈی کا عمل شروع کرتا ہے ۔
  4. اور پھر وہ اپنے شاگردوں ، دیگر راہنماؤں  اور نئے چرچز کی تربیت اور مشاورت کرتا ہے تاکہ وہ اپنے اپنے طور پر افزائش کر سکیں ۔

گونڈا  نے ہانٹے نامی ایک گاؤں کے بارے میں سُن رکھا تھا۔ یہ ایک چھوٹا سا قبیلہ تھا جو قتل وغارت اور انسانی خون اور جادو اور شیطانی عمل کی خاطر انسانی  جسم کے حصوں کا گھناؤنا کاروبار کرتا تھا ۔گاؤں کے لوگ اجنبیوں کی آمد برداشت نہیں کرتے تھے گونڈا کی معلومات کے مطابق وہاں جانے والے بہت سے لوگ واپس نہیں آ سکے تھے ۔

 سو گونڈا  نے اُس گاؤں کے لئے خُداکے آگے دعا کرنا شروع کی۔ وہ جانتا تھا کہ وہاں خُدا کی بادشاہی  کا راستہ بنانے میں  بہت خطرات ہیں، لیکن خُدا نے اُس کی حوصلہ افزائی کی۔ اب صرف دعا کرنا اور فرمانبرداری کے ساتھ ساتھ کچھ تحقیق کرنا باقی رہ گیا تھا ۔

اُسے پتہ چلا کہ اُس قبیلے کا سردار اپنے آباؤاجداد کے  عقائد پر سختی سے عمل کرتا تھا ،جن کی قوت کے زور پر وہ ہاتھیوں  کے غول کے درمیان جا گھستا تھا اور پھر اپنے مدد گاروں کو بُلاتا تھا ۔لوگ اُس کی شخصیت اور اُس کی روحانی یعنی شیطانی قوتوں سے خوف زدہ تھے ۔

گونڈا  نے راہنمائی کے لئے دعا کی اور انتظار کرتا رہا ۔

جلدہی وہ ایک  مسیحی خاتون سے ملا جو ہانٹے کے گاؤں میں رہتی تھی  ۔جیسے ہی وہ اُس سے ملا اُس نے محسوس کیاکہ خُداوند اُس سے یہ عمل شروع کرنے کو کہہ رہا ہے۔ وہ وہاں کلام کی منادی چاہتی تھی لیکن وہ جانتی تھی کہ اُس کے قبیلے میں بہت بڑے چیلنج در پیش ہیں  ۔گونڈا نے ایک منصوبہ بنایا کہ وہ 7 کلومیٹر دور ایک گاؤں سے آغاز کرے ۔ اُس نے جان لیا کہ وہ ایک ایسا اچھا مقام تھا  جس کے ذریعے وہ ہانٹے کے قریب ہو کر وہاں دعا کر سکتا تھا ۔ 

بلآخر اتوار کی ایک شام وہ اُس گاؤں گیا اور اپنے ساتھ دو شاگردوں کو لے گیا ،جنہیں وہ تربیت دے رہا تھا ۔انہیں  توقع تھی کہ رات وہ وہاں گزاریں گے ۔

لیکن راستے میں وہ ایک سابقہ پاسٹر سے ملے اور جب اُسے اُن کے ارادوں کا پتہ چلا تو اُس نے کہا کہ وہ ضرور انہیں سیدھا ہانٹے کے گاؤں تک لے جانا چاہتا تھا ۔ گونڈا سمجھ گیا کہ پاسٹر صاحب سلامتی کے فرزند تھے جو انہیں گاؤں کے افراد سے متعارف کروا سکتے تھے ۔اس لئے وہ منصوبہ بدلنے کے لئے تیار ہو گیا ۔

اندھیرا چھا جانے کے بعد یہ تھکے ہوئے لوگ ہانٹے پہنچے اور وہاں انہیں خطرے کا احساس ہوا۔ انہیں  یہ فائدہ ہوا کہ اُن کے ساتھ ایک ایسا شخص تھا جسے گاؤں کے لوگ پہلے ہی جانتے تھے۔ خاص طور پر جب پاسٹر نے لوگو ں کو بتایا کہ وہ اُس کے دوست تھے اور خالق ِکائنات یعنی خُد اکے بارے میں کہانیاں سُناتے تھے ۔

