Categories
حرکات کے بارے میں

عالمگیر وبا کے دوران خُدا کے کام

عالمگیر وبا کے دوران خُدا کے کام

– جان رالز 

وبا اور غیر یقینی صورت حال کے دوران بھی خُدا اپنا کام کر رہا ہے اُس کا روح دنیا بھر میں لوگوں کی زندگیوں میں متحرک ہے ۔

لوگ اپنے گھروں میں قید ہیں اور اکثر تنہا بھی ہوتے ہیں ۔اور اُن کے ذہنوں میں بہت سے سوالات ہوتے ہیں ۔ بہت سے لوگ جذباتی دباؤ کی وجہ سے سامنے آنے والے چلینجز کا جواب تلاش کر رہے ہیں ۔ ان سوالوں کے جواب تلاش کرنے کا ایک ذریعہ انٹر نیٹ بھی ہے۔گوگل پر سرچ کرنے والے، یو ٹیوب پر ویڈیو دیکھنے والے ، فیس بُک پر مختلف کمنٹس کرنے والے اور ایسی بہت سی سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر آن لائن آنے والے لوگوں کی تعداد بڑھتی ہی چلی جا رہی ہے ۔ فیس بُک استعمال کرنے والوں کی تعداد 2 بلین سے زیادہ ہے اور گوگل کے بعد دوسرا بڑ ا سرچ انجن یو ٹیوب ہے ( یو ٹیوب دراصل گوگل ہی کی ملکیت ہے)  سوشل میڈیا کے بڑھتےہوئے استعمال سے  سوشل میڈیا کے ذریعے خدمت اور شاگرد سازی  کے مواقع بھی بڑھ رہے ہیں ۔

خُدا واقعی تلاش کرنے والوں کے لئے  انجیل کے دروازے کھول رہا ہے ۔

ایک کے ساتھ بہت سے چلے آتے ہیں 

خُدا نےسوشل میڈیا پر منادی کے ایک اشتہار کے ذریعے ازیبدین کے ذریعے انجیل کا  دروازہ کھولا ۔اُس نے اشتہار کا جواب دیا اور وہ بیشارہ نامی ایک مقامی شاگرد ساز کے ساتھ منسلک ہو گیا۔ بیشارہ نے ایک سال قبل ایمان قبول کیا تھا اور وہ ہر سُننے والے کو بڑی گرم جوشی کے ساتھ اپنے ایمان میں شریک کرتا ہے ۔ اس کے نتیجے میں 300 سے 400 کے قریب افراد ایمان کے دائرے میں آ گئے ہیں، جن کا تعلق ایمان کے 30 مختلف گروہوں سے ہے۔ اپنے ایمان کی وجہ سے بیشارہ کو بے حد ایذارسانی کا سامنا ہے ۔ لیکن اُس نے اپنا ہاتھ نہیں کھینچا اور آج کل وہ اذیبدین کی  شاگرد سازی کر رہا ہے تاکہ وہ خدمت کے کام کے لئے تیار ہو جائے ۔ 

آپ اکیلے نہیں ہیں ۔

ایشیا کے ایک علاقے میں کالج کے طلبا کے لئے خُدا نے جیزس فلم کے  ویڈیو کلپس کے ذریعے انجیل کا دروازہ کھولا ،جنہیں سوشل میڈیا پر ایک اشتہاری مہم میں استعمال کیا گیا تھا ۔ ایک طالب علم نے اشتہار کا جواب دیتے ہوئے کہا ” میرا خیال تھا کہ شاید اس وبا کے دوران صرف میں ہی خود کو اتنا تنہا محسوس کر رہا ہوں۔ اور پھر میں نے آپ مسیحیوں کے بارے میں اور ہمارے لئے آپ کی محبت کے بارے میں سُنا ” یہ طالب علم مسیح کی محبت کے بارے میں سُننے والا واحد فرد نہیں تھا ۔ ان اشتہارات کا جواب دے کر کم از کم 3 لوگوں نے مسیح کو قبول کر لیا ہے ۔ 

ایک اور اشتہاری مہم میں پوچھا گیا ،” آپ خُدا سے کس قسم کی دعا کی قبولیت کی درخواست کریں گے ؟”  سینکڑوں طلبا نے جواب میں مختلف دعائیں لکھیں مثلا "خُدایا مہربانی فرما کر مجھے معاف کر دے ” ،” خُدایا مجھے اُن چیزوں سے نجات دلا جو مجھے خوفزدہ کرتی ہیں ”  ” اے خُدا میری زندگی میں کسی ایسے کو لے آ جو مجھے سمجھتا ہو اور مجھ سے محبت کرتا ہو ” ” اے خُدا مجھے بتا کہ میں درست انتخابات کیسے کروں ” 