رات کے 10 بجے لوگوں کا پہلا گروہ اجنبیوں کے پاس اکٹھا ہو کر کہانی سُننے کی درخواست کرنے لگا تاکہ اُس کے بعد وہ فیصلہ کر سکیں کہ وہ وہاں ٹھہر سکتے ہیں یا نہیں۔ مقامی باشندوں نے آگ جلائی اور اُن لوگوں نے انہیں بائبل کی کہانیاں سُنانا شروع کیں۔ انہوں نے تخلیق سے ابتدا کر کے پرانے عہد نامے کی کہانیاں سُنائیں اور پھر انجیل تک آ پہنچے ۔اس دوران اُنہوں نے لوگوں کو کافی وقت دیا تاکہ وہ خود جان سکیں کہ سچ  کیا تھا ۔اس دوران گونڈا دُعائیہ گیت بھی گاتا رہا اور لوگ ناچتے رہے ۔یہ سلسلہ کچھ گھنٹے تک چلا۔ رات کے دو بجے لوگ وہاں سے جانے لگے، لیکن وہ سونے کے لئے نہیں جا رہے تھے  وہ اس لئے جا رہے تھے کہ وہ جا کر اپنے خاندانوں کو جگائیں کہ وہ بھی آ کر یہ حیرت انگیز کہانیاں سُن سکیں ۔

 آخر کار تقریبا 150 لوگ آگ کے گرد بیٹھ کر بائبل کی کہانیاں ترتیب وار سُنتے رہے۔ گونڈا کو بالکل یہ توقع نہیں تھی کہ لوگ ساری رات جاگ کر یہ کہانیاں سُنیں گے ۔لیکن اُس کے سمیت اُس کے شاگرد اس حیرت انگیز  صورتحال پر بہت پُر جوش تھے ۔

بعد میں لوگوں نے انہیں بتایا کہ وہ ساری رات اس لئے جاگتے رہے کہ انہیں موت کا بہت ذیادہ خوف تھا  اور قادرمطلق خُداکے بارے میں یہ کہانیاں اُن کے دلوں میں گونجتی رہیں ۔اُن لوگوں میں  ایسے خاندان بھی تھے جن کے آباؤاجداد نے بہت خوفناک کام کئے تھے اور اُن میں سے کچھ اب بھی ویسے ہی کام کر رہے تھے ۔انہیں محسوس ہوتا تھا کہ وہ لعنت کا شکار ہیں اور وہ خوف زدہ بھی تھے ۔ لیکن کہانیاں سُن کر انہیں ایسا لگا کہ اُمید اور نجات کا پیغام انہیں مل گیا ہے۔ جب کہانیوں کا اختتام  ہونے لگتا تو وہ خاندان اصرار کرتے کہ یہ لوگ کہانی جاری رکھیں۔ رات کے دوران ہاتھیوں کا شکاری، جو کہ قبیلے کا سردار بھی تھا ، بیمار پڑ گیا۔ وہ ایک مقامی کاہن کے پاس گیا لیکن اُسے کوئی مدد نہ مل سکی ۔وہ جانتا تھا کہ گاؤں میں کچھ نیا ہو رہا ہے۔ لیکن وہ اتنا بیمار تھا کہ وہ ٹھیک طرح سے پتہ نہیں  کر سکتا تھا ۔شاگرد سازوں کو بتایا گیا کہ قبیلے کا سردار بیما ر ہے، اوروہ سمجھ گئے کہ  اُن میں سے کچھ کو جاکر اُس کے لئے دعا کرنا چاہیے، تاکہ وہ جان سکے کہ کوئی عظیم قوت اُس کی شیطانیت سے بڑھ کر ہے۔ خُدا کے فضل سے شاگردسازوں کے وسیلے وہ فوری طور پر شفا یاب ہو گیا اور اُس نے فیصلہ کیا کہ اگلی صبح وہ بھی کہانیاں سُننے کے لئے آئے گا ۔

بائبل کی کہانیوں کا سلسلہ صبح کے وقت ختم نہ ہوا اور نہ ہی دوپہر تک – وہ شام کے 3 بجے تک چلتا رہا – بائبل کی کہانیوں کا 17 گھنٹوں کا بیان،  جس میں ابتدا تخلیق سے ہوئی اور جس کی انتہا آسمانی تخت پر یسوع کے بیٹھنے پر ہوئی ۔اس سارے وقت کے دوران شاگرد سازوں کی ٹیم حیران تھی کہ لوگ بائبل کی کہانیوں پر مبنی اس تربیت وار بائبل سٹڈی کے بارے میں کتنے پُر جوش ہوکر وقت اور قوت لگا رہے تھے ۔ 

بات چیت اور دریافتی بائبل سٹڈی کا  سلسلہ 2 ہفتوں تک چلتا رہا ،جس کے بعد قبیلے کے سردار نے یسوع کے پیچھے چلنے والا پہلا شخص بننے کا فیصلہ کیا۔ اُس نے گاؤں کے لوگوں کو بُلایا ، اپنے گناہوں اور شیطانی کاموں پر توبہ کی ، اپنے تمام شیطانی عمل کرنے والے اوزار تباہ کر دئیے، اور پھر بپتسمہ حاصل  کیا۔ اُس کے فورا بعد40 سے زیادہ لوگوں نے بپتسمہ لیا اور گاؤں میں چرچ نے جنم لے لیا  ۔اُس کے بعد مزید 280 لوگوں نے بپتسمہ لیا ۔سردار اُس پورے علاقے کے اگلے گاؤں اور قصبوں میں جا جا کر لوگوں کو بتاتا رہا کہ کس طرح پیار بھرے خالق خُد انے اُسے شفا دی ، اُسے معافی دی اور اُس کو اور اُس کے دل کو تبدیل کر دیا ۔ایک معجزہ ہی تھا کہ جہاں جہاں وہ گیا مزید چرچز قائم ہوتے چلے گئے ۔

گونڈاکا کہناہے کہ جب اُس نئے قصبے میں لوگوں سے پوچھا جاتا کہ وہ مسیح کے پیچھے کیوں چلنے لگے تو وہ بس یہ کہتے ،” ہمیں اُس خالق خُداکے بارے میں پتہ چل گیا ہے جو بہت بااختیار ہے اور طاقت رکھتا ہے!” نئے گاؤں میں نئے مسیحی تعداد میں بڑھتے رہے اور اُن کی دعائیں قبول ہوتی رہیں ۔انہیں یسوع کی محبت کا ثبوت ملتا رہا ۔کچھ ماہ کے بعد ایک بغاوت کی وجہ سےجنگ کے باعث تمام لوگوں کو اپنی حفاظت کی خاطر ایک بڑے شہر کو ہجرت کرنا پڑ گئی۔ اُن میں سے زیادہ طرح مسیحی بن چُکے تھے ۔

کہانی یہاں ختم ہو جاتی ہے لیکن ایک اہم تفصیل باقی ہے۔ اُس قصبے میں جہاں ابتدائی طور پر یہ ٹیم جا کر کام شروع کرنا چاہتی تھی، ایک بڑا مندر تھا، جہاں ایک دیوی کا وجود تھا ۔وہاں کے رہنے والوں کے ایمان کے مطابق جو لوگ اُس مندر کے قریب جاتے تھے وہ مرتے رہتے تھے۔ وہ پاسٹر جو انہیں لے کر ہانٹے گیا تھا اُس نے وہاں 3 دن تک  دعا کی اور روزے رکھے۔ پھر پیر کی ایک صبح8 بجے وہ اُس گاؤں کے وسط میں گیا اور اُس نے خود اپنے ہاتھوں سے اُس مندر کو جلا دیا۔ وہاں کے باشندوں میں سے زیادہ تر کو یہ یقین تھا کہ وہ یقینا  مر جائے گا لیکن وہ زندہ رہا ۔ 

مسلسل دعا کے ذریعے اس واقعہ کے رونما ہونے کے باعث مسیحیوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا گیا اور دیوی کی پوجا کا سلسلہ ختم ہوتا چلا گیا ۔

شیطان کی بادشاہی کی تباہی

یہ کہانی ہمیں بتاتی ہے کہ یسوع کی منادی کسی نئے فلسفے یا  مذہب کے آغاز کی منادی نہیں تھی۔ اس کا مقصد شیطان کی بادشاہی کو تباہ کرنا تھا ۔یسوع نے فریسیوں کے ساتھ اپنی گفتگو ان الفاظ پر ختم کی : 

یا کیونکر کوئی آدمی کِسی زورآور کے گھر میں گُھس کر اُس کا اسباب لُوٹ سکتا ہے جب تک کہ پہلے اُس زورآور کو نہ باندھ لے؟ پِھر وہ اُس کا گھر لُوٹ لے گا۔” (متی 12: 29)

یسوع چاہتا ہے کہ وہ شیطان اور اُس کے چیلوں کے کام تباہ کر دے اور تاریکی سے لوگوں کو نکال کر خُدا کی بادشاہی میں لے آئے۔