نارسا لوگ رسائی کے لئے نکل رہے ہیں 

 سوشل میڈیا کے ذریعے نارسا علاقوں میں بہت سے لوگوں کو یہ موقع مل رہا ہے کہ وہ ایسے لوگوں کے ساتھ منسلک ہو سکیں جنہیں انجیل کی خوشخبری سُنائی جاسکتی ہے ۔ مثال کے طور پر فیس بُک کے ایک منسٹری کے پیج نے جنوب مشرقی ایشیا کے ایک نارسا گروہ سے 1800 فالورز جمع کر لئے ۔مقامی مسیحی ایسے لوگوں کے ساتھ رابطے میں ہیں جو انجیل میں دلچسپی رکھتے ہیں اور کم ازکم ایک شخص کو پہلے ہی بپتسمہ دیا جا چکا ہے ۔

 یہ کوئی اتفاق نہیں ۔

خریدے گئے تشہیری مواد اور بنا ادائیگی کے پوسٹ کئے جانے والے  مواد کے ذریعے لوگ یسوع کے بارے میں سُن رہے ہیں ۔ 99.99 فیصد مسلم آبادی والے ایک ملک میں زرائع ابلاغ استعمال کرنے والی ایک ٹیم کو مندرجہ ذیل پیغام پہنچا کہ جس کے ذریعے وہ متلاشیوں کی تلاش کر سکتے ہیں : ” فیس بُک اور انسٹاگرام اور یو ٹیوب پر ہر جگہ مجھے یسوع کے بارے میں چیزیں نظر آتی ہیں ۔میرے خیال کے مطابق یہ کوئی اتفاق کی بات نہیں۔ میں سوچتا ہوں کہ میں یسوع پر ایمان لا سکتا ہوں ۔ میں سوچتا ہوں کہ کیا ہی اچھا ہو اگر میں ایک معجزہ دیکھ سکوں ۔ 

غیر معمولی دور اور مہارتیں 

چرچ کی ابتدا سے ہی لوگ خوشخبری پھیلاتے رہے ہیں ہم پورے دن میں اپنے کام کی جگہ ، سکولوں اور دیگر جگہوں پر لوگوں سے میل جول کے دوران اپنے اندر موجود اُمید پھیلاتے رہتے ہیں ۔ انٹر نیٹ کی قوت اور وسعت استعمال کرنے کے ذریعے اب ہم اس قابل ہو گئے ہیں کہ یہ ٹیکنالوجی ہمیں 24 گھنٹے دور دراز کے علاقوں تک رسائی دیتی ہے۔ حتیٰ کہ جب ہم سو بھی رہے ہوں تو خُدا کا روح کام کر رہا ہوتا ہے اور اُن متلاشیوں کو ہماری جانب لا رہا ہوتا ہے جن کو ہم خُدا کے بیٹے یسوع مسیح کا پیغام دے سکتے ہیں۔

 ڈیجیٹل وسیلوں کے ذریعے رسائی  ہماری ذاتی مشنری زندگی کا متبادل تو نہیں لیکن وہ ہمیں مسیحی کارکنوں تک پہنچنے کا ایک نیا انداز پیش کرتی ہیں۔ یہ متلاشی ایسے لوگوں سے رابطے کر رہے ہیں جو اُن کے ساتھ آف لائن اور آن لائن دونوں طرح سے گفتگوشروع کر سکتے ہیں ،جس کے نتیجے میں ایک شاگرد بن سکتا ہے جو بعدازاں مزید شاگردوں کو تیارکرنے کے قابل ہوتا ہے ۔

یہ کوئی جادوئی گولی نہیں ۔

ڈیجیٹل طریقوں کے ذریعے رسائی کوئی جادو کی گولی نہیں ایسا نہیں ہو سکتا کہ ہم رقم ادا کر کے ایک اشتہار پوسٹ کریں اور اُس کے بعد یہ توقع رکھیں کہ ہزاروں لوگ نجات پائیں گے ۔ ڈیجیٹل  وسیلوں سے بہترین فوائد حاصل کرنے کے لئے بہت زیادہ غور و فکر تربیت اور حکمت عملی مرتب کرنے کی ضرورت ہے ۔لیکن وہ لوگ جو پہلے سے ہی اس شعبے میں کام کر رہے ہیں، وہ اس موثر مہارت کو استعمال کر کے خُدا کو جلال دے سکتے ہیں اور اُس کی بادشاہت کی پیش روی کا  سبب بن سکتے ہیں ۔

اگر آپ سماجی رابطوں   کی سائٹ اور زرائع ابلاغ کے ذریعے متلاشیوں کی تلاش کرنے کے بارے میں  تجسس رکھتے ہیں  تو بہت سی منسٹریاں موجود ہیں جو آپ کی تربیت کرنے کے ساتھ ساتھ ایسے زرائع ابلاغ استعمال کرنے والے مسیحی کارکنوں کے لئےوسائل بھی فراہم کرتی ہیں۔ اُن میں سے چند یہ ہیں :

میڈیا ٹو موومنٹس

میڈیا ٹو موومنٹس شاگرد سازوں کی ٹیموں کو ایسی مہارتیں  فراہم کرتی ہیں جن کے ذریعے روحانی متلاشیوں کی شناخت کر کے، اُنہیں تیزرفتاری کے ساتھ شاگرد ساز بنانے کی تحریکیں شروع کی جا سکتی ہیں ۔یہ تنظیم اس سلسلے میں ابتدائی اقدامات کے لئے کوچنگ اور تربیت فراہم کرتی ہے 

www.Mediatomovments.org

کنگڈم ٹریننگ

یہ گروپ کئی سال سے ڈیجیٹل وسائل کے ذریعے رسائی میں مشغول ہے اور اس کام کی ابتدا کرنے والوں کو بہترین کورسز کے ذریعے معاونت فراہم کرتا ہے ۔ www.kingdom.training 

مشن میڈیا یو 

ایم ایم یو ایک ایسا آن لائن تربیتی پلیٹ فارم ہے جس میں کوچنگ کے ذریعے یسوع کے پیروکاروں کو موثر طور پر شاگرد سازی اور چرچز قائم کرنے کی تربیت دی جاتی ہے ۔یہ تربیت میڈیا کہانیوں اور جدید ٹیکنالوجی کے استعمال پر مبنی ہے ۔ 

www.missionmediau.org/foundations-of-media-strategy

کوانا میڈیا 

یہ تنظیم ،مشنری ٹیموں اور چرچز کو اپنے اپنے تناظر میں متلاشیوں کی مدد دینے کی مہارت رکھتی ہے ۔ یہ تربیت، مواد کی تخلیق، اشتہاری مہمات کےانتظام اور تربیت کے ماہر ہیں ۔ یہ تنظیم ہفتہ واری بنیادوں پر میڈیا میں ایک پوڈ کاسٹ بھی چلاتی ہے:” کرسچن میڈیا مارکیٹنگ  ” www.Kavanahmedia.com

میڈیا ٹو موومنٹس، کنگڈم ٹریننگ اور مشن میڈیا یو کے اشتراک نے ایک ویڈیو ترتیب دی ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ یہ ٹیمیں کس مقصد کے لئے کام کر رہی ہیں۔ اس ویڈیو کا عنوان what is media out reach ہے اور یہ تعاون اور اشتراک کی ایک بہترین مثال پیش کرتی ہے ۔

جن گروپوں کا اوپر ذکر کیا گیا ہے اُن سب کی حکمت عملی ذہن میں ایک مقصد رکھ کر ترتیب دی جاتی ہے :شاگردوں کی افزائش در افزائش ۔تحقیق کی بنیاد پر تیار کئے گئے، تخلیقی اور تہذیبی اقدار سے مناسبت رکھنے والےمواد ، ویڈیو اور سوشل میڈیا کی پوسٹس  کو اگر مارکیٹنگ کی تزویراتی  حکمت عملیوں کے ساتھ استعمال جائے تو اس کے ذریعے لوگ کلام کے متلاشی بن کر اُس کا جواب دینے لگتے ہیں۔ میری دعا ہے کہ ہم بنی اِشکار کی طرح(  1۔ تواریخ 32: 12 )زمانے کو سمجھیں اور تمام موثر وسائل استعمال کرتے ہوئے سب کو مسیح کی محبت قربانی اور معافی کے بارے میں بتائیں ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